قلم کا تصور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ازقلم:ابوالوقارسید صابر اشرف جیلانی

قلم اخلاقی، سیاسی، معاشرتی ،معاشی فکر کو زندہ رکھنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔اسی لیے دنیامیں کسی بھی شعبے سے تعلق رکھنے والے کا رابطہ قلم سے یا اہلِ قلم سے ضرور ہوتا ہے۔انسان کی زندگی اور تمام معلومات کی ترقی قلم کے تصور سے بہت سی کامیابیاں سمیٹنے لگی ہے۔یہ وہ حقیقت ہے کہ جس پر سے پردہ خود قرآن میں خالقِ کائنات نے اُٹھایا ہےاوراس کی طاقت کو ہرزمانے نے واضح کیاہے۔قوم کی ترقی،خوشحالی اور کامیابی کے لیے بڑے بڑے لوگوں نے قلم کے تصور کو یقینی بنایاکیونکہ وہ جانتے تھے کہ اِس کی روشنائی کا فائدہ صرف اُس زمانے تک نہیں بلکہ ہر زمانے تک ،ہر نسل تک پہنچ جاتاہے۔یہ ربِ کائنات کا کرم ہے کہ قلم سے تعلق رکھنے والےہرشخص کی سوچ وسعت و نکھار رکھتی ہے۔آپ نے کبھی یہ سوچا کہ قلم کا تعلق صرف انسان سے کیوں ہے؟؟؟جانوروں سے اور دوسری مخلوقات سے کیوں نہیں ہے؟؟تو جواب یہی ملےگا کہ دوسری تخلیقات میں ترقی نہیں،شیر جو جنگل کا بادشاہ ہے جس طرح ہزاروں سال پہلےشکار کرتا تھا آج بھی اُسی طرح زندگی گزاررہاہے۔گدھا جس طرح ہزاروں سال پہلے تھا آج بھی اُسی طرح زندگی کی مشقتیں برداشت کررہا ہے۔کوئی تبدیلی نہیں،کوئی ترقی نہیں لیکن ہزاروں سال پہلے کے انسان میں اورآج کے انسان میں بہت سے فرق نظرآئیں گے۔قلم سے تعلق رکھنے والا اپنی بہت سی صلاحیتوں میں اضافہ کرتا ہے اور صرف خود ترقی نہیں کرتابلکہ جو اُس سے تعلق رکھے والےہرشخص کو ترقی کی راہیں دکھادیتاہےاوراُس ترقی کا فائدہ اُسے ضرور پہنچتا ہے۔