جانوروں کا استحصال

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کارلاس لاٹوف کا ایک کارٹون جس کی رو سے جانوروں پر کیے جانے والے تجربے بھی بے رحمی کے دائرے میں آتے ہیں۔

جانوروں کا استحصال، جانوروں سے بے رحمی، جانوروں سے غفلت یا جانوروں سے سخت رویہ مختلف مگر ہم معنی الفاظ ہیں جو کسی جانور کے ساتھ ظلم محض غلفت کی وجہ سے (مثلًا اسے بغیر دیکھ ریکھ چھوڑ دینا) یا بہ طور خاص عتابی رویے کی وجہ سے (مثلًا بے جا مار پیٹ، ایک جانور کی موجود میں دوسرے جانور کو ذبح کر کے اسے اذیت پہنچانا) ہوتی ہے۔

جانوروں کے ساتھ ناروا رویے پر دنیا کے مختلف ممالک قوانین بھی بنا چکے ہیں۔ تاہم اس جرم کی زیادہ سے زیادہ سزا ضرف چھ ماہ قید ہے۔[1] یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ کئی جگہوں پر انسداد بے رحمی حیوانات کا محکمہ موجود تو ہے، مگر وہ زیادہ فعال نہیں ہے اور عام شہری اس ادارے کی موجودگی ہی سے بے خبر ہیں۔[2] جانوروں کے ساتھ سخت رویہ اپنانے کی وجہ یہ بھی ہے کہ لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ رحمت و شفقت کا دائرہ صرف انسانوں تک محدود ہے۔ عوام اس بات سے ناواقف ہے کہ ہر جاندار اور حساس مخلوق تک رحم اور حسن سلوک کے معاملے کو وسعت دی گئی ہے۔[3] مذہبی حلقوں کے بر عکس ملحد لوگ جانوری کی قربانی تک دینے تک ناقابل قبول سمجھتے ہیں کیوں کہ اس سے جانوروں پر بے رحمانہ رویہ اپنایا جاتا ہے۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

مزید مطالعات[ترمیم]

  • Arluke, Arnold. Brute Force: Animal Police and the Challenge of Cruelty, Purdue University Press (15 August 2004), hardcover, 175 pages, ISBN 1-55753-350-4. An ethnographic study of humane law enforcement officers.
  • Lea, Suzanne Goodney (2007). Delinquency and Animal Cruelty: Myths and Realities about Social Pathology, hardcover, 168 pages, ISBN 978-1-59332-197-0. Lea challenges the argument made by animal rights activists that animal cruelty enacted during childhood is a precursor to human-directed violence.
  • Munro H. (The battered pet (1999) In F. Ascione & P. Arkow (Eds.) Child Abuse, Domestic Violence, and Animal Abuse. West Lafayette, IN: Purdue University Press, 199–208.

Fiber-Ostrow, Pamela, Lovell, Jarret S. (2016) behind a veil of secrecy: animal abuse, factory farms, and Ag-Gag legislation. Contemporary Justice Review [online]. 19(2), 230 – 249.

بیرونی روابط[ترمیم]