قیس فریدی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
قیس فریدی
ادیب
پیدائشی ناممرید حسین
قلمی نامقیس فریدی
ولادتدسمبر 1950ء خانپور
ابتدارحیم یار خان، پاکستان
وفاتخانپور (پنجاب)
اصناف ادبشاعری
ذیلی اصنافغزل، سرائیکی
تعداد تصانیفسات
تصنیف اولصفتاں حضور دیاں
تصنیف آخرپرکھرا
معروف تصانیفصفتاں حضور دیاں،نمرو ، توں سورج میں سورج مکھی ،آم شام ، دیوانِ فرید ، ارداس ، پرکھرا
ویب سائٹ/ آفیشل ویب سائٹ

قیس فریدیسرائیکی، پنجابی اور اردو کے معروف شاعر ہیں۔

نام[ترمیم]

قلمی نام قیس فریدی جبکہ اصل نام مرید حُسین ہے۔

ولادت[ترمیم]

قیس فریدی کی پیدائش دسمبر 1950ء خانپور(پنجاب) , پاکستان میں ہوئیَ۔

تصانیف و تالیف[ترمیم]

  • صفتاں حضور دیاں (نعتیہ شاعری)
  • نمرو (سرائیکی شاعری)
  • توں سورج میں سورج مکھی (سرائیکی شاعری)
  • آم شام (سرائیکی شاعری)
  • دیوانِ فرید
  • ارداس
  • پرکھرا (سرائیکی شاعری)

نمونہ اُردو شاعری[ترمیم]

  • ہم یوں تمہارے پاؤں پہ اے جانِ جاں گرے
  • جیسے کسی غریب کا خستہ مکاں گرے
  • مانا کہ اے ہوا تُو نہیں گن سکی مگر
  • دیکھا تو ہوگا پات کہاں سے کہاں گرے
  • پہلے ہی زخم زخم ہے دھرتی کا انگ انگ
  • پھر کیا ضرور ہے کہ یہاں آسماں گرے
  • یُوں صحنِ تیرگی میں پڑی چاند کی کرن
  • جیسے خموش جھیل میں سنگِ گراں گرے
  • ہم قیسؔ، اپنی بھوک مٹانے کے واسطے
  • صیّاد کا تھا جال جہاں پر وہاں گرے

نمونہ سرائیکی شاعری[ترمیم]

  • نندراں کیا آون ہر پاسوں
  • چوریں دا دڑکا ہے بچڑا[1]

حوالہ جات[ترمیم]