تبادلۂ خیال:شیخ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

اے ڈی میکلیگن ١٨٩٢ء کی مردم شماری کا افسر تها ـ اس نے آپنے پیش رؤ حضرات ی تحقیق کی روشنی میں اور آپنے تجربے سے ایک کتاب لکهی تهی ـ

A Glossary of the tribes and castes of punjab and north west frontier porvinces.

اس کتاب میں اے ڈی مکلیگن صاحب نے گوتوں کے رسم رواج اور عادات کے متعلق بهی لکها هے ـ اس کتاب کو ذاتوں کا انسائکلوپیڈیا کے نام سے ارود میں ایچ اے روز صاحب نے ترجمه کیا ہے ـ آج کا موضوع هے شیخ ـ

17:26, 12 نومبر 2006 (UTC)خاورkhawar

Khawar Sahib[ترمیم]

Aslam-Alakum It is difficult for me to type in Urdu. For my short articles I have to arrange somebody else to write. Anyhow Your article "Shaikh" forced me to write some words about it. I think the cast system belongs to Hindus and even in Hindus it is the thing of the past. So it is very strange to write about casts in the 21st century. And degrading human beings just because they work and respecting some groups just because they are exploiting these working groups.

I dont use my cast because feel only those people use it who personally have no plus points. If I am good and nice and hardworking I have noo need of going into 200 years ago and getting help from my cast.

I feel your article disturbing as it is not giving proper honour to those who are working people Perhaps you know How can a muslim group or cast be honourable even if the group is responsible forthe creation of Israel, the defeat of Tipu Sultan/ Serrengapettem , Srajudola/Pellasi start of martial law in pakistan and even the present biggest law breaker of Pakistan Pervaiz Musheref belongs to that group.

Your article has thrown me into feudal age.

What is the criterion of honour? work or selling of your nation cheaply???.

Khalid mahmood

جناب خالد صاحب ذات پات گے متعلق آپ کے خیالات هی ایک معقول ذہن کے خیالات هو سکتے هیں ـ میں بهی آپ سے متفق هوں یه ذات پات کی پاتیں واقعی ہندو معاشرے کی باتیں هیں ـ لیکن یہاں اس پات کو ای ڈی میکلیگن صاحب کی کتاب سے نقل کر نے کا مقصد کسی کی دل آزاری نہیں ہے بلکه صرف اور صرف انسائکلوپیڈیا کی معلومات میں اضافے کے لئے هے ـ آهسته آهسته جب یه کتاب یہاں نقل هو جائے گی تو آپ بهی میری طرح محسوس کریں گے که قیام پاکستان کی مہربانی سے ذاتوں کی بنیاد پر بنی هوئي رسمیں اور روایات ختم هوتي جا رہي هیں اور هم لوگ ایک قوم پاکستانی قوم کی طرح بنتے جارہے هیں ـ

اس تبادله خیال میں دوستوں کی آراءکا انتظار رہے گا ـ

20:42, 13 نومبر 2006 (UTC)خاورkhawar

اس مضمون کی ابتداء میں یہ یادآوری سطر درج کردی جاۓ تو مناسب ہے

  • اسلام میں اونچ نیچ اور ذات پات کا کوئی تصور نہیں، مضامین کا یہ سلسلہ صرف تاریخی اور حوالاجاتی حیثیت رکھتا ہے۔ (انتظامیہ اردو ویکیپیڈیا