برقی تجارت کا مالی ادائیگی نظام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ایک ای کامرس ادائیگی کا نظام (یا الیکٹرانک ادائیگی کا نظام ) آف لائن منتقلی کے لیےبرقی ( الیکٹرانک) ادائیگی کی قبولیت میں سہولت فراہم کرتا ہے، جسے الیکٹرانک ڈیٹا انٹرچینج (EDI) کا ذیلی جزو بھی کہا جاتا ہے، انٹرنیٹ پر مبنی خرید اری اور بینک کاری کی وجہ سے وسیع پیمانے پر استعمال کی وجہ سے ای کامرس یا برقی تجارتی مالی ادائیگی کے نظام تیزی سے مقبول ہو گئے ہیں۔

ای کامرس لین دین کے لیے کریڈٹ کارڈز ادائیگی کی سب سے عام شکل ہیں۔ 2008ء تک، شمالی امریکا میں تقریباً 90% آن لائن ریٹیل لین دین اس قسم کی ادائیگی کے ساتھ کیے گئے تھے۔ [1] ایک آن لائن خوردہ فروش کے لیے کریڈٹ اور ڈیبٹ کارڈ کے وسیع استعمال کی وجہ سے ان کے تعاون کے بغیر کام کرنا مشکل ہے۔ [1] آن لائن تاجروں کو کریڈٹ اور ڈیبٹ کارڈ جاری کرنے والوں کے ذریعہ وضع کردہ سخت قوانین کی تعمیل کرنی پڑتی ہے (مثال کے طور پر ویزا اور ماسٹر کارڈ ) ان ممالک میں بینک اور مالیاتی ضابطے کے مطابق جہاں ڈیبٹ/کریڈٹ سروس کاروبار کرتی ہے۔ [2]

ای کامرس ادائیگی کا نظام اکثر بی2بی موڈ استعمال کرتا ہے۔ روایتی بی2بی ای کامرس ماڈل کے تحت لین دین کی ادائیگی کے عمل کے دوران میں کاہگ ( کسٹمر) کی معلومات، کاروباری معلومات، اور ادائیگی کی معلومات کی بنیاد کی حفاظت ایک تشویش کا باعث ہے۔

عوامی انٹرنیٹ پر قابل رسائی ادائیگی کے نظام کی اکثریت کے لیے، بنیادی تصدیق (وصول کرنے والے مالیاتی ادارے کی)، ڈیٹا کی سالمیت ، اور عوامی نیٹ ورک پر تبادلہ الیکٹرانک معلومات کی رازداری میں ایک مجاز سرٹیفکیٹ اتھارٹی سے سرٹیفکیٹ حاصل کرنا شامل ہے۔ سی اے) جو عوامی کلیدی بنیادی ڈھانچہ (پی کے آئی) فراہم کرتا ہے۔ یہاں تک کہ پبلک نیٹ ورکس پر کیے جانے والے لین دین کے حصے کو محفوظ رکھنے کے لیے ٹرانسپورٹ لیئر سیکیورٹی (ٹی ایس ایل) کے ساتھ بھی — خاص طور پر ادائیگی کے نظام کے ساتھ — خود کسٹمر کا سامنا کرنے والی ویب سائٹ کو بہت احتیاط کے ساتھ کوڈ کیا جاتا ہے، تاکہ بعد میں شناخت کی چوری، اسناد کو لیک ہونے اور صارفین کو بے نقاب نہ کیا جائے۔

شمالی امریکا میں وسیع پیمانے پر استعمال کے باوجود، ابھی بھی بہت سے ممالک جیسے چین اور بھارت ہیں جن کو کریڈٹ کارڈ کی حفاظت کے سلسلے میں کچھ مسائل پر قابو پانا ہے۔ بڑھے ہوئے حفاظتی اقدامات میں کارڈ کا تصدیقی نمبر (سی وی این) کا استعمال شامل ہے جو کارڈ کے پچھلے حصے پر دستخط کی پٹی پر چھپی تصدیقی نمبر کا کارڈ ہولڈر کے جاری کرنے والے بینک کے ساتھ فائل پر موجود معلومات کا موازنہ کرکے دھوکہ دہی کا پتہ لگاتا ہے۔ [3]

ایسی کمپنیاں ہیں جو انٹرنیٹ پر مالی لین دین میں مہارت رکھتی ہیں، جیسے کہ کریڈٹ کارڈز کی پروسیسنگ کے لیے پٹی ، براہ راست آن لائن بینک ادائیگیوں کے لیے اسمارٹ پے اور چیک آؤٹ پر ادائیگی کے متبادل طریقوں کے لیے پے پال۔ بہت سے ثالث صارفین کو فوری طور پر اکاؤنٹ قائم کرنے، اور اپنے آن لائن اکاؤنٹس اور روایتی بینک اکاؤنٹس کے درمیان میں رقوم کی منتقلی کی اجازت دیتے ہیں، عام طور پر خودکار کلیئرنگ ہاؤس (اس سی ایچ ) ٹرانزیکشنوں کے ذریعے۔

جس رفتار اور سادگی کے ساتھ سائبر میڈیری اکاؤنٹس قائم کیے جاسکتے ہیں اور استعمال کیے جاتے ہیں اس نے چوری، بدسلوکی، اور چیزیں غلط ہونے پر سہارا تلاش کرنے کے عام طور پر مشکل عمل کے باوجود، ان کے وسیع پیمانے پر استعمال میں حصہ ڈالا ہے۔ معلومات کے تحفظ کو برقرار رکھنے والے بڑے مالیاتی اداروں کی موروثی معلومات کی مطابقت آخری صارف کو سسٹم کے بارے میں بہت کم بصیرت فراہم کرتی ہے جب سسٹم فنڈز کو غلط طریقے سے استعمال کرتا ہے، جس سے ناراض صارفین اکثر ثالثوں پر نامناسب یا غلط رویے کا الزام لگاتے رہتے ہیں۔ عوام اور بینکنگ کارپوریشنوں کے درمیان میں اعتماد اس وقت بہتر نہیں ہوتا جب بڑے مالیاتی اداروں نے اپنی غیر متناسب طاقت کا واضح فائدہ اٹھایا، جیسا کہ 2016ء ویلز فارگو اکاؤنٹ فراڈ اسکینڈل میں ہوا تھا ۔

آن لائن ادائیگی کے طریقے[ترمیم]

برقی یا الیکٹرانک ادائیگی کے مختلف قسم کے طریقے ہیں جیسے آن لائن کریڈٹ کارڈ ٹرانزیکشن، ای والٹس، ای کیش اور وائرلیس ادائیگی کا نظام۔ کریڈٹ کارڈ آن لائن ادائیگی کا ایک مقبول طریقہ ہے لیکن بنیادی طور پر ٹرانزیکشن فیس کی وجہ سے تاجر کے لیے قبول کرنا مہنگا ہو سکتا ہے۔ ڈیبٹ کارڈ اسی طرح کی سیکیورٹی کے ساتھ ایک بہترین متبادل ہیں لیکن عام طور پر بہت کم فیس لی جاتی ہے۔ کارڈ پر مبنی ادائیگیوں کے علاوہ، ادائیگی کے متبادل طریقے سامنے آئے ہیں اور بعض اوقات مارکیٹ کی قیادت کا دعویٰ بھی کیا جاتا ہے۔

بینک کی ادائیگی[ترمیم]

یہ ایک ایسا نظام ہے جس میں کسی بھی قسم کا مادی کارڈ شامل نہیں ہے۔ یہ وہ صارفین استعمال کرتے ہیں جن کے اکاؤنٹس انٹرنیٹ بینکنگ کے ساتھ فعال ہیں۔ خریدار کی سائٹ پر کارڈ کی تفصیلات درج کرنے کے بجائے، اس نظام میں ادائیگی کا گیٹ وے کسی کو یہ بتانے کی اجازت دیتا ہے کہ وہ کس بینک سے ادائیگی کرنا چاہتے ہیں۔ اس کے بعد صارف کو بینک کی ویب سائٹ پر ری ڈائریکٹ کیا جاتا ہے، جہاں کوئی خود کو تصدیق کر سکتا ہے اور پھر ادائیگی کی منظوری دے سکتا ہے۔ عام طور پر دو عنصر کی توثیق (ٹو اسٹپ ویرفکیشن) کی کچھ شکل بھی ہو سکتی ہے۔

اسے عام طور پر کریڈٹ کارڈ کے استعمال سے زیادہ محفوظ سمجھا جاتا ہے، کیوں کہ ہیکروں کے لیے کریڈٹ کارڈ نمبروں کے مقابلے لاگ ان کی اسناد حاصل کرنا زیادہ مشکل ہوتا ہے۔ بہت سے ای کامرس یا برقی تجارت دکاندار کے لیے، صارفین کو ان کے بینک اکاؤنٹ میں نقد رقم سے ادائیگی کرنے کا اختیار پیش کرنا کارٹ ترک کرنے کو کم کرتا ہے کیوں کہ یہ کریڈٹ کارڈ کے بغیر لین دین کو مکمل کرنے کا ایک طریقہ بناتا ہے۔

موبائل بٹوے[ترمیم]

کچھ ترقی پذیر ممالک میں، بہت سے لوگوں کو بینکنگ کی سہولیات تک رسائی نہیں ہے، خاص طور پر ٹائر II اور ٹائر III شہروں میں۔ بھارت کی مثال لیں، وہاں موبائل فون استعمال کرنے والوں کی تعداد ان لوگوں سے زیادہ ہے جن کے بینک اکاؤنٹس ہیں۔ ٹیلی کام آپریٹروں نے ایسے مقامات پر موبائل بٹوے ( منی والیٹ) کی پیشکش شروع کر دی ہے جو اپنے موجودہ موبائل سبسکرپشن نمبر کے ذریعے اپنے گھروں اور دفاتر کے قریب فزیکل ریچارج پوائنٹس پر جا کر اور اپنی نقدی کو موبائل والیٹ کرنسی میں تبدیل کر کے آسانی سے فنڈز جمع کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔ اسے آن لائن لین دین اور برقی تجارت یا ای کامرس خریداریوں کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Turban, E. King, D. McKay, J. Marshall, P. Lee, J & Vielhand, D. (2008). Electronic Commerce 2008: A Managerial Perspective. London: Pearson Education Ltd. p.550
  2. Mastercard: Security Rules and Procedures-Merchant Edition (PDF). 2009. Retrieved: May 12, 2009
  3. Turban, E. King, D. McKay, J. Marshall, P. Lee, J & Vielhand, D. (2008). Electronic Commerce 2008: A Managerial Perspective. London: Pearson Education Ltd. p.554

مزید مطالعہ[ترمیم]