2018 کلاچی خودکش دھماکہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
2018 Kulachi suicide bombing
مقامکلاچی Edit this on Wikidata
تاریخ22 July 2018

22 جولائی 2018 کو، عام انتخابات سے 3 دن پہلے، پاکستان کے ضلع ڈیرہ اسماعیل خان کے کلاچی میں کے پی کے کے سابق صوبائی وزیر زراعت اکرام اللہ خان گنڈا پور کی گاڑی کے قریب ایک خودکش بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ حملے کا اصل ہدف گنڈا پور کو تشویشناک حالت میں ڈیرہ اسماعیل خان لایا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا۔ گنڈا پور کے علاوہ ان کا ڈرائیور اور ان کا ایک گارڈ بھی مارا گیا اور تین اور لوگ زخمی ہوئے۔ تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے گنڈا پور کو اپنے ساتھی عسکریت پسندوں کے قتل کا ذمہ دار قرار دیا۔ اس حملے کی پاکستان بھر میں بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی۔

پس منظر[ترمیم]

قبل از انتخابات تشدد[ترمیم]

عام انتخابات کو بھٹکانے کے لیے جولائی کے آغاز سے ہی انتخابی امیدواروں کو نشانہ بنایا جا رہا تھا۔ اس ماہ کے آغاز میں شمالی وزیرستان کی تحصیل رمزک میں پاکستان موومنٹ آف جسٹس کے امیدوار برائے NA-48 (Tribal Area-IX) ملک اورنگ زیب خان کے دفتر پر ایک بم حملہ ہوا، جس میں 10 افراد زخمی ہوئے۔ بنوں میں حالیہ حملے سے ایک ہفتہ قبل، شہر کے علاقے تختی خیل میں متحدہ مجلس عمل کے PK-89 کے امیدوار شین ملک کی انتخابی مہم کے دوران موٹرسائیکل میں نصب بم کا ریموٹ سے دھماکہ کیا گیا۔ ان حملوں سے دو روز قبل پشاور میں عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما ہارون بلور کی انتخابی ریلی پر خودکش بم حملے میں بلور سمیت 20 افراد ہلاک اور 63 زخمی ہو گئے تھے۔ 12 جولائی کو، خضدار میں بلوچستان عوامی پارٹی (بی اے پی) کے دفتر پر فائرنگ سے قبل بم دھماکے میں 2 افراد زخمی ہوئے۔ حملے سے 9 دن پہلے مستونگ اور بنوں میں دو بم دھماکے ہوئے ۔ بنوں میں سابق وزیراعلیٰ کے پی کے اکرم خان درانی کو نشانہ بنایا گیا۔ درانی محفوظ رہے تاہم 5 افراد جاں بحق اور 37 زخمی ہوئے۔ مستونگ میں، حملے کا سب سے بڑا ہدف، سراج رئیسانی، جو پی بی 35 سے الیکشن لڑنے والے تھے، اس وقت مارے گئے جب ایک خودکش بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا، جس کے نتیجے میں 149 افراد ہلاک اور 186 زخمی ہوئے۔

ہدف[ترمیم]

اکرام اللہ گنڈا پور حملے کا اصل نشانہ تھے۔ پاکستان موومنٹ آف جسٹس کے رکن، گنڈا پور کے پی کے کے صوبائی وزیر زراعت کے طور پر خدمات انجام دے چکے تھے اور وہ PK-99 سے الیکشن لڑنے والے تھے۔ ان کے بھائی اور کے پی کے کے سابق صوبائی وزیر قانون اسرار اللہ خان گنڈا پور اپنی رہائش گاہ پر خودکش دھماکے میں جاں بحق ہوگئے۔

پیشگی انٹیلی جنس[ترمیم]

پشاور میں حملے کے فوراً بعد، نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی (نیکٹا) نے وفاقی اور صوبائی وزارت داخلہ کو 12 دھمکیاں ارسال کیں، جس کے بعد کمیٹی کے چیئرمین رحمن ملک نے حکام کو ہدایت کی کہ نیکٹا کی جانب سے نامزد کردہ سیاستدانوں کی سیکیورٹی میں اضافہ کیا جائے۔ نیکٹا نے اپنی رپورٹ میں چھ ایسے سیاستدانوں کا نام لیا ہے جنہیں نشانہ بنایا جا سکتا ہے۔ اس فہرست میں درانی بھی شامل تھے۔ دیگر پانچ سیاستدانوں میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان ، عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما اسفندیار ولی اور امیر حیدر خان ہوتی ، قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب شیرپاؤ اور حافظ سعید کے بیٹے طلحہ سعید شامل ہیں۔ ادارے نے یہ بھی تجویز کیا کہ مسلم لیگ (ن) اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے ارکان بھی خطرے میں ہیں۔ مستونگ اور بنوں حملوں کے بعد نیکٹا نے نگراں حکومت کو انتخابات سے قبل مزید حملوں سے خبردار کیا۔

بمباری اور نتیجہ[ترمیم]

گنڈا پور انتخابی میٹنگ کے لیے جا رہے تھے کہ ایک خودکش حملہ ، جس کے پاس تقریباً 10 کلو گرام اس کی جیکٹ میں دھماکہ خیز مواد تھا، نے اپنی گاڑی کے قریب خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ بم پھٹتے ہی حملہ آور کے جسم کے اعضاء پورے علاقے میں پھیل گئے۔ جس کے نتیجے میں گنڈا پور، ان کا ڈرائیور اور ان کے دو پولیس گارڈز زخمی ہو گئے۔ تمام زخمیوں کو ڈیرہ اسماعیل خان کے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال (DHQ) لے جایا گیا لیکن بعد میں، گنڈا پور کی طبی حالت کے پیش نظر ، اسے کمبائنڈ ملٹری ہسپتال (CMH) لے جایا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے۔ حملے کے فوراً بعد ایک ویڈیو بنائی گئی جس میں گاڑی میں تین بے ہوش زخمیوں کو دکھایا گیا ہے۔ بعد میں اس کا ڈرائیور بھی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔ چار دیگر افراد زخمی ہوئے۔ دھماکے کی شدت کو بڑھانے کے لیے بم میں بال بیئرنگ اور چھرے بھی شامل تھے۔ حملے کے ایک دن بعد ڈی ایچ کیو میں اس کا ایک گارڈ جاں بحق ہو گیا جس سے مرنے والوں کی تعداد 3 ہو گئی

حملے کے فوراً بعد کے پی کے کے نگراں وزیر اعلیٰ دوست محمد خان نے بم دھماکے کی تحقیقات کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی۔ کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) کے سربراہ کی سربراہی میں کمیٹی میں سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ایس پی)، سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ایس ایس پی)، ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ڈی ایس پی) اور انٹیلی جنس بیورو (آئی بی)، ملٹری انٹیلی جنس (ایم آئی) اور ممبران شامل تھے۔ انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی)۔ گنڈا پور کی موت کے بعد، الیکشن کمیشن آف پاکستان (ECP) نے PK-99 کے انتخابات ملتوی کر دئیے۔

گنڈا پور کی تدفین 23 جولائی 2018 کو کلاچی ڈگری کالج میں ہوئی۔ کئی سرکاری اور عسکری شخصیات کی شرکت کے حوالے سے سخت حفاظتی اقدامات کیے گئے تھے۔

ذمہ داری[ترمیم]

تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی۔ تنظیم کے ترجمان محمد خراسانی نے کہا کہ گنڈا پور نے ان کے ساتھیوں کو قتل کیا تھا اور ان کا قتل اسی کا انتقام تھا۔

رد عمل[ترمیم]

پاکستان کے اس وقت کے نگراں وزیر اعظم ناصر الملک نے حملے کی مذمت کرتے ہوئے دکھ کا اظہار کیا ہے۔ چیف الیکشن کمشنر سردار محمد رضا نے متاثرہ خاندانوں سے دلی ہمدردی کا اظہار کیا۔ انہوں نے کے پی کے کے قائم مقام وزیر اعلیٰ سے رپورٹ بھی طلب کر لی۔ پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے متاثرین کے لیے دعا کی۔ ایک ٹویٹ میں، ڈائریکٹر جنرل انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (ڈی جی آئی ایس پی آر) آصف غفور نے لکھا کہ چیف آف آرمی اسٹاف نے واقعے پر اپنے دکھ کا اظہار کیا۔ پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما فیصل کریم کنڈی نے بھی حملے کی مذمت کی ہے۔ قومی وطن پارٹی کے چیئرمین آفتاب شیرپاؤ نے جاں بحق افراد کے لواحقین سے اظہار تعزیت کیا۔

قابل ذکر متاثرین[ترمیم]

مزید[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]