بھارت کا کالا دھن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ٹیکس ہیون کا نقشہ

بھارت میں کالا دھن ان پیسوں کو کہا جاتا ہے جو چور بازار میں کمائے جاتے ہیں اور ان پر عائد ہونے والے محصول آمدنی اور دیگر اقسام کے محصول ادا نہیں کیے جاتے۔ بھارتی شہریوں کی جانب سے بیرون ممالک کے بنکوں میں جمع کی گئی رقم کی مجموعی تعداد نامعلوم ہے۔ بعض رپورٹوں میں سویٹزرلینڈ میں جمع شدہ رقم کی کل قیمت 50 ٹریلین امریکی ڈالر بتائی گئی ہے۔[1] جبکہ مسٹر آر ویدناتھن نے اندازہ لگایا ہے کہ اس کا حجم تقریبا 7،280،000 کروڑ روپے ہے۔ تاہم حکومت سویٹرزلینڈ اور سویس بینکرز اسوسی ایشن کی رپورٹوں کے مطابق رقوم یہ یہ تعداد غلط ہے اور درست تعداد دو بلین امریکی ڈالر ہے۔[2][3]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Vicky Nanjappa (31 مارچ 2009ء)۔ "Swiss black money can take India to the top"۔ Rediff.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2011ء۔
  2. "White Paper on Black Money" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Ministry of Finance, Government of India۔
  3. "Banking secrecy spices up Indian elections"۔ SWISSINFO - A member of Swiss Broadcasting Corporation۔ 14 مئی 2009ء۔