خام ملکی پیداوار

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(Gross domestic product سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
ممالک کی خام ملکی پیداوار 2011[1]
  سے زیادہ $129,696
  $64,848–129,696
  $32,424–64,848
  $16,212–32,424
  $8,106–16,212
  $4,053–8,106
  $2,027–4,053
  $1,013–2,027
  $507–1,013
  سے کم $507
  دستیاب نہیں

کسی مخصوص مدت (عموماً مالیاتی سال) کے دوران کسی ملک کی حدود میں پیدا ہونیوالی تمام اشیاء اور خدمات کی بازار میں موجود قدر (مارکیٹ ویلیو) خام ملکی پیداوار (GDP - Gross Domestic Product) کہلاتی ہے۔ یہ معاشی ترقی کا سب سے اہم شماریاتی اشاریہ ہے۔ اس میں وہ اشیاء اور خدمات شامل نہیں ہیں جو اس ملک کے شہری غیر ممالک میں پیدا کرتے ہیں۔ اگر ہم اس میں وہ اشیاء اور خدمات شامل کر دیں جو اس ملک کے شہری غیر ممالک میں پیدا کرتے ہیں اور وہ پیداوار تفریق کریں جو غیر ملکی اس ملک میں کر رہے ہیں تو اسے خام قومی پیداوار (GNP - Gross National Product) کہتے ہیں۔

اقتباس[ترمیم]

  • جی ڈی پی سے مراد ہوتا ہے کہ کرنسی میں کتنی گردش ہوئی۔ معاشی ترقی کا اندازہ جی ڈی پی سے نہیں بلکہ رئیل جی ڈی پی سے ہوتا ہے۔[2]

حکومت کے معاشی ماہرین کے ذہن میں تزاد کی یہ وجہ ہے کہ وہ سمجھتے ہیں کی معاشی کارکردگی ناپنے کی ِاکائ جی ڈی پی ہے۔ جو غلط ہے۔ جی ڈی پی تو بس روپیوں کی ایک جملہ رقم کا ایک خاص مرّت کے لحاظ سے اعداد و شمار ہے اس سے زیادہ کچھ نہیں۔ معیشت میں کمی بیشی کو ناپنے کی اکای نہیں۔ : Behind the confusion in government economists’ minds is a false conviction that GDP records the performance of an economy. This is wrong. GDP is just a money-total at a previous point in time, and no more than that. It is not a measure of economic progress or regress. A change in GDP reflects only a change in the quantity of money in the economy, so it is perfectly possible for an economy to contract, or even collapse, while nominal GDP rises.[3]

  • GDP doesn’t count for anything besides pure, adulterated propaganda[4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. آئی ایم ایف کے اعداد و شمار کی بنیاد پر.
  2. More Money Pumping Won't Make Us Richer
  3. “Economy of India”
  4. The Blatant Dishonesty Of The "Boom"