امونیم کارب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

دنیائے ہومیوپیتھی میں ڈاکٹر ولیم بورک کی کثیر المطالعہ تصنیف " بورک میٹریا میڈیکا " کلیدی حیثیت رکھتی ہے جس کے انگریزی میں نوایڈ یشن شائع ہو چکے ہیں اور یہ دوامیٹریامیڈ یکا میں (35) نمبر پر ہے،

alt text

علامات دوا[ترمیم]

یہ دوا تنو مند مستورات کے لیے مفید ہے جو ہمیشہ تھکی ماندی نظر آتی ہیں اور جنہے ں سردی زاکام بڑی آسانی سے ہو جاتا ہے اور جنہیں ماہواری ہونے سے پہلے ہیضہ جیسی علامات نمودار ہوتی ہیں، آرام طلب زندگی بسر کرنے والی عورتیں، ایسی عورتیں جن میں دوا کا رد عمل بڑی سست رفتاری سے ہو جو عموماَ نو شادر کی بوتل بار بار سونگھتی رہتی ہیں ماہواری بکثرت اور بار بار ہوتی رہتی ہے۔ سانس کی نالی کی بلغمی جھلّیاں خصوصیت کے ساتھ متاثر ہوتی ہیں، موٹے جسم والے جن کا دل کمزور ہو، سانس لیں تو کھر کھر کی آواز ہو اور دم گھٹتا محسوس ہو، ٹھنڈی ہوا بالکل برداشت نہی ہو، پانی سے زبردست نفرت، چھونا بھی برداشت نہ ہو، مہلک قسم کا لال بخار، غنودگی، غدود پھولے ہوئے گلے کی رنگت کہری سُرخ، دانے جو نہایت سستی کے ساتھ نکلیں، گردوں کا فعل بگڑ جانے سے خون میں زہر یلا مادہ آجاتا ہے، تمام اعضا میں بھاری پن، جسم کو صاف ستھرا نہ رکھ سکے، غدو متورم، ترش اخراج، ذرا سی محنت بھی تکان کا باعث بن جاتی ہے۔

ذہن :۔[ترمیم]

نسیان، چڑاچڑا پن، طوفانی موسم میں نا امیدی چھا جاتی ہے، جسمانی صفائی پر کوئی توجہ نہ دے، دوسروں کی باتیں سن کر اس کی طبیعت پر بُرا اثر پڑتا ہے، دکھی، روئے، دلے ل کے ساتھ اور معقلیت کے ساتھ بات نہ کرے۔

سر :۔[ترمیم]

پیشانی میں تپکن کے ساتھ درد ہو، یہ درد دباوسے اور گرم گھر میں کم ہو، سر میں جھٹکے آئیں۔

آنکھیں :۔[ترمیم]

جلن ہو، چمک لگے، روشنی برداشت نہ ہو، بنیائی سے باریک کام کرنے کے نتائج (نیٹرم میور) نگاہ کمزور، کونوں میں تکلیف۔

کان :۔[ترمیم]

کم سُنے، دانت کٹکٹانے سے آنکھوں اور ناک میں جھٹکے آئیں۔

ناک :۔[ترمیم]

خراش دار، جلن پیدا کرنے والا مواد نکلے، پرانا زکام جس میں رات کو ناک بند ہو جائے اور ناک سے سانس نہ لے سکے۔ بچے کے سانس میں سوں سوں سڑ سڑ کی آوازیں پیدا ہوں منہ ہاتھ دھونے سے اور کھانا کھانے کے بعد ناک سے خون جاری ہو۔ ناک کی اندرونی بدبودار گلن سڑن، ناک سے خون ملی رطوبت آئے، ناک کی نوک میں خون جمع ہو جائے۔

چہرہ :۔[ترمیم]

منہ کے آس پاس داد کے دانے، پھوڑے، پھنسیاں، بالخصوص ماہواری کے دنوں میں منہ کے کونے کٹے پھٹے ان میں جلن ہو۔

منہ :۔[ترمیم]

منہ اور گلے میں بے حد خشکی، دانتوں میں درد، اگر مریض دانتوں کو دبائے تو سر آنکھوں اور کانوں میں جھٹکے آئیں، زبان کے چھالے، منہ کا ذائقہ کسے لا، کھٹا، کچھ چبائے تو جبڑوں میں کڑاکڑاہٹ ہو۔

گلا :۔[ترمیم]

ٹانسل اور گردن کے غدود پھول جاتے ہیں، گلے سے نیچے دور تک جلن ہو۔ ٹانسلوں پر مردار پڑنے والے زخم آنے کا رحجان، ڈپتھیر یا، جبکہ ناک بھی بند ہو۔

معدہ :۔[ترمیم]

دردِمعدہ اس کے ساتھ کلیجی میں جلن، متلی، منہ میں رال بکثرت آئے اور سردی لگے۔ بھوک شدید لیکن بدہضمی، صرف چند لقمے کھا کر اُٹھ جاتا ہے، اپھارہ، بدہضمی۔

پیٹ :۔[ترمیم]

درد ہو گڑ گڑاہٹ ہوا، اپھارہ کی وجہ سے ہر نیا بڑے بڑے سخت اور گانٹھ دار سدے آئیں۔ خونی بواسیر کی تکلیف حیض کے دنوں میں بڑھ جاتی ہے۔ مقعد کے منہ پر خارش، بواسیر کے مسّے باہر نکل آئیں۔ بالخصوص رفع حاجت کے بعد لیٹ جانے سے آرام ملے۔

پیشاب :۔[ترمیم]

بار بار ہو، رات کو پیشاب بے خبری میں اپنے آپ نکل جائے، مثانے میں مروڑ ہو، پیشاب کی رنگت سفید اس میں ریت خارج ہو، خون آئے۔ مقدار میں زیادہ آئے۔ گدلا اور بدبودار

مرد :۔[ترمیم]

فوطوں کی تھیلی اور منی کی ڈوری پر خارش ہو، درد ہو، بغیر خواہش ایستادگی آئے منی بہہ جائے۔

زنانہ :۔[ترمیم]

شرمگاہ کے بے رونی حصّے پر خارش،سوجن اور جلن ہو، لکوریا جس میں جلن اور درد ہو۔ پانی جیسا پتلا اور تیز مواد خارج ہو، ہم بستری سے نفرت، حیض بکثرت، مقدار میں زیادہ اور بار بار ہو، مقررہ وقت سے بہت پہلے، خون جما ہوا، رنگت سیاہ، درد کے ساتھ ہو، اس کے ساتھ قبض جس میں سخت سُدّے خارج ہوں اور بعد میں زبردست تکان ہو بالخصوص رانوں میں، جمائیاں آئیں اور سردی لگے۔

آلات تنفّس :۔[ترمیم]

گلا بیٹھ جائے، ہر روز صبح 3 بجے کھانسی آئے اس کے ساتھ سانس کی تنگی دھڑکن اور سینے میں جلن ہو، یہ مجموعی علامات سیڑھیاں چڑھنے سے شدّت اختیار کریں چھاتی جیسے تھک گئی ہو، نسے جوں میں ہوا کی موجودگی، سانس لیتے وقت گھٹن ہوتی ہے، یہ تکلیف معمولی سی محنت کرنے سے، گرم گھر میں جانے سے یا دو چار سیڑھیاں چڑھنے سے بڑھ جاتی ہے۔ نمونیا، ساسن بہت آہستہ آہستہ اور تکلیف سے آئے، خراٹے سے آئے۔ کف نکے جس میں خون کی پھٹکیاں ہوں پھیپھڑوں کا استسقائ۔

دل :۔[ترمیم]

دھڑکن جو بہیت صٓاف سنائی دے اس کے ساتھ خوف لگے۔ ٹھنڈا پسے نہ آئے آنسو بکثرت آئیں، بول نہ سکے اور بہت زور زور سے سانس لے ہاتھ کاپیں، دل کمزور، دم گُھٹے اوردل میں دھڑکن کے باعث بار بار نیند ٹوٹے۔

ہاتھ پاؤں :۔[ترمیم]

جوڑوں میں چیرنے پھاڑنے کی طرح کا درد، جو بستر کی گرمی سے کم ہو انگڑائی لینے کی خواہش، ہاتھ ٹھنڈے اور نیلے، رگیں پھیلی ہوئی، اگر بازو نیچے لٹکائے تو انگلیاں پھول جاتی ہیں، ہاتھ کی انگلیوں کے ناخن کی جڑ میں نکلنے والا تکلیف دہ پھوڑا، ہڈی کی گہرائی میں درد ہو، بنڈلے وں اور تلووں میں اے نٹھن ہو، پاؤں کا انگوٹھا سو جا ہوا اور درد کرے، بسہری کا ابتدائی درجہ، کھڑا ہونے سے ایڑی میں درد ہو، ٹخنوں اور پاؤں کی ہڈیوں میں چیرنے پھاڑنے کی طرح کا درد ہو جو بستر کی حرات سے کم ہو۔

نیند :۔[ترمیم]

دن میں غنودگی، سوتے سوتے چونک اٹھے جیسے ابھی سانس گُھٹ جاتا۔

جلد :۔[ترمیم]

چھالے جن میں بہت زیادہ جلن و خارش ہو، سُرخ رنگ کے دانے، جسم پر باجرے جے سے دانے نمودار ہوں، مہلک لال بخار، جسمانی کمزوری کے باعث دانے دیر میں نکلے ں۔ بوڑھوں کا سُرخ بادہ، جس کے ساتھ دماغی علامات بھی ہوں۔ اگزیما ہاتھ پاؤں کے جوڑوں کے اندرونی حصّے میں، ٹانگوں کے درمیان مقعد کے آس پاس اور اعضاءتناسل کے پاس نمودار ہو۔

شدّت :۔[ترمیم]

شام کے وقت، سرد تر موسم میں، مقام ماوف پر گے لا کپڑا رکھنا، صبح 3۔ 4 بجے کے درمیان، ایامِ حیض میں۔

کمی :۔[ترمیم]

عضو ماوف پر لیٹنے سے، معدے کو دبا کر لیٹنا، خشک موسم۔

تعلقات :۔[ترمیم]

مخالف ہے، لیکیسس، تاہم خاصیت کے لحاظ سے مشابہ ہے۔

دافع اثوا :۔[ترمیم]

آرنیکا، کے مفر، مقابلہ کریں رہس ٹاکس، میورایسڈ، ٹارٹار ایمیٹک۔ یہ دوا کوئلے کی گیس کے زہریلے اثرات کو دور کرتی ہے۔

طاقت :۔ نچلی پوٹنسیاں پرانی ہونے سے بے اثر ہو جاتی ہیں، عام استعمال کے لیے 6 طاقت۔

حوالہ:

بورک میٹریا میڈیکا