چشمک زنی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Gale Henry، 1919

چشمک زنی یا آنکھ مچکانا چہرہ سے کسی بات کے اظہار کرنے کا ایک مقبول طریقہ ہے جو ایک لمحہ کے لیے دائیں یا بائیں آنکھ کو بند کرکے انجام دیا جاتا ہے۔[1][2][3] ابلاغ کی اس شکل میں عام طور سے پوشیدہ معلومات اور اشارے شامل ہوتے ہیں، کبھی کبھی اس میں جنسی ترغیب کا پہلو بھی موجود ہوتا ہے۔

مفاہیم[ترمیم]

خفیہ اشارے یا معلومات کا تبادلہ[ترمیم]

آنکھ مچکانے کا عمل عموماً دو شخصوں کے درمیان کسی پیغام کے تبادلہ کے لیے کیا جاتا ہے اس طور پر کہ تیسرا شخص اسے نہ سمجھ سکے۔ مثال کے طور پر زید نے عمرو کے تعلق سے کوئی جھوٹی بات کہی، پھر وہ کسی تیسرے شخص کو آنکھ مچا کر اصل معاملہ کی وضاحت کر دیتا ہے، بسا اوقات تیسرا شخص بھی عمرو کے خلاف اس معاملہ میں شریک ہوتا ہے۔ کبھی کبھی آنکھ مچکانے کا عمل اس وقت بھی کیا جاتا ہے جب کسی شخص کو یہ بتانا مقصود ہو کہ فی الحال جاری گفتگو ایک مذاق ہے تاکہ وہ اس بات کو سنجیدگی سے نہ لے۔

رضا مندی[ترمیم]

کبھی کبھی یہ عمل دوستی، حوصلہ افزائی اور اعتماد جیسی لطیف تعبیرات کے اظہار کے لیے ہوتا ہے، خاص طور سے جب آنکھ مچکانے والا شخص یہ چاہتا ہو کہ کسی خاص موقف میں اطمینان اور اتفاق کا اظہار کرے تو چشمک زنی سے اس کا اظہار کر دیتا ہے۔

دعوت عشق[ترمیم]

نیز آنکھ مچکانے کا عمل بعض ثقافتوں میں جنسی دعوت یا عشق و معاشقہ کے اظہار کے لیے بھی کیا جاتا ہے، عام طور سے معاشقہ کی چشمک زنی میں اگر رضا مندی ہو تو ہلکی سی مسکراہٹ بھی شامل ہوتی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Non-verbal communication"۔ Erc.msh.org۔ مورخہ 01 april 2016 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2008-02-04۔ Check date values in: |archivedate= (معاونت)
  2. "Ronaldo: I put my country first", Evening Standard, accessed 2009-28-12
  3. "I, Robot"۔ IMDb.com۔ 16 جولا‎ئی 2004۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 دسمبر 2016۔