سائنس اور ٹیکنالوجی میں قابل ذکر پاکستانی خواتین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ثانیہ نشتر[ترمیم]

ثانیہ نشتر ایک پاکستانی معالجہ مراض قلب اور مصنفہ ہیں جو وفاقی وزیر ، اور بی آئی ایس پی چیئرپرسن کی حیثیت سے وزیر اعظم پاکستان کے لئے غربت کے خاتمے اور سماجی تحفظ سے متعلق موجودہ معاون ہیں۔ [1]

نرگس مالوالہ[ترمیم]

ایک پاکستانی نژاد امریکی ماہر طبیعات جو 2015 میں کشش ثقل کی لہروں کا پتہ لگانے میں اپنی پیشرفت کی تحقیق کے لئے جانی جاتی تھیں [2] [3] انہیں 2010 میں مکر آرتھر فاؤنڈیشن ایوارڈ بھی ملا ہے [4]نرگس 2020 میں ایم آئی ٹی میں اسکول آف سائنس کی پہلی خاتون ڈین بن گئیں۔[5] [6]

تسنیم زہرہ حسین[ترمیم]

ایک نظریاتی طبیعیات دان اور کچھ پاکستانی خواتین میں سے ہیں جنہوں نے طبیعیات میں ڈاکٹریٹ کی سند حاصل کی[7] [8] وہ سٹرنگ تھیوری پر کام کرنے والی پہلی پاکستانی خاتون بھی ہیں۔ تسنیم حسین نے جرمنی کے لنڈا میں نوبل انعام یافتہ افراد کی میٹنگ میں پاکستان کی نمائندگی بھی کی ہے اور پیرس میں ورلڈ ایئر فزکس (WYP) لانچ کانفرنس میں پاکستانی ٹیم کی رہنمائی کی ہے۔ [9] [10]

عاصمہ ظہیر[ترمیم]

کمپیوٹر سائنس دان اور پہلی پاکستانی خاتون ہین جنھوں نے "IBM کا بہترین ایوارڈ ، 2019" حاصل کیا۔ [11]

عذرا قریشی[ترمیم]

وہ نباتیات کی ماہر تھیں جنھیں پاکستان میں آلو کی پیداوار میں 5 فیصد اضافے کا سہرا دیا جاتا ہے۔ [12] انھوں نے تجارت میں پاکستان کی پوزیشن کو بہتر بنایا انہیں 1997 میں نارمن بورلاگ ایوارڈ سے نوازا گیا۔ [13] [14]

ارفع کریم[ترمیم]

وہ ایک کمپیوٹر پروگرامر تھیں جو 2004 میں مائیکرو سافٹ کے مصدقہ پروفیشنل بننے والی کم عمر ترین شخصیت بن گئیں۔ [15] [16] بل گیٹس نے انہیں ذاتی طور پر امریکہ میں مائیکرو سافٹ کے صدر دفتر میں مدعو کیا تھا۔ ارفع کا نام عالمی ریکارڈوں کی گینز بک میں بھی شامل تھا۔[17] [18]

مریم سلطانہ

ایک فلکی طبیعیات ہیں۔ 2012 میں پی ایچ ڈی کرنے کے بعد وہ پاکستان میں پہلی خاتون فلکیاتی ماہر بن گئیں۔[19] [20]

طلعت شہناز رحمٰن

ایک کنڈینسڈ مادہ فزیک ہیں۔ ان کے تحقیقی عنوانات میں سطحی مظاہر اور پرجوش میڈیا شامل ہے ، بشمول کاتالیسس ، کمپن حرکیات ، اور مقناطیسی اخراج۔ [21] [22]

ابان مارکرکبراجی[ترمیم]

پارسی نژاد ماہر حیاتیات اور سائنس دان ہیں۔ وہ IUCN کے ایشیاء علاقائی دفتر ، بین الاقوامی یونین برائے تحفظ برائے فطرت کی علاقائی ڈائریکٹر ہیں۔[23] [24] ماحولیاتی تحفظ ، پائیدار ترقی اور فطرت کے تحفظ کی وجوہ کے لئے نمایاں شراکت ہیں اور انھیں اس لگن کے لئے تمغہ امتیاز سے نوازا گیا[25] [26] ۔

آصفہ اختر[ترمیم]

ایک ماہر حیاتیات ہیں جو کروموسوم کے شعبے میں کام کرتی ہیں۔[27] وہ جرمنی کی مائشٹھیت میکس پلانک سوسائٹی میں حیاتیات اور طب طبقہ کی پہلی بین الاقوامی خاتون نائب صدر بن گئیں۔ [28] [29] آصفہ کو یورپی لائف سائنس آرگنائزیشن (ای ایل ایس او) ایوارڈ سے بھی نوازا گیا ہے۔[30] [31]

فرزانہ اسلم[ترمیم]

وہ ایک طبیعیات اور ماہر فلکیات ہیں۔ انھوں نے سیمی کنڈکٹر نانو پارٹیکلز ، فوٹوون اور لیزر سائنس سے حساس پولیمر مرکب کے شعبے میں کام کیا ہے [32] ان کی شراکت کے لئے ، فرزانہ کو گلاسگو میں انسٹی ٹیوٹ آف فزکس کے زیر اہتمام فوٹوون 04 کانفرنس میں ایک تعریفی ایوارڈ سے نوازا گیا۔[33] [34]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Kundi، Imran Ali. "Dr Sania Nishter appointed as BISP chairperson". The Nation. مورخہ 2018-11-23 کو اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 2020-12-07. 
  2. "MIT Department of Physics". web.mit.edu. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  3. "Nergis Mavalvala named School of Science dean". MIT News | Massachusetts Institute of Technology (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  4. "Nergis Mavalvala: inspiration for all Pakistanis". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  5. Dawn.com (2020-08-18). "Pakistan-born astrophysicist Nergis Mavalvala named dean of MIT School of Science". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  6. "Nergis Mavalvala | Albright Institute". www.wellesley.edu. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  7. "Tasneem Zehra Husain PD". Institute for Cross Disciplinary Engagement At Dartmouth (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  8. "Meet Dr Tasneem Husain – Pakistan's first woman string theorist | SAMAA". Samaa TV (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  9. Sarwar، Mahrukh (2016-12-02). "Inside the life of Pakistan's first female string theorist". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  10. "Pakistani woman scientist Asma Zaheer honoured with IBM's highest award". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). 07 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 نومبر 2020. 
  11. "Pakissan.com; Tissue culture: a getaway to genetic engineering". www.pakissan.com. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  12. PARC. "Azra Quraishi". 
  13. pakbs. "Pakistan journal of Botany - Azra Quraishi". 
  14. "Remembering Arfa Karim: a computer prodigy". The Nation (بزبان انگریزی). 2020-01-14. 20 مارچ 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  15. "Arfa Karim passes away: Whiz kid loses battle for her life". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2012-01-14. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  16. "Arfa Randhawa death: Pakistan mourns IT girl genius". BBC News (بزبان انگریزی). 2012-01-18. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  17. "Arfa Karim | Pakistan Today" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  18. "First Pakistani woman to earn PhD in astrophysics fought red tape". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2012-07-27. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  19. Siegel، Ethan (2015-09-03). "Throwback Thursday: Pakistan's First Female Astrophysics Ph.D.". Medium (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  20. "Professor Talat S. Rahman | Department of Physics | University of Central Florida". physics.ucf.edu. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  21. researchgate. "Talat Rahman". 
  22. "Perspectives on Pakistan from Asia Regional Director Aban Marker Kabraji". IUCN (بزبان انگریزی). 2018-08-14. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  23. "Aban Marker Kabraji | Al Jazeera News". www.aljazeera.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  24. "IUCN Asia Regional Director nominated for prestigious Pakistan Civil Award". IUCN (بزبان انگریزی). 2018-03-19. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  25. "Aban Marker-Kabraji Conferred Tamgha-i-Imtiaz Award". Zoroastrians.net (بزبان انگریزی). 2018-03-17. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  26. "Asifa Akhtar interview | Abcam". www.abcam.com. 13 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  27. Desk، Monitoring (2020-07-15). "Pakistan-born scientist becomes first woman to head section at renowned body". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  28. "Pak scientist gets rare honour in Germany". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  29. "Professor Asifa Akhtar". www.feldbergfoundation.org. 17 ستمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  30. "Making history, Pakistan born Asifa to lead biology, at Max Planck Society". Technology Times (بزبان انگریزی). 2020-07-11. 30 اکتوبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  31. "Dr Farzana Aslam - Coventry University". web.archive.org. 2011-02-18. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  32. "GIFT University". www.gift.edu.pk. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020. 
  33. "Search for people | The University of Manchester". personalpages.manchester.ac.uk. اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2020.