سلیلہ (مرض)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سلیلہ کے ایک مریض کا تنظیرداخلی (endoscopy) سے معائنہ کرنے پر اسکی آنت کے حلقی قولون (sigmoid colon) میں نظر آنے والے سلائل کی ایک camera سے لی گئی تصویر

علم طب میں سلیلہ (polyp) ایک شاذی یا abnormal نشونما کو کہا جاتا ہے ۔ سادہ سے الفاظ میں اسکو یوں کہا جاسکتا ہے کہ یہ جسم میں موجود نظام ہاضمہ کی اندرونی جھلیوں سے بڑھ کر نکلنے والی غیرمعمولی نشونما ہوتی ہے یعنی اگر آنتوں وغیرہ کی mucous membrane غیرفطری طور پر بڑھنے لگے اور بڑھ کر انگلی نما ابھا سے بنا دے تو اسکو سلیلہ کہا جاتا۔

وجۂ تسمیہ[ترمیم]

اسکو انگریزی میں polyp کہنے کی وجہ یہی ہے کہ اسکی شکل ایک آبی جاندار سے بہت ملتی ہے جسے polyp ہی کہا جاتا ہے اور اردو میں بھی اسکو سلیلہ کہنے کی وجہ یہی ہے کیونکہ polyp کو اردو میں سلیلہ کہتے ہیں۔ اسکی جمع قواعد کے مطابق تو سلائل کی جاتی ہے جبکہ اردو میں سلیلے بھی کہا جاسکتا ہے۔ خود polyp کا لفظ یونانی polypos سے بنا ہے جسکا کا مطلب حبار (cuttlefish) کا ہوتا ہے اور اسکو polypos کہنے کی وجہ یہ ہے کہ poly کا مطلب متعدد یا کثیرالتعداد کا ہوتا ہے ، چونکہ cuttlefish میں متعدد پیر پائے جاتے ہیں اسی وجہ سے اسے یہ نام دیا گیا۔

بیان[ترمیم]

سلیلہ جیسا کہ اوپر ذکر ہوا کہ نظام ہاضمہ کی اندرونی جھلیوں سے نکلنے والی نامعمولی نشونما ہوتی ہے اور یہ ظاہر ہے کہ معدہ اور قولون جیسے اعضاء میں پایا جانے والا مرض ہے۔ انکی جسامت مختلف ہوسکتی ہے عموماً یہ 1 تا 2 انچ تک کی جسامت میں بن جاتے ہیں۔ کچھ افراد میں سلائل یعنی polyps وراثی ہوتے ہیں جبکہ کچھ میں یہ محصولی (acquired) بھی ہوسکتے ہیں۔ acquired ایسی کیفیات کو کہا جاتا ہے کہ جو والدین کی جانب سے وراثت میں نہ ملی ہوں یعنی وراثی یا genetic نہ ہوں۔

اہمیت[ترمیم]

سلائل کا شمار سرطان کی ایک قسم میں کیا جاتا ہے جو کہ جسم میں بہت زیادہ تیزی سے نہیں پھیلتی بلکہ اپنی جگہ ہی عرصہ تک محدود رہتی ہے اور اسی وجہ سے اس اسکو سرطان حلیم (benign cancer) کہا جاتا ہے۔ سرطان کی دوسری قسم وہ ہوتی ہے جو کہ جسم میں بہت کم عرصہ میں پھیل جاتی ہے اور اسکو سرطان عنادی (malignant cancer) کہتے ہیں۔

مزید دیکھیۓ[ترمیم]