سونی بل ولیمز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Sonny Bill Williams
Sonny Bill Williams 2010.jpg
سونی بل ولیمز 2010 میں
پیدائش3 اگست 1985ء (عمر 37 سال)
آکلینڈ, New Zealand
لمبائی191 سینٹی میٹر (6 فٹ 3 انچ)[1]
وزن108 کلوگرام (238 پونڈ؛ 17 سنگ 0 پونڈ)[1]
اسکولMount Albert Grammar School
رگبی لیگ میں پیشہ وری
سینئر کیریئر
سال ٹیم ایپس (پؤانٹس)
2004–08 Canterbury Bulldogs 73 (124)
Rugby union career
All Black No. 1108
Senior career
Years Team Apps (Points)
2008–10 Toulon 33 (30)
2010–11 Canterbury 7 (20)
2011 Crusaders 15 (25)
2012–15 Chiefs 28 (30)
2012 Panasonic Wild Knights 7 (10)
2014–19 Counties Manukau 3 (0)
2017–19 Blues 18 (5)
Correct as of 30 August 2019
National team(s)
Years Team Apps (Points)
2010–19 New Zealand 58 (65)
Correct as of 2 November 2019

سونی بل ولیمز(پیدائش 3 اگست 1985) نیوزی لینڈ کے ہیوی ویٹ باکسر، اور سابق پیشہ ور رگبی لیگ اور رگبی یونین کے کھلاڑی ہیں۔ وہ رگبی لیگ میں ملک کے لیے پہلی بار کھیلنے کے بعد رگبی یونین میں نیوزی لینڈ کی نمائندگی کرنے والے صرف دوسرے شخص ہیں، اور صرف 21 کھلاڑیوں میں سے ایک ہیں جنہوں نے دو بار رگبی ورلڈ کپ جیتا ہے۔ولیمز نے رگبی لیگ میں اپنے کیریئر کا آغاز کیا، اور کینٹربری-بینک ٹاؤن بلڈوگس اور سڈنی روسٹرز کے ساتھ، نیشنل رگبی لیگ (NRL) میں تین اسپیلز میں آٹھ سیزن میں دوسری قطار کے آگے کھیل چکے ہیں۔ اس نے نیوزی لینڈ (کیویز) کے لیے 12 کیپس جیتی ہیں اور 2004 میں روکی آف دی ایئر اور 2013 میں انٹرنیشنل پلیئر آف دی ایئر کے لیے RLIF ایوارڈز جیتے ہیں۔

2020 میں وہ سڈنی روسٹرز جانے سے پہلے، سپر لیگ میں ٹورنٹو وولف پیک کے لیے کھیلے۔ اسی سال. وہ سب سے پہلے 2010 میں رگبی یونین میں چلا گیا اور بنیادی طور پر فرانس میں ٹولن، کینٹربری، کاؤنٹیز مانوکاؤ، کروسیڈرز، نیوزی لینڈ میں چیفس اور بلیوز اور جاپان میں پیناسونک وائلڈ نائٹس کے لیے ایک مرکز کے طور پر کھیلا۔ اس نے نیوزی لینڈ (آل بلیک) کے لیے 58 کیپس جیتے، اور 2011 اور 2015 کے ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیموں کا حصہ تھے۔ اس نے نیوزی لینڈ کے لیے رگبی سیونز بھی کھیلے، 2015-16 ورلڈ رگبی سیونز سیریز اور 2016 کے اولمپکس میں حصہ لیا۔ وہ مارچ 2021 میں دونوں رگبی کوڈز سے ریٹائر ہوئے۔ ولیمز نے پیشہ ورانہ طور پر سات بار باکسنگ کی، اپنے تمام ہیوی ویٹ مقابلے جیتے۔ وہ نیوزی لینڈ پروفیشنل باکسنگ ایسوسی ایشن (NZPBA) ہیوی ویٹ چیمپئن اور ورلڈ باکسنگ ایسوسی ایشن (WBA) انٹرنیشنل ہیوی ویٹ چیمپئن تھے، لیکن چیلنجوں کا جواب دینے میں ناکام رہنے کے بعد ان سے یہ اعزاز چھین لیے گئے۔ولیمز ایک پہاڑ جیسے انسان ہیں جن کا قد چھ فٹ چار انچ اور وزن تقریباً 109 کلوگرام ہے۔ ان کی شخصیت پورے کمرے پر چھائی ہوئی نظر آتی ہے۔ لیکن ان کا نرم گو مزاج ان کے حجم سے بالکل مختلف ہے۔

ابتدائی دور[ترمیم]

ولیمز 3 اگست 1985ی کو آکلینڈ، نیوزی لینڈ میں پیدا ہوئے، ایک ساموائی باپ، Ioane ("John") ولیمز اور والدہ، Lee Woolsey جو آدھی نیوزی لینڈ کی ہیں اور آدھی آسٹریلوی ہیں۔ اس کا ایک بڑا بھائی، جان آرتھر، اور چھوٹی جڑواں بہنیں، نیل اور ڈینس ہیں۔ ولیمز ماؤنٹ البرٹ کے آکلینڈ کے مضافاتی علاقے میں ایک سرکاری گھر میں ایک محنت کش خاندان میں پلے بڑھے۔ اپنے خاندانی پس منظر کے بارے میں بتاتے ہوئے، ولیمز نے بعد میں کہا کہ پیشہ ورانہ رگبی لیگ کھیلنے کے ان کی کوشش میں "ڈرائیونگ فیکٹر" تھا "میرے پاس۔ ماں ایک گھر۔" اس نے اویراکا اسکول، ویزلی انٹرمیڈیٹ اور ماؤنٹ البرٹ گرامر اسکول میں تعلیم حاصل کی۔ بچپن میں اسے ایک "چھوٹا، پتلا سفید بچہ" قرار دیا گیا ہے جو "دردناک حد تک شرمیلا" تھا، ساتھ ہی "ایک عجیب کھیل کا ہنر، ایک مسابقتی سپرنٹر، ایک چیمپئن ہائی جمپر اور کراس کنٹری رنر اور وہ بچہ جو کھیلتا تھا۔ چیزوں کو بہتر بنانے کے لیے، اوپر کی عمر کے چند حصوں میں ٹیموں میں فٹ۔" ایتھلیٹکس میں ایک امید افزا مستقبل کے بارے میں بتائے جانے کے باوجود، ولیمز نے اسے اس وقت ترک کر دیا جب وہ تقریباً 12 سال کا تھا۔ اگرچہ ان کے والد رگبی لیگ کے ایک ماہر کھلاڑی تھے، ولیمز نے کہا ہے کہ یہ ان کی والدہ تھیں جنہوں نے انہیں اس کھیل سے متعارف کرایا تھا۔

سونی بل ولیمز کا قبول اسلام[ترمیم]

ولیمز کو اسلام قبول کیے ہوئے دس سال ہو چکے ہیں۔ یہ ان دنوں کی بات ہے جب وہ فرانس میں تولان کی طرف سے کھیلتے تھے اور اپنی زندگی کے ایک بالکل مختلف دور سے گزر رہے تھے۔ جہاں وہ اب ہیں اس وقت وہ اس کی دوسری انتہا پر تھے۔رگبی یونین میں پانچ سال گزارنے کے بعد رگبی لیگ میں واپسی پر سپر لیگ میں شامل ہونے والے کلب ٹورنٹو وولف پیک کے ساتھ معاہدہ کرنے پر ولیمز اپنی زندگی سے مطمئن ہیں۔شمالی امریکی ٹیم کے جنرل مینیجر چار مختلف مقابلوں میں ولیمز کی کامیابیاں گنوانا شروع کرتے ہیں جن میں نیوزی لینڈ کی طرف سے دو ورلڈ کپ، سنہ 2016 کے اولمپکس، کئی نیشنل رگبی لیگز میں اعزازات اور نیوزی لینڈ کے ہیوی ویٹ باکسنگ کا اعزاز شامل ہیں۔ 34 سالہ ولیمز لندن کے آرسنل کے ایمیریٹس سٹیڈیم میں ایک تعارفی پریس کانفرنس میں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو انگریزی، عربی اور ساموئن زبانوں میں خوش آمدید کہنے کے بعد آدھے گھنٹے تک ان کے سوالوں کے جوابات دیتے رہتے ہیں اور رگبی کی تاریخ کے سب سے مہنگے کھلاڑی بننے اور اپنے ساتھی کھلاڑیوں کی عزت حاصل کرنے پر انکساری کے بارے میں بات کرتے ہیں[2]

اللہ سے سب امیدیں[ترمیم]

صبح کے چھ بج رہے تھے، لندن کے ایک ہوٹل میں سونی بل ولیمز فجر کی نماز ادا کرنے کے بعد ابھی جائے نماز پر ہی بیٹھے ہوئے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’جب میں دعا کے لیے ہاتھ بلند کرتا ہوں تو کہتا ہوں یااللہ میری رہنمائی فرما، مجھے استقامت عطا فرما، مجھے بہتر انسان بنا اور بہتر شخص بنا۔‘ ’مجھے اپنی کمزوریوں کا علم ہے لیکن مجھے ہمت دے۔ میرے گناہ معاف فرما۔ یااللہ میرے عزیزوں اور قریبی لوگوں پر رحمت فرما۔ انھیں محفوظ رکھ، خاص طور پر بچوں کو۔ ہمیں اپنے قدموں پر مستحکم رکھ اور ہم جو ہیں اس پر تیرے شکر گزار ہیں۔انھوں نے کہا کہ ’الحمد اللہ کا مطلب سب کچھ ہے۔‘ پانی کا گلاس پینا الحمد اللہ۔ آپ سے بات کرنے کا موقع ملنا الحمد اللہ۔ بیوی اور بچوں سے ملنا الحمد اللہ۔ میرا خالق ہمیشہ میرے ذہن میں رہتا ہے[3]

کبھی کبھار میں اپنا سر سجدے میں رکھتا ہوں کیونکہ میں جانتا ہوں کہ حضرت عیسیٰ، حضرت موسیٰ اور پیغمبر اسلام اسی حالت میں رہتے تھے۔میں لڑکیوں کے پیچھے جاتا تھا۔ میں شراب نوشی کرتا تھا۔ شاہ خرچیاں کرتا تھا اور اپنے آپ کو بہت کچھ سمجھتا تھا جو میں نہیں تھا۔ میں نے وہ زندگی گزاری اور میرا تجربہ یہ ہے کہ مجھے کیا ملا؟ دل میں ایک خلا اور ہلکا پن۔

مسلمان ہونے پر شرمندہ نہیں[ترمیم]

ولیمز گذشتہ ماہ انگلینڈ کے خلاف ورلڈ کپ سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کی شکست کے بعد اپنے ساتھی مسلمان کھلاڑی اوفا تونگافاسی کے ساتھ دعا کرتے دیکھے گئے اپنے ساتھی کھلاڑیوں سے پہلی مرتبہ مانچسٹر میں ملنے والے ولیمز کا کہنا تھا کہ اس سارے سلسلے میں چند سال لگے لیکن انھیں اللہ مل گیا، اسلام مل گیا اور انھیں اپنی زندگی میں مثبت تبدیلی لانے کا موقع ملا۔ ولیمز نے کہا کہ ایک اور مایہ ناز مسلمان کھلاڑی کے ’حقیقی پیار‘ کی طرح کا کوئی احساس نہیں ہو سکتا۔ فیورنٹیا فٹ بال کلب کے وِنگر، فران ربری ایسے شخص ہیں جن سے وہ سوشل میڈیا پر رابطے میں رہتے ہیں جب کہ وہ جنوبی افریقہ کی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور بلے باز ہاشم آملا سے بھی ’بہت قریب‘ ہیں[4]

آج کل کی دنیا میں یہ کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں کہ ہم جیسے بہت سے مسلمانوں کو مسلمان ہونے پر شرمندہ ہونے پر مجبور کیا جاتا ہے۔‘مجھے مسلمان ہونے، اس کی صداقت اور سچائی، یہ جن چیزوں کا پرچار کرتا ہے اور جو کچھ یہ دیتا ہے، اس سب پر فخر ہے۔ میں جب دوسرے کھلاڑیوں کو دیکھتا ہوں جو فخر محسوس کرتے ہیں (تو میں سوچتا ہوں) واہ، یہ کتنی خوبصورت بات ہے۔

نم زدہ آنکھوں کے ساتھ پیغام[ترمیم]

نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں ایک مسجد پر حملے میں 51 افراد کی ہلاکت کے بعد ولیمز نے سوشل میڈیا پر ایک نم زدہ آنکھوں کے ساتھ پیغام جاری کیا جس میں انھوں نے اپنے دلی صدمے کا اظہار کیا اور دعا کی کہ مرنے والوں کو اللہ جنت نصیب کرے۔ اس واقعے کے ایک ہفتے بعد ولیمز نے شہر کا دورہ کیا اور کمیونٹی کے لوگوں سے ملاقات اور اظہارِ یکجہتی کیا۔ انھوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ میں سب سے مشہور اور معروف مسلمان ہونے اور اس وقت قومی رگبی ٹیم آل بلیکس کا رکن ہونے کے ناطے یہ میرا فرض تھا۔

چیدہ چیدہ[ترمیم]

  • میں کافی شرمیلا ہوں لیکن مجھے اس کا سامنا کرنا تھا اور مجھے معلوم تھا کہ میں اس جگہ پر کافی پریشان رہوں گا۔ لیکن میں نے حوصلہ کیا اور نہ صرف مسلمان کمیونٹی کی نمائندگی جو صدمے کا شکار تھی بلکہ پورے نیوزی لینڈ کی نمائندگی کی۔
  • نیوزی لینڈ کے شہری ہونے کے ناطے ہم نے وہ کیا اور اب ہم اس حوالے سے رہنمائی کر رہے ہیں اور میں یہ کہنے میں فخر محسوس کرتا ہوں کہ میں اس کا حصہ ہوں۔'
  • اپنے شاندار کریئر میں اب وہ ایک نئے موڑ کی طرف بڑھ رہے ہیں اور اپنے ملک سے نو ہزار میل دور وہ اپنی اس نئی زندگی کے بارے میں کیا سوچتے ہیں اور وہ کسی طرح یاد رہنا چاہیں گے؟
  • یہ نیا موقع ملنے پر میں انتہائی شکر گزار ہوں اور انکساری محسوس کرتا ہوں۔ ایک کھلاڑی کی حیثیت سے میرے لیے یہ ایک بہترین موقع ہے۔ یہ ٹھیک ہے کہ مجھ پر بہت دباؤ ہے لیکن کسی کھلاڑی کے لیے کچھ حاصل کرنے کا اس سے اچھا کون سا طریقہ ہو سکتا ہے؟‘
  1. ^ ا ب http://stats.allblacks.com/asp/Profile.asp?ABID=1108
  2. https://www.bbc.com/urdu/sport-50437561
  3. https://www.bbc.com/urdu/sport-50437561
  4. https://www.bbc.com/urdu/sport-50437561