انیتا زیدی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

انیتازیدی[ترمیم]

انیتا زیدی کا پورا نام انیتا کنیز مہدی زیدی ہے ان کی پیدائش 1964 کی ہے۔ وہ ایک پاکستانی معالجہ ہیں اور بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن میں ویکسین ڈویلپمنٹ کی ڈائریکٹر ہیں۔اس سے قبل وہ آغا خان یونیورسٹی میں پیڈیاٹریکس اور چلڈرن ہیلتھ کے پروفیسر کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکی ہیں۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

انیتا زیدی پاکستان میں پیدا ہوئیں۔ ان کی والدہ ایک ماہر امراض اطفال ہیں اور والد اینستھیسیولوجسٹ تھے[1] [2] ان کے والد کو پاکستان مردوں کی قومی فیلڈ ہاکی ٹیم کا قومی معالج مقرر کیا گیا تھا اور زیدی اکثر ان کے ہمراہ ان کے دوروں پر جاتے تھے[1] جب کہ برطانیہ میں ایک کزن سے ملنے پر زیدی نے مائکرو بائیوولوجی میں دلچسپی لی اور طبی تجارتی لیبارٹری میں کام کرنے کے لئے درخواست دی [1] انیتا زیدی نے آخر کار آغا خان یونیورسٹی میں طب کی تعلیم حاصل کی اور 1988 میں بیچلر آف میڈیسن ، بیچلر آف سرجری کی ڈگری حاصل کی[2] ڈگری کے دوران وہ معاشرتی صحت سے متعلق اپنے کورسز سے لطف اندوز ہوتی تھیں اور پاکستان کی شہری فراغ بستیوں (کچی آبادیوں) میں کام کرنے میں صرف کرتی تھیں [1] انھوں نے لاس اینجلس یونیورسٹی آف کیلیفورنیا سے آنے والے پروفیسر کلیئر پینوسیئن ڈاوان کے بارے میں بات کی ہے۔[1] انیتازیدی کا گروہ میڈیکل طلباء میں آغا خان سے فارغ التحصیل ہونے والے پہلی جماعتوں میں سے ایک تھا اور بہترین میڈیکل گریجویٹ ایوارڈ کا افتتاحی فاتح تھا۔[3] [4] [5] فارغ التحصیل ہونے کے بعد انہوں نے دور دراز کے شمالی پاکستانی علاقوں (موجودہ گلگت بلتستان) میں ریاستہ ائے متحدہ کے ایک بین الاقوامی ترقیاتی پروگرام میں کام کیا ، جس سے انھیں یہ تحریک مل کہ وہ اپنے کیریئر کو عالمی عوام کی صحت کے لئے وقف کردیں۔ [3] اس کے منصوبے میں اسہال کی بیماری کے لئے کمیونٹی سرویلنس پروگرام قائم کرنا اور اس بات کی نشاندہی کرنا شامل ہے کہ آغا خان ہیلتھ سروسز کو صحت کی دیکھ بھال میں بہتری لانے کے لئے کس بنیادی ڈھانچے پر عمل درآمد کرنے کی ضرورت ہے[1] انھوں نے ڈیوک یونیورسٹی میں پیڈیاٹرکس کی رہائش گاہ کی تربیت مکمل کی اور ڈیوک یونیورسٹی میں میڈیکل مائیکرو بایولوجی بھی لی۔ انھوں نے بوسٹن چلڈرن ہسپتال میں بچوں کے لئے متعدی امراض سے متعلق خصوصی تربیت لی۔ انیتا زیدی نے ہارورڈ ٹی ایچ چین اسکول سے ٹراپیکل پبلک ہیلتھ میں ماسٹرز کیا۔ 1999 میں چان اسکول آف پبلک ہیلتھ سے [6]

تحقیق اور کیریئر[ترمیم]

2002 میں ، ماہر کی تربیت مکمل کرنے کے بعد ، زیدی واپس پاکستان چلی آگئیں۔ جب وہ آغا خان یونیورسٹی میں شعبہ پیڈیاٹریکس اور چلڈرن ہیلتھ کی چیئر بنی تو مکمل پروفیسر کے طور پر ترقی پانے والی کم عمر فیکلٹی ممبروں میں سے ایک تھیں۔ 2011 میں انھیں ایک مستحق مقام سے نوازا گیا۔ روبی اور کریم بہادر علی جیسانی پروفیسر اور چیئر۔[7] آغا خان یونیورسٹی میں زیدی نے ایک جدید ترین لیبارٹری قائم کی جو بچوں کے متعدی امراض کی تفتیش کرتی ہے انیتا زیدی ترقی پذیر دنیا کی واحد خاتون ہیں جنہوں نے پیڈیاٹریکس کے نیلسن ٹیکسٹ بک میں ایک باب میں حصہ لیا[5] انیتا زیدی 2013 میں کراچی میں غربت زدہ کمیونٹیوں کی مدد کرنے والے کام کے لئے کیپلو چلڈرن ایوارڈ کی پہلی وصول کنندہ تھیں[6] [8] انہوں نے یہ انعام ریحری گوٹھ میں نوزائیدہ اموات کو کم کرنے کے لئے استعمال کیا۔ ان کی کاوشیں غذائی قلت کے خاتمے ، صحت کی دیکھ بھال اور ویکسین تک رسائی میں بہتری اور معاشرتی صحت کے پیشہ ور افراد کے لئے تربیت پر توجہ کے لئے کی گئیں۔ انھوں نے ایسے پروگرام تیار کیے جن سے بچوں کی پیدائش سے پہلے ، اس کے بعد اور بعد میں ماں اور بچے کی صحت کی تائید ہوتی تھی۔انیتا زیدی نے اندازہ لگایا کہ اس پروگرام سے بچوں کی اموات میں 65 فیصد کمی واقع ہوگی ، جس سے دو سالوں میں 200 بچوں کی زندگیاں بچیں گی۔ 2014 میں انیتا زیدی کو میڈیکیپ کے ذریعہ سال کے بیترین معالج کے لئے شارٹ لسٹ کیا گیا تھا۔ وہ ویکسین ڈویلپمنٹ ، سرویلنس ، اور انترک اور اسہال کی بیماریوں کے پروگراموں کی ڈائریکٹر ہیں اور بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن میں زچگی ، نوزائیدہ اور بچوں کی صحت کی دریافت اور اوزار کے پروگراموں کی شریک ڈائریکٹر ہیں۔[9] [10] اس صلاحیت میں انیتا زیدی دنیا بھر کی کمیونٹیوں کے تحفظ کے لئے نئی ویکسین تیار کرنے کی حمایت کرتی ہے[11] انیتا زیدی عوامی صحت میں اپنے کاموں کو شیئر کرنے کے لئے سوشل میڈیا کا استعمال کرتیں ہیں۔ انہوں نے دی کنورژن ، اسکل فاؤنڈیشن [12] پروجیکٹ سنڈیکیٹ [13] اور ہف پوسٹ کے لئے بھی لکھا ہے۔[14]

ذاتی زندگی[ترمیم]

انیتا زیدی شادی شدہ خاتون ہیں اور ایک بیٹی اور ایک بیٹے کی ماں ہیں [1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج Syed، Sana (2016-12-06). "A Conversation with Anita Zaidi — A Discussion of Global Child Health, Empowering Women and…". Medium (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2019. 
  2. ^ ا ب AKU Alumni - Dr Anita Zaidi (انگریزی میں)، اخذ شدہ بتاریخ 2019-12-13 
  3. ^ ا ب Mushtaq، Ammara (2013-06-22). "Anita Zaidi: promoting newborn and child health in Pakistan" (English میں). The Lancet 381 (9884): 2156. doi:10.1016/S0140-6736(13)61427-0. آئی ایس ایس این 0140-6736. PMID 23791335. https://www.thelancet.com/journals/lancet/article/PIIS0140-6736(13)61427-0/abstract. 
  4. "Alumni News and Features". alumni.sph.harvard.edu (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2019. 
  5. ^ ا ب "Award of Excellence in Research | Convocation 2013, Pakistan | The Aga Khan University". www.aku.edu (بزبان انگریزی). 14 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2019. 
  6. ^ ا ب Boston، 677 Huntington Avenue؛ Ma 02115 +1495‑1000 (2014-01-09). "Alumna Anita Zaidi awarded $1 million to save children's lives in Pakistan village". News (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2019. 
  7. "Anita Zaidi". Women Leaders in Global Health (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2019. 
  8. "Making a real difference: A Q&A with Dr. Anita Zaidi (part 1) – The Children's Prize" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2019. 
  9. "Demystifying the Gates Foundation". LSHTM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2019. 
  10. "Anita Zaidi". Bill & Melinda Gates Foundation (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2019. 
  11. Seattle PAP – Interview with Anita Zaidi from the Bill and Melinda Gates Foundation (انگریزی میں)، اخذ شدہ بتاریخ 2019-12-13 
  12. "Skoll | Anita Zaidi". اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2019. 
  13. "Anita Zaidi". Project Syndicate (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2019. 
  14. "Anita Zaidi | HuffPost". www.huffpost.com. اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2019.