ہرمز اول

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہرمز اول
HormizdICoinHistoryofIran.jpg 

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش صدی 3  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات سنہ 273 (22–23 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Derafsh Kaviani flag of the late Sassanid Empire.svg ساسانی سلطنت  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد شاپور اول  ویکی ڈیٹا پر والد (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
خاندان خاندان ساسان  ویکی ڈیٹا پر خاندان (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
ساسانی سلطنت کا بادشاہ   ویکی ڈیٹا پر منصب (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دفتر میں
مئی 270  – جون 271 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png شاپور اول 
بہرام اول  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
دیگر معلومات
پیشہ مقتدر اعلیٰ  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ہرمز اول ساسانی سلطنت کا تیسرا شہنشاہ تھا۔ وہ شاہپور اول کا بڑا بیٹا تھا۔ اس کو باپ نے اپنے عہد حکومت میں ولی عہد منتخب کر دیا تھا۔ اس کا دور حکومت ایک سال یا دو سال سے کم پر مشتمل تھا۔

ولی عہدی[ترمیم]

ہرمز اول اپنے والد شاہپور اول کے دور حکومت کے دوران خراسان کا گورنر تھا۔ اس نے خراسان میں ایک بہت بڑی فوج تیار کی ہوئی تھی۔ جب اس فوج کی خبر جب ایران میں پہنچی تو لوگوں نے شاہپور اول کو کہا کہ تمہارے بیٹے ہرمز نے فوج تیار کر رکھی ہے اور وہ تمہارے خلاف بغاوت کی تیاریاں کر رہا ہے۔ ہرمز اول کو جب بغاوت متعلق باتوں کی خبر ہوئی تو اس نے اپنا ایک ہاتھ کاٹ کر اپنے والد شاہپور کے پاس بھیج دیا۔ ایرانی قانون کے مطابق جس شخص کے اعضا یا جسم میں کوئی نقص ہوتا تو اسے بادشاہ نہیں بننے دیا جاتا۔ شاہپور کے پاس جب وہ ہاتھ پہنچا تو اس نے اپنے والد اردشیر بکاں کی روح کی قسم کہا کر ہرمز کو لکھا کہ اگر تم جسم کو پارہ پارہ بھی کر دو تو تب بھی میں ضرور اپنے بعد ملک کی حکمرانی تمہارے ہی سپرد کروں گا۔ چنانچہ شاہپور اول نے ہرمز اول کو اپنا ولی عہد نامزد کر دیا۔

تخت نشینی[ترمیم]

ہرمز اول کے والد شہنشاہ شاہپور اول نے 272ء میں وفات پائی۔ چونکہ شاہپور نے اپنے عہد حکومت میں ہی ہرمز کو ولی عہد مقرر کر دیا تھا اس لیے وہ 272ء میں شاہپور اول کے جانشین کے طور پر تیسرے ساسانی شہنشاہ کے طور پر تخت نشین ہوا۔

وزرا و امرا[ترمیم]

ہرمز اول نے اپنے والد شہنشاہ شاہپور کے دور حکومت کے امرا و وزرا کو بحال رکھا۔ ان عمال میں ایک عربی سردار نعمان بن مندز بھی شامل تھا۔ [1]

مانی کی ایران آمد[ترمیم]

مانی نے اپنے مذہب کی تبلیغ شاہپور اول کے دور حکومت میں شروع کی تھی۔ شہنشاہ پہلے دس سال میں مانی کے عقائد سے متاثر رہا لیکن اس کے بعد وہ اپنے آبائی مذہب زرتشت کی جانب لوٹ آیا جس کی وجہ سے مانی کو ایران سے بےدخل کر دیا گیا۔ [2] شاہپور کی وفات کے بعد جب ہرمز اول تخت نشین ہوا تو اس نے مانی کو ایران آنے کی دعوت دی۔ مانی جب ایران آیا تو شہنشاہ ہرمز نے اس کو شاہی محل میں ٹھہرایا۔ اس کو ہر طرح کی سہولیات دی اور طرح طرح کی چیزوں سے نوازا۔ لیکن تاریخ میں اس بات کا ذکر نہیں ملتا کہ شہنشاہ ہرمز اول نے مانی کا مذہب مانویت قبول کیا یا نہیں۔

شہروں کی آبادکاری[ترمیم]

شہنشاہ ایران ہرمز اول نے اپنے مختصر عہد حکومت میں شہروں کی آبادی کاری کی طرف توجہ دی اور بعض نئے شہر آباد کیے۔ ان شہروں میں خوزستان (اھواز) اور رام ہرمز خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

وفات[ترمیم]

شہنشاہ ہرمز اول نے دو سال سے بھی کم عمر حکومت کر کے استخر میں وفات پائی۔ [3] دوسری روایات کے مطابق اس کا دور حکومت ایک سال پر مشتمل ہے۔ [4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تاریخ ایران قدیم (زمانہ قدیم تا زوال بغداد) مولف شیخ محمد حیات صفحہ 39
  2. تاریخ ایران جلد اول (قوم ماد تا آل ساسان) مولف مقبول بیگ بدخشانی صفحہ 327
  3. تاریخ ایران جلد اول (قوم ماد تا آل ساسان) مولف مقبول بیگ بدخشانی صفحہ 324
  4. تاریخ ایران قدیم (زمانہ قدیم تا زوال بغداد) مولف شیخ محمد حیات صفحہ 39