واقعہ شق صدر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی بہت سے محیر العقل واقعات سے بھری پڑی ہے۔ یہ واقعات آپ کی پیدائش سے پہلے، بچپن میں اورنبوت کے بعد بھی رونما ہوئے۔ ایسے تمام حیران کن واقعات جو کسی نبی کو نبوت ملنے سے پہلے درپیش آئیں” ارھاصات“ کہلاتے ہیں۔ایسا ہی ایک واقعہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی میں ملتا ہے کہ اُن کا سینہ فرشتوں نے چاک کر کے اُن کا دل دھویا تھا۔

شق صدر کے لغوی واصطلاحی معنی[ترمیم]

لغت کی مشہور کتاب ’’مصباح المنیر‘‘ میں ہے کہ ’’الشق بالفتح انفراج فی الشئی ‘‘ یعنی؛ کسی شئی کے کھل جانے کو شق کہتے ہیں۔ ’’اقرب الموارد ‘‘کے مطابق: ’’شق الشئی شقا صدعہ‘‘ یعنی؛ کسی شئی کے شق ہونے سے مراد اُس چیز میں شگاف ڈالنا ہے۔ مولوی فیروز الدین اپنی فیروز اللغات میں شَق کے بارے میں لکھتے ہیں: پھٹا ہوا، شگاف پڑا ہوا، شگاف، دراڑ۔ اسی سے شَق القمر بھی ہے یعنی چاند کا پھٹ جانا۔ یعنی شَق الصدر کا اصطلاحی معنی ٰ بھی یہی ہے یعنی؛ سینے کو کھولنا یا شگاف ڈالنا۔ اس سے مراد شَق الصدر کا واقعہ ہے۔ جو روایات کے مطابق پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے بچپن میں رونما ہوا تھا۔

شق صدر کے بارے میں روایات[ترمیم]

شق صدر کا واقعہ بہت سے محدثین نے نقل کیا ہے۔ مثلاً صحیح مسلم نے اس کے بارے میں چند روایات نقل کی ہیں۔ کازرونی نے ’’المنتقی فی مولود المصطفیٰ ‘‘میں اور طبری نے تاریخ طبری میں[1]۔ تاریخ یعقوبی میں بھی اس واقعہ کا ذکر ہے[2]۔
دوسرے سیرت نگاروں نے بھی یہ واقعہ قلم بند کیا ہے ۔چند روایات اس طرح سے ہیں۔
ابن ہشام نے اپنی کتاب میں یہ واقعہ اس طرح لکھا ہے:
’’واستُرضعتُ فِی بَنِی سَعد بن بکر، فَبینا انا مع مملوءَۃِ ثلجاَ، ثم اخذانی فشقَّا بَطَنِی، واستَخرَجَا قَلبِی فَشَقَّاہُ فَسْتَخرَجَا مِنہُ عَلَقَۃ سَودَاءَ فَطَرَحَاھَا، ثُمَّ غَسَلاَ قَلْبِی وَبَطْنِی بِذَلِکَ الثَّلجِ حَتَّی اَنقیَا [3]۔سیرت ابن ہشام کے اُردو ترجمہ میں یہ ’’واقعہ شق صدر‘‘ کے عنوان سے اس طرح لکھی ہے: ’’خدا کی قسم آپ کو اپنے ساتھ لے کر ہمارے آنے کے بعد آپ اپنے بھائی کے ساتھ ہماری بکریوں کے بچوں میں ہمارے گھر کے پیچھے ہی تھے کہ آپ کا بھائی ہانپتا کانپتا ہمارے پاس آیا اور مجھ سے اور اپنے باپ سے کہا میرا جو قریشی بھائی ہے اس کو دو شخصوں نے جو سفید کپڑے پہنے ہوئے ہیں پکڑ لیا اور اس کو لٹا کر اس کا پیٹ چاک کر ڈالا اور اس کو مار رہے ہیں (انہوں نے )کہا (یہ سنتے ہی ) میں اور آپ کے والد آپ کی طرف دوڑے تو ہم نے آپ کو اس حال میں کھڑا پایا کہ آپ کے چہرے کا رنگ سیاہ تھا میں نے آپ کو گلے لگایا اور آپ کے والد نے بھی آپ کو گلے لگایا۔ اور ہم نے آپ(ص) سے کہا: میرے پیارے بیٹے تجھے کیا ہوا۔ فرمایا: میرے پاس دو شخص جو سفید کپڑے پہنے ہوئے تھے آئے اور مجھے لٹا کر میرا پیٹ چاک کیا۔ اور اُنھوں نے اس میں کوئی چیز تلاش کی میں نہیں جانتا کہ وہ کیا تھی (انہوں نے )کہا کہ پھر ہم آپ(ص) کو لے کر اپنے ڈیروں کی طرف لوٹے[4]۔
صحیح مسلم میں یہ روایت اس طرح سے ہے: ’’روی مسلم بن حجاج عن انس بن مالک ان رسول اللہ(ص)اتاہ جبرئیل و ھو یلعب مع الغلمان فاخذہ و صرعہ،فشق عن قلبہ فاستخرج القلب فاستخرج منہ علقۃ فقال: ھذا حظ الشیطان منک، ثم غسلہ فی طست من ذھب بماء زمزم، ثم لامہ ثم اعادہ فی مکانہ۔ ’’جاء الغلمان یسعون الی امہ۔یعنی ظئرہ۔فقالوا:ان محمدا قدقتل فاستقبلوہ وھو منتقع اللون، قال انس: وقد کنت اری اثر ذلک المخیط فی صدرہ‘‘ یعنی؛ مسلم نے انس بن مالک سے روایت کی ہے کہ ایک دن جب رسول خدا (ص) بچوں کے ساتھ کھیل رہے تھے، جبرائیل اُن کے نزدیک آئے اور اُنھیں پکڑ کر زمین پر لٹا دیا اور آپ(ص) کا سینہ چاک کر کے اُس میں سے آپ(ص) کا دل نکال کر اُس میں سے ایک خون کا لوتھڑا نکال کر کہا یہ تم میں شیطان کا حصہ ہے، پھر آپ(ص) کے دل کو سونے کے ایک طشت میں رکھ کر آب زمزم سے دھویا اور پھر اُسے اُسی طرح اپنی جگہ رکھ کر سینہ بند کر دیا۔ بچے اپنی ماں کے پاس دوڑے ہوئے آئے اور ماں سے کہا: محمد قتل ہو گئے ہیں! وہ سب آپ(ص) کی طرف آئے تو آپ کو دیکھا کہ آپ(ص) کا رنگ اُڑاہو اتھا! انس کہتے ہیں: میں نے آنحضرت (ص) کے سینے میں ٹانکے لگے ہوئے دیکھے ہیں[5]۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ شق صدر کا واقعہ پیغمبر اکرم(ص) کی زندگی میں چار پانچ بار رونما ہوا ہے، سب سے پہلے تین سال کی عمر میں، پھر دس سال کی عمر میں، پھر نبوت سے مبعوث ہونے کے وقت اور ایک بار واقعہ معراج کے وقت۔ اس سلسلے میں بعض عرب شعراء نے کچھ اشعار بھی کہے ہیں[6]۔
اسی طرح بعض مفسرین نے تو سورۂ انشراح میں آیہ مجیدہ ’’الم نشرح لک صدرک‘‘ کی تطبیق بھی اسی واقعہ پر کی ہے اور اسے اس کا شان نزول قرار دیا ہے[7]۔

واقعہ شق صدرکے بارے میں علماء کی رائے[ترمیم]

واقعہ شق صدر کے بارے میں علماء کی رائے کچھ یوں ہے۔

اہل سنت علماء کی رائے[ترمیم]

تمام اہل سنت اس واقعے کو تسلیم کرتے ہیں اور اسے رسول اللہ (ص) کے معجزات میں سے شمار کیا ہے۔

علامہ محمود ابوریہ[ترمیم]

اہل سنت کے ایک عالم دین علامہ محمود ابوریہ کے علاوہ کسی نے بھی اس واقعے کے بارے میں کوئی تنقیدی رائے نہیں دی۔ اس مصری عالم دین محمود ابوریہ نے اپنی کتاب ’’اضوء علی السنۃ المحمدیۃ او دفاع عن الحدیث ‘‘ میں اس واقعے کو جعلی قرار دیتے ہوئے اسے اسرائیلیات میں سے شمار کیا ہے[8]۔
’’ قَالَ رَبِّ بِمَا أَغْوَیْتَنِی لَأُزَیِّنَنَّ لَہُمْ فِی الْأَرْضِ وَلَأُغْوِیَنَّہُمْ أَجْمَعِینَ۔ إِلاَّ عِبَادَکَ مِنْہُمْ الْمُخْلَصِینَ ‘‘ [9]۔ ترجمہ: ؛ اس نے کہا: پروردگارا! چونکہ تو نے مجھے گمراہ کیا ہے، میں مادی نعمتوں کو زمین میں ان (انسانوں) کی نگاہ میں مزّین کروں گا اور ان سب کو گمراہ کروں گا سوائے تیرے مخلص بندوں کے۔
اس کے جواب میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:

’’إِنَّ عِبَادِی لَیْسَ لَکَ عَلَیْہِمْ سُلْطَانٌ وَکَفَی بِرَبِّکَ وَکِیلًا ‘‘ [10]

ترجمہ؛ (لیکن جان لے ) تو ہرگز میرے بندوں پر تسلط حاصل نہیں کر سکے گا یہی کافی ہے کہ تیرا پروردگار ان کا محافظ و وکیل ہے۔

یہاں اُستاد محمود ابوریہ، یہ آیات ذکر کرنے کے بعد اس قسم کی روایات پر اعتماد کرنے والوں کے بارے میں لکھتے ہیں:

’’ وکیف یدفعون الکتاب بالسنۃ، أو یعارضون المتواتر الذی یفید الیقین، بأحادیث الآ حادالتی لاتفید اِلاالظن ؟!

‘‘یہ لوگ کس طرح کتاب خدا کو سنت ظنیہ اور متواتر احادیث کہ جو یقینی ہیں کو اخبار احاد کہ جن سے فقط ظن وگمان حاصل ہوتا ہے، کے ذریعے ردّ کر دیتے ہیں “[11]‘۔

اہل تشیع علماء کی رائے[ترمیم]

اہل سنت علماء کے مقابلے میں شیعہ علماء میں سے کسی نے بھی شق صدر کی روایات پر اعتماد نہیں کیا۔ شیعہ علماء نے اس واقعہ کو عصمت رسول(ص) کے خلاف سمجھتے ہوئے اس قسم کی روایات کو اسرئیلیات میں سے شمار کیا ہے۔ البتہ بعض علمائے شیعہ نے اس کو ایک قسم کی تمثیل اور تمثل جانتے اس واقعے کی عقلی توجیہ کرنے کی سعی کی ہے جو اس واقعہ میں موجود جزئیات کے ساتھ ہم آہنگ نہیں ہے[12]۔

علامہ مجلسی[ترمیم]

بعض اہل تشیع محدثین اور علماء نے بھی اس واقعے کو حیرت انگیز واقعات کی بنا ء پر قبول کیا ہے، لیکن اس کی سند سے مطمئن نہیں ہوئے ہیں۔ جیسا کہ علامہ مجلسی (رح) اس واقعے کے بارے میں لکھتے ہیں: ’’پیغمبر اکرم (ص) کے شق صدر کا واقعہ کہ جو آپ (ص) کے بچپن میں رونما ہوا ہے، اہل سنت کی روایات میں بطور مستفیض نقل ہوا ہے لیکن ہماری (شیعہ) روایات میں یہ واقعہ کسی قابل اعتماد سند کے ساتھ نقل نہیں ہوا، لیکن اس کی نفی بھی نقل نہیں ہوئی اور عقل بھی اس کے وقوع کی نفی نہیں کرتی لہٰذاہم اس کی نفی اور اثبات میں توقف کرتے ہیں۔ لیکن ہمارے اکثر سابقہ علماء نے اس واقعے پر اعتراضات کئے ہیں ‘‘[13]۔

شق صدر کے بارے میں جدید نظریہ[ترمیم]

شق صدر کے بارے میں جدید نظریہ یہ ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا سینہ علم کے لیے کشادہ کیا گیا تھا، کھول دیا گیا تھا، جسے سورۃ نشرح میں بھی بیان کیا گیا ہے۔

واقعہ شق صدر پر اعتراضات[ترمیم]

شق صدر کے واقعے اور روایات پر بہت سے اعتراضات بھی کیے جاتے ہیں ۔ ان اعتراضات سے یہ نتیجہ نکالا گیا ہے کہ شق صدر کی روایات قرآن کے ساتھ بھی تعارض رکھتی ہیں اور مسلمانوں کے متفق علیہ اعتقادات کے بھی خلاف ہیں اور عام عقل بھی انہیں تسلیم نہیں کرتی۔ جس کی وجہ سے انہیں قبول نہیں کیا جا سکتا۔ اسی لئے بعض محققین [14] کے نزدیک یہ روایات عیسائیوں اور اہل کلیسا کی جعل کی ہوئی ہیں اور ان کا شمار اسرائیلیات میں ہوتا ہے۔ اس بات کی تائید اُن روایات سے بھی ہوتی ہے کہ جو صحیح مسلم وصحیح بخاری میں آئی ہیں کہ سوائے حضرت عیسی ۔ کے تمام اولاد آدم اپنی پیدائش کے وقت سے ہی شیطان کے تسلط ونفوذ کا شکار ہو جاتی ہے اور اسی لئے بچہ روتا اور چیختا ہے۔ صرف حضرت عیسیٰ ۔ بن مریم (س)تھے کہ جو پردے اور حجاب میں ہونے کی وجہ سے شیطان کے چھونے سے محفوظ رہے ہیں۔تمام اعتراضات ذیل میں دیے جا رہے ہیں۔

حضرت مریم اور حضرت عیسیٰ کی تمام انبیاء پر برتری[ترمیم]

شق صدر ہی جیسی کچھ اور روایات بھی کتب حدیث میں نقل ہوئی ہیں کہ جوظاہر کرتی ہیں کہ انسان اپنی پیدائش کے ساتھ ہی شیطان کے تسلط میں ہوتا ہے۔ انہی جیسی ایک روایت صحیح بخاری میں نقل ہوئی ہے: مجھ سے عبداللہ بن محمد مسندی نے بیان کیا کہ ہم سے عبدالرزاق نے بیان کیا، ہم کو معمر نے خبر دی، انہیں زہری نے، انہیں معید بن مسیب نے اور انہیں حضرت ابو ہریرہ نے کہ رسول کریم (ص) نے فرمایا، ہر بچہ جب پیدا ہوتا ہے تو شیطان اسے پیداہوتے ہیں چھوتا ہے، جس سے وہ بچہ چلاتا ہے، سوائے مریم اور ان کے بیٹے (عیسیٰ ۔ ) کے پھر ابو ہریرہ نے کہا کہ اگر تمہارا جی چاہے تو یہ آیت پڑھ ’’انی اعیذبک وذریتھا من شیطان الرجیم (آل عمران؍۳۶) یہ کلمہ حضرت مریم کی ماں نے کہا تھا، اللہ نے ان کی دعا قبول کی اور مریم اور عیسیٰ کو شیطان کے ہاتھ لگانے سے بچا لیاا[15]۔
بعض لوگوں کے متعلق واقعہ شق صدر اور مذکورہ بالا روایات سے عیسائی مسلمانوں کے خلاف پروپیگنڈہ کرتے ہیں کہ کوئی بھی انسان حتیٰ انبیائے کرام بھی معصوم نہیں ہیں اور لغزش وخطا کے خطرے سے دو چار ہیں، سوائے حضرت عیسیٰ اور اُن کی ماں حضرت مریم(ع)کے۔ چونکہ وہ شیطان کے چھونے سے محفوظ رہے ہیں اور یہی بات اُن کے غیر معمولی ہونے کی دلیل ہے جس کی وجہ سے وہ ایک لاہوتی ہستیاں ہیں۔
شق صدر کے بارے میں علامہ جعفر مرتضیٰ عاملی لکھتے ہیں:
’’حقیقت میں یہ روایت زمانہ جاہلیت کے قصے کہانیوں سے لی گئی ہے جیسا کہ کتاب ’’اغانی‘‘ میں ایک قصہ نقل ہوا ہے کہ’’اُمیہ بن ابی صلت ‘‘نے خواب میں دیکھا کہ دو پرندے آتے ہیں، ایک گھر کے دروازے پر بیٹھ جاتا ہے اور دوسرا اندر داخل ہو کر اُمیہ کا دل چیرتا ہے اور پھر اُسے دوبارہ وہیں لوٹا دیتا ہے۔ دوسراپرندہ اُس پرندے سے کہتا ہے :کیا تو نے دریافت کر لیا ہے؟ وہ کہتا ہے: ہاں، پھر وہ پوچھتا ہے کیا اُس کا تزکیہ ہو گیا ہے؟ یہ پرندہ کہتا ہے :اس نے قبول نہیں کیا۔ پھر وہ اس کے دل کو اپنی جگہ رکھ دیتا ہے۔ اس کے بعد اُمیہ کے سینے کی چیر پھاڑ کا عمل چار بار دہرایا جاتا ہے ‘‘۔ لگتا ہے ’’اُمیہ بن ابی صلت ‘‘ کے قصے جیسے بے بنیاد قصے اور ’’شیطان کے چھونے ‘‘ جیسی جعلی روایات ہی نبی اکرم (ص) کے بارے میں بھی شق صدر جیسی روایات گھڑنے کا باعث بنی ہیں[16] ۔

روایات کا ضعیف ہونا[ترمیم]

اس روایت کے متن کو ضعیف اور ظن وگمان پر مشتمل کرتے ہوئے اُستاد محمود ابوریہ اس بارے میں اپنے اُستاد شیخ محمد عبدہ کا قول نقل کرتے ہوئے لکھتے ہیں:
’’فھو من الأخبار الظنیۃ لأنہ من روایۃ الآحاد، ولما کان موضوعھا عالم الغیب، والایمان بالغیب من قسم العقائد، وھی لایؤخذ فیھا بالظن لقولہ تعالیٰ :’’ ان الظن لایغنی من الحق شیئاً ‘‘کنا غیر مکلفین الایمان بمضمون تلک الأحادیث فی عقائدنا ‘‘
’’یہ روایت اخبار احاد میں سے ہے جو ظن وگمان پر مشتمل ہے اور خبر واحد ہے جبکہ اس کا موضوع عالم غیب ہے اور غیب پر ایمان عقائد میں سے ہے لہٰذا اس میں ظن وگمان صحیح نہیں چونکہ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: ’’گمان ہرگز انسان کو حق سے بے نیاز نہیں کرتا‘‘[17] بنابریں ہم اس روایت کے مضمون پر ایمان لانے کے مکلف نہیں ہیں‘‘[18]۔

روایات میں اختلاف[ترمیم]

اس وقعے کے بارے میں روایات میں بھی کچھ اختلاف پایا جاتا ہے۔ ابن ہشام کے مطابق رسول اللہ (ص) کو اپنی ماں کو واپس لوٹانے کا سبب یہ تھا کہ جب حبشہ کے کچھ عیسائیوں نے آپ(ص) کو اپنی دائی کے ساتھ دیکھا توآپ(ص) کے بارے میں دائی حلیمہ سے کچھ سوالات کئے اور آنحضرت (ص) کا جائزہ لینے لگے اور دائی حلیمہ سے کہا: ہم اس بچے کوملک حبش لے جاتے ہیں ۔اس پر حلیمہ ڈر گئیں اور اُنہوں نے آنحضرت (ص) کو اُن ماں کو واپس کر دیا[19]۔اس کے بعد ابن ہشام اور دوسرے مؤرخین نے اپنی کتابوں میں یہ بھی لکھا ہے کہ دائی حلیمہ نے شق صدر کے واقعے کے بعدپیغمبر اکرم (ص) کو اُن کی والدہ کے پاس بھیج دیا تھا چونکہ حلیمہ اور اُن کے شوہر ڈر گئے تھے کہ کہیں جنات پیغمبر اکرم (ص) کو کوئی نقصان نہ پہنچا دیں۔
’’قال لی ابوہ یاحلیمۃ :لقد خشیت ان یکون ھذاالغلام قد اصیب فالحقیۃ باھلہ قبل ان یظھر بہ ذلک ‘‘[20]۔لہٰذا اُنھوں نے آپ (ص) کو اُن کی والدہ کے پاس بھیج دیا۔ یہ کیسے ممکن ہے کہ پیغمبر اکرم (ص) کا سینہ چاک ہونے کی وجہ سے آپ(ص) کو ماں کے پاس واپس بھیج دیا گیا ہو؟ جبکہ بقول مؤرخین یہ واقعہ اُس وقت پیش آیا تھا جب پیغمبر اکرم (ص) کی عمر مبارک دو یاتین سال تھی، لیکن متفق علیہ قول یہ ہے کہ آپ(ص) پانچ سال کے بعد اپنی والدہ ماجدہ کے پاس واپس لوٹے تھے[21]۔

شر کی بنیاد جسمانی یا روحانی(نفسانی)؟[ترمیم]

انسانی جسم میں دل یا خون کا شر سے کوئی تعلق نہیں۔ اس کا تعلق انسان کے نفس سے ہوتا ہے۔ اعتراض کے مطابق نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ یہ عمل بار بار سرانجام دینا ایسے ہی ہے کہ وہ بار بار شر سے آلودہ ہو گئے ہوں، جو رسول اکرم صلی اللہ علیہ ؤالہ وسلم کی توہین می شمار ہو گا۔

باطنی تزکیے کے لیے جراحی کی ضرورت نہیں[ترمیم]

روحانی بیماریوں کے علاج کے لیے جراحی کی جرورت نہیں ہوتی۔ اس کا تعلق انسان کے نفس اور اس کی روح سے ہوتا ہے۔

اللہ کے مخلص بندوں پر شیطان کا زور نہیں[ترمیم]

نبی کریم صلی اللہ علیہ ؤالہ وسلم سے زیادہ اللہ تعالیٰ کا مخلص کون ہو گا۔ شیطان کی زبان کے الفاظ قرآن میں درج ہیں کہ اللہ کے مخلس بندوں پر شیطان کو زور نہ ہو گا تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کیسے شرآلودہ ہو گئے تھے (نعوذ باللہ) ’’ قَالَ رَبِّ بِمَا أَغْوَیْتَنِی لَأُزَیِّنَنَّ لَہُمْ فِی الْأَرْضِ وَلَأُغْوِیَنَّہُمْ أَجْمَعِینَ۔ إِلاَّ عِبَادَکَ مِنْہُمْ الْمُخْلَصِینَ ‘‘ [22]۔ ترجمہ: ؛ اس نے کہا: پروردگارا! چونکہ تو نے مجھے گمراہ کیا ہے، میں مادی نعمتوں کو زمین میں ان (انسانوں) کی نگاہ میں مزّین کروں گا اور ان سب کو گمراہ کروں گا سوائے تیرے مخلص بندوں کے۔ اس کے جواب میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’إِنَّ عِبَادِی لَیْسَ لَکَ عَلَیْہِمْ سُلْطَانٌ وَکَفَی بِرَبِّکَ وَکِیلًا ‘‘ [23] ترجمہ؛ (لیکن جان لے ) تو ہرگز میرے بندوں پر تسلط حاصل نہیں کر سکے گا یہی کافی ہے کہ تیرا پروردگار ان کا محافظ و وکیل ہے۔ یہاں اُستاد محمود ابوریہ، یہ آیات ذکر کرنے کے بعد اس قسم کی روایات پر اعتماد کرنے والوں کے بارے میں لکھتے ہیں: ’’ وکیف یدفعون الکتاب بالسنۃ، أو یعارضون المتواتر الذی یفید الیقین، بأحادیث الآ حادالتی لاتفید اِلاالظن ؟! ‘‘یہ لوگ کس طرح کتاب خدا کو سنت ظنیہ اور متواتر احادیث کہ جو یقینی ہیں کو اخبار احاد کہ جن سے فقط ظن وگمان حاصل ہوتا ہے، کے ذریعے ردّ کر دیتے ہیں “[24]‘۔

روایات عصمت رسول کے منافی ہیں[ترمیم]

جیسا کہ انس نے نقل کیا ہے پیغمبر اکرم (ص) کے سینے کو چیر پھاڑ کر آب زم زم سے دھویا گیا ہے۔ یہ بات اس لحاظ سے بھی ضعیف اور ناقابل اعتماد ہے کہ پیغمبر اکرم (ص) کا معصوم ہونا متفق علیہ ہے۔ تمام مسلمانوں کا اعتقاد ہے کہ آپ (ص)ہر قسم کی شیطانی آلودگی سے پاک وپاکیزہ تھے اور شیطان کو آپ (ص) پر کسی قسم کا تسلط حاصل نہیں تھا۔ جیسا کہ شیخ محمد عبدہ کہتے ہیں: ’’والمحقق عندنا انہ لیس للشیطان سلطان علی عباد اللہ المخلصین، وخیرھم الانبیاء والمرسلین ‘‘[25]۔
تاکہ آپ (ص) کے سینے کو چاک کر کے اُسے دھونے کی ضرورت پیش آتی۔

حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کےسینہ مبارک پر ٹانکوں کے نشان[ترمیم]

صحیح مسلم کی روایت میں انس بن مالک کے بقول:
قال انس: ’’ وقد کنت اری اثر ذلک فی صدرہ‘‘
ترجمہ؛ انس کہتے ہیں: میں نے آنحضرت (ص) کے سینے میں ٹانکے لگے ہوئے دیکھے ہیں۔
حضرت انس نے یہ نشانات کب دیکھے ہیں: پیغمبر (ص)کے بچپن میں یا آپ(ص) کی حیات مبارکہ کے آخری ایام میں؟ کیا حضرت انس نے ہی یہ نشانات دیکھے ہیں یا دوسرے صحابہ نے بھی دیکھے ہیں؟ اگر دیکھے ہیں تو دوسروں نے اس کے بارے اظہار کیوں نہیں فرمایا؟ اس طرح کے سوالات بھی ان روایات پر کیے گئے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ تاریخ طبری، جلد دوم، حصہ اول، دارالاشاعت، کراچی، طبع ۲۰۰۳ء
  2. ^ تاریخ یعقوبی ص ۲۲۲(اُردو )
  3. ^ السیرۃ النبویۃ لابن ھشام، ج ۱، ص۱۶۸(ولادتہ رسول اللہ ورضاعتہ )
  4. ^ سیرت ابن ھشام، جلد اول ،ص ۱۴۸۔مترجم مولوی قطب الدین احمد صاحب محمودی
  5. ^ صحیح مسلم، ج۱ کتاب الایمانح ۴۱۳
  6. ^ الصحیح من السیرۃ النبی ج۱ص۸۳
  7. ^ تفسیر مفاتیح الغیب فخر رازی ج ۳۲،ص۲
  8. ^ اضوء علی السنۃ المحمدیۃ او دفاع عن الحدیث،ص۱۸۶
  9. ^ سورۂ حجر ۳۹،۴۰
  10. ^ سورۂ اسراء۶۵
  11. ^ اضوء علی السنۃ المحمدیۃ،ص۱۸۸
  12. ^ سیری در صحیحین ،ص۲۴۶
  13. ^ بحار الانوار ،ج۱۶ ،ص۱۴۰
  14. ^ اضوء علی السنۃ المحمدیۃ،ص۱۸۸، الصحیح مین سیرۃ النبی ج۱،ص۸۹
  15. ^ صحیح بخاری ،ج۶، ص۱۱۵ح،۴۵۴۸،ترجمہ مولانامحمدداؤد راز
  16. ^ الصحیح فی سیرۃ النبی ،ج۱،ص ۸۸
  17. ^ سورۂ نجم ۲۸
  18. ^ اضوء علی السنۃ المحمدیۃ او دفاع عن الحدیث ،ص۸۸
  19. ^ سیرۂ ابن ہشام ج۱، ص۱۷۷
  20. ^ سیرۂ ابن ہشام، ج۱ ص ۱۷۴، سیرۂ حلبی، ج۱ ص ۱۶۶
  21. ^ الصحیح مین سیرۃ النبی، ج۱،ص۸۹
  22. ^ سورۂ حجر ۳۹،۴۰
  23. ^ سورۂ اسراء۶۵
  24. ^ اضوء علی السنۃ المحمدیۃ،ص۱۸۸
  25. ^ اضوء علی السنۃ المحمدیۃ،ص۱۸۸

مزید دیکھیں[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]