انٹونیو گوٹیرش

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انٹونیو گوٹیرش
(پرتگالی میں: António Guterres خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
António Guterres - 2019 (48132270313) (cropped).jpg 

مناصب
رکن پارلیمانی اسمبلی برائے یورپ کونسل[1]   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں منصب (P39) ویکی ڈیٹا پر
دفتر میں
26 جنوری 1981  – 1 ستمبر 1983 
اقوام متحدہ ہائی کمشنر برائے پناہ گزین   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں منصب (P39) ویکی ڈیٹا پر
دفتر میں
15 جون 2005  – 31 دسمبر 2015 
سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ[2] (9 )   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں منصب (P39) ویکی ڈیٹا پر
آغاز منصب
1 جنوری 2017 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png بان کی مون 
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائشی نام (پرتگالی میں: António Manuel de Oliveira Guterres خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیدائشی نام (P1477) ویکی ڈیٹا پر
پیدائش 30 اپریل 1949 (70 سال)[3][4][5]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
لزبن[6][7][1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Portugal.svg پرتگال[8][9][10]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب رومن کیتھولک[7]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مذہب (P140) ویکی ڈیٹا پر
تعداد اولاد 2 [7][1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعداد اولاد (P1971) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان[7]،  وانجینئر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
مادری زبان پرتگالی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مادری زبان (P103) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان پرتگالی[7][1]،  وانگریزی[7][1]،  وہسپانوی[7][1]،  وفرانسیسی[7][1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
فریڈم اعزاز (2007)
Ro3osr.gif آرڈر آف اسٹار آف رومانیہ
Order of the Republic (Tunisia) - ribbon bar.gif نشان جمہوریہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وصول کردہ اعزازات (P166) ویکی ڈیٹا پر
دستخط
Assinatura António Guterres.svg 
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ (انگریزی)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں باضابطہ ویب سائٹ (P856) ویکی ڈیٹا پر

اینٹونیو گوٹیریسیا انتونیو گوتریس پرتگالی سیاست دان اور سفارتکار ہیں ۔ گوٹیریس 1995ء سے 2000ء تک پرتگال کے وزیر اعظم رہے۔ انہوں نے اقوام متحدہ کے پناہ گزین تنظیم میں بھی دس سال تک کام کیا ہے۔[11] سلامتی کونسل کی پولنگ میں انہیں واضح اکثریت حاصل ہوا۔ اسی کے بعد ہی ان کا نام اگلے سیکرٹری جنرل یا معتمد عمومی کے طور پر اعلان کیا گیا۔ گٹیریس اقوام متحدہ میں نویں معتمد عمومی ہیں۔[11][12]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ان کا جنم پرتگال کے دار الحکومت لزبن میں 30 اپریل 1949ء کو ہوا تھا۔ پریسٹجيس لِسَؤ ڈی كیموئیس نام کے ثانوی اسکول میں ان کی ابتدائی تعلیم ہوئی۔ سال 1971ء میں انہوں نے لزبن یونیورسٹی سے گریجویشن ڈگری حاصل کی۔ اس کے بعد انہوں نے اسسٹینٹ پروفیسر کے طور پر تعلیم کا کام شروع کیا تھا۔

سیاسی زندگی[ترمیم]

  • 1992ء میں سوشلسٹ انٹرنیشنل کے نائب صدر مقرر ہوئے۔
  • 1995ء سے 2000ء تک پرتگال کے وزیر اعظم رہے۔
  • 6 اکتوبر 2016ء کو اقوام متحدہ کے نویں معتمد عمومی مقرر ہوئے۔ جنرل سکریٹری کا عہدہ یکم جنوری 2017ء سے مؤثر ہوا۔[13]
  • 2005ء سے 2015ء تک اقوام متحدہ میں پناہ گزینوں کے ہائی کمشنر رہے۔
  • 12 دسمبر 2016 کو اقوام متحدہ کے نویں جنرل سکریٹری کے عہدے کا حلف برداری کی۔[14]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت Biography — اخذ شدہ بتاریخ: 7 اکتوبر 2016 — سے آرکائیو اصل — ناشر: Government of Portugal
  2. António Guterres appointed next UN Secretary-General by acclamation — اخذ شدہ بتاریخ: 13 اکتوبر 2016 — سے آرکائیو اصل — ناشر: اقوام متحدہ — شائع شدہ از: 13 اکتوبر 2016
  3. Guterres, António — اخذ شدہ بتاریخ: 7 اکتوبر 2016 — سے آرکائیو اصل — ناشر: Club of Madrid
  4. ناشر: روزنامہ ٹیلی گراف — شائع شدہ از: 5 اکتوبر 2016
  5. عنوان : Encyclopædia Britannica
  6. اجازت نامہ: CC0
  7. ^ ا ب پ ت ٹ Who is Antonio Guterres? Meet the UN's next secretary general — اخذ شدہ بتاریخ: 7 اکتوبر 2016 — سے آرکائیو اصل — شائع شدہ از: 6 اکتوبر 2016
  8. http://www.nndb.com/lists/638/000106320/
  9. http://www.nndb.com/gov/962/000050812/
  10. http://news.bbc.co.uk/2/hi/europe/772059.stm
  11. ^ ا ب Home | United Nations
  12. http://www.jagran.com/news/world-india-welcomes-antnio-manuel-de-olivera-guterres-as-next- secretary-general-of-un-14824587.html
  13. https://www.youtube.com/watch؟v=Vv_42lwtADM
  14. http://www.un.org/apps/news/story.asp؟NewsID=55783#۔WGjzpmXbvIX