نکولو مکیاویلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نکولو مکیاویلی
(اطالوی میں: Niccolò di Bernardo dei Machiavelli ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Ridolfo del Ghirlandaio 001.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 3 مئی 1469[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فلورنس[1][3]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 21 جون 1527 (58 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فلورنس[4][5]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات ورمِ صفاق  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ مصنف،  سیاست دان،  مؤرخ،  فلسفی،  عسکری نظریہ ساز،  مترجم،  شاعر،  سفارت کار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اطالوی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل فلسفہ  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں دی پرنس  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
Machiavelli Signature.svg
 
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

یورپ کا ممتاز سیاسی مفکر نکولو مکیاویلی 3 مئی 1459ء کو اٹلی کے شہر فلورنس (فیرنزے) میں پیدا ہوا۔ اس کا باپ متوسط طبقے مگر اشراف کے گھرانے سے تھا اور وکالت کرتا تھا۔ مکیاویلی کا دور دراصل یورپی ممالک کی باہمی رقابت، محلاتی سازشوں اور سیاسی تبدیلیوں کا ہے۔ اس کے دور اندیش اور حساس ذہن نے ان سب کا زبردست اثر قبول کیا۔ اس نے سیاسیات پر اپنے تاثرات کو عقلیت کی کسوٹی پر پرکھ کر ریاست کے عروج و زوال کے اسباب بیان کیے اور1513ء میں (Il Principe) ’’بادشاہ‘‘ جیسی یگانہ روزگار کتاب لکھی۔

بنیادی نظریات[ترمیم]

اپنی تحریروں میں مکیاویلی نظریہ جبر کا قائل نظر آتا ہے۔ وہ اس بات سے انکاری ہے کہ ریاست کا مقصد نیکی یا آذادی کا حصول ہے۔ وہ سیاسی مصلحتوں، سازشوں اور منافقت کو کامیاب ریاست کے اصول قرار دیتے ہوئے نہیں شرماتا۔ عرصے تک مکیاویلی کے نظریات اسی باعث حکمائے سیاست و کلیساء کی نفرت کا نشانہ بنے رہے۔ یورپ کی نشاۃ ثانیہ میں مکیاویلی کے بے لاگ اور تلخ حقیقتوں پر مبنی تحریروں کا بڑا ہاتھ ہے۔ دراصل اسی نے علم سیاسیات کو عملی بنیادوں پر وضع کیا۔1527ء میں اس فطین سیاسی حکیم کا فلورنس میں انتقال ہوا۔

اہم تصانیف[ترمیم]

  • بادشاہ
  • مقالات
  • تاریخ فلورنس
  • فن جنگ
  • ریاست کا مقصد

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Encyclopædia Britannica — اخذ شدہ بتاریخ: 13 نومبر 2020 — مصنف: Andrew Bell — جلد: 22 — ناشر: Encyclopædia Britannica Inc.
  2. Enciclopedia Treccani — اخذ شدہ بتاریخ: 13 نومبر 2020 — ناشر: اطالوی دائرۃ المعارف ادارہ
  3. Enciclopedia Treccani — اخذ شدہ بتاریخ: 13 نومبر 2020 — ناشر: اطالوی دائرۃ المعارف ادارہ
  4. Encyclopædia Britannica — مصنف: Andrew Bell — جلد: 22 — ناشر: Encyclopædia Britannica Inc.
  5. Enciclopedia Treccani — ناشر: اطالوی دائرۃ المعارف ادارہ

بیرونی روابط[ترمیم]