فاصل درجۂ حرارت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(Critical point (thermodynamics) سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search

اگر کسی گیس کو دبایا اور سرد کیا جائے تو وہ مائع حالت میں تبدیل ہو جاتی ہے۔ وہ زیادہ سے زیادہ درجہ حرارت جس پر ایک گیس مائع حالت میں تبدیل ہو سکتی ہے اسے اس گیس کا کریٹیکل ٹمپریچر critical temperature کہتے ہیں۔ جب تک کسی گیس کو کریٹیکل ٹمپریچر تک یا اس سے بھی زیادہ ٹھنڈا نہ کر دیا جائے اسے مائع بنانا ناممکن ہوتا ہے چاہے دباؤ کتنا ہی زیادہ کیوں نہ ہو۔
اگر کسی مائع کو ایک مناسب بند برتن میں گرم کیا جائے تو جیسے جیسے درجہ حرارت بڑھتا جاتا ہے مائع کی کثافت کم ہوتی چلی جاتی ہے جبکہ مائع کی سطح کے اوپر اس کے بخارات (جو گیس کی شکل میں ہوتے ہیں) ان کی کثافت بڑھتی چلی جاتی ہے یہاں تک کہ ایک ایسا درجہ حرارت آ جاتا ہے جس پر مائع اور اس کے بخارات (گیس) دونوں کی کثافت برابر ہو جاتی ہے۔ کثافت برابر ہو جانے سے مائع اور گیس الگ الگ نہیں رہ سکتے اور باہم مدغم ہو جاتے ہیں۔ اس درجہ حرارت کو کریٹیکل ٹمپریچر اور اس دباؤ کو کریٹیکل پریشر کہتے ہیں۔ نقطہ انجماد اور نقطہ کھولاؤ کی طرح مختلف چیزوں کا کریٹیکل ٹمپریچر اور کریٹیکل پریشر مختلف ہوتا ہے۔

گراف میں ہرے رنگ کی لکیر سے مختلف پریشر پر نقطۂ پگھلاؤ دکھائے گئے ہیں۔ نقطے دار ہری لکیر سے مختلف دباو پر پانی کا نقطہ انجماد دکھایا گیا ہے۔ نیلی لکیر سے مختلف دباو پر نقطہ کھولاو دکھائے گئے ہیں۔ لال لکیر سے مختلف دباو پر نقطہ تصعید (sublimation point) دکھائے گئے ہیں۔

وضاحت[ترمیم]

کوئی بھی مائع اپنے کریٹیکل ٹمپریچر یا اس سے زیادہ درجہ حرارت پر اپنی مائع شکل برقرار نہیں رکھ سکتا۔ اسی طرح اگر کسی گیس کا درجہ حرارت کریٹیکل درجہ حرارت سے زیادہ بڑھ جائے تو دباؤ خواہ کتنا بھی زیادہ کیوں نہ ہو اس گیس کو مائع حالت میں تبدیل نہیں کیا جا سکتا اور اگر گیس پہلے سے ہی مائع حالت میں تھی اور اس کا درجہ حرارت بڑھتے بڑھتے کریٹیکل درجہ حرارت پر پہنچ جائے تو وہ مائع سے گیس میں تبدیل ہو جائے گی چاہے دباؤ کتنا ہی زیادہ کیوں نہ ہو۔

Substance[1][2] Critical temperature (°C) Critical temperature (K) Critical pressure (atm) Critical pressure (MPa)
Argon −122.4 150.8 48.1 4.870
برومین 310.8 584 102 10.340
Chlorine 143.8 417 76.0 7.700
فلورین −128.85 144.3 51.5 5.220
Helium −267.96 5.19 2.24 0.227
Hydrogen −239.95 33.2 12.8 1.297
Krypton −63.8 209.4 54.3 5.500
Neon −228.75 44.4 27.2 2.760
Nitrogen −146.9 126.2 33.5 3.390
آکسیجن −118.6 154.6 49.8 5.050
CO2 31.04 304.1 72.8 7.377
Xenon 16.6 289.7 57.6 5.840
Lithium 2,950 3,223 65.2 6.700
Mercury 1,476.9 1,750 1,587 160.008
Iron 8,227 8,500
Gold 6,977 7,250 5000 5.300
Aluminium 7,577 7,850
ٹنگسٹن 15,227 15,500
Water[3][4] 373.936 647.096 217.7 22.059

بعض گیسوں کا کریٹیکل درجہ حرارت اتنا زیادہ ہوتا ہے کہ انہیں محض دباؤ سے مائع بنایا جا سکتا ہے مثلآ نائٹرس آکسائڈ اور پروپین. اسی طرح اگر زیادہ گرمی نہ پڑ رہی ہو تو کاربن ڈائ آکسائڈ CO2 کو بغیر ٹھنڈا کیے محض دبا کر مائع یا ٹھوس بنایا جا سکتا ہے کیونکہ اس کا کریٹیکل ٹمپریچر31.1 ڈ گری سینٹی گریڈ ہوتا ہے۔

اکثر گیسوں کو مائع بنانے کے لیے انتہائ درجہ تک ٹھنڈا کرنا پڑتا ہے مثلآ ہائڈروجن اور ہیلیم۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. John Emsley (1991)۔ The Elements (اشاعت (Second Edition))۔ اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس۔ ISBN 0-19-855818-X۔ 
  2. Thermodynamics: An Engineering Approach (اشاعت (Fourth Edition))۔ McGraw-Hill۔ 2002۔ صفحات page 824۔ ISBN 0-07-238332-1۔ 
  3. "Release on the IAPWS Industrial Formulation 1997 for the Thermodynamic Properties of Water and Steam" (پی ڈی ایفErlangen, Germany۔ International Association for the Properties of Water and Steam۔ September 1997۔ اخذ کردہ بتاریخ 2006-12-03۔ 
  4. "Critical Temperature and Pressure"۔ Purdue University۔ اخذ کردہ بتاریخ 2006-12-19۔