انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائیزیشن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائیزیشن
200
اسرو کا لوگو (adopted in 2002)[1][2]
مخفف اسرو
مالک Department of Space، حکومت ہند
قیام 15 اگست 1969؛ 50 سال قبل (1969-08-15)
(1962 as INCOSPAR)
صدر دفاتر بنگلور، کرناٹک، بھارت
12°57′56″N 77°41′53″E / 12.96556°N 77.69806°E / 12.96556; 77.69806متناسقات: 12°57′56″N 77°41′53″E / 12.96556°N 77.69806°E / 12.96556; 77.69806
ملازمین 16,815 as of 2019[3]
Primary spaceport Satish Dhawan Space Centre(SHAR)، Sriharikota، آندھرا پردیشFlag of بھارت
منتظم K. Sivan، Secretary (Space) and chairperson, ISRO[4]
میزانیہ 12473.26 کروڑ (امریکی $2.0 بلین)(2019–20 est.)[5]
ویب سائٹ www.isro.gov.in

اِسرو (ISRO، انگریزی: انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائیزیشن، ہندی: بھارتیا انتريکش انوسندھان سنگٹھن، اردو: ہندوستانی خلائی تحقیق تنظیم) حکومت ہند کی اسپیس ایجنسی ہے جس کا مرکزی دفتر بنگلور میں واقع ہے۔ اس کا اولین مقصد “فلکیات کی کھوج اور خلائی سائنس کا اپناتے پوئے ملک کی ترقی کے لیے خلائی ٹیکنالوجی کو قابو میں کرنا“ ہے۔[6] بھارت کے پہلے وزیر اعظم جواہر لعل نہرو کے دور حکومت میں 1962ء میں ڈی اے ای کی زیر نگرانی انڈین نیشنل کمیٹی فار اسپیس ریسرچ قائم کی گئی تھی۔[7][8][9][10][11][12] 1972ء میں حکومت ہند نے اسپیس کمیشن اور ڈپارٹمنٹ آف اسپیس قائم کی[13] اور اسرو کو ڈپارٹمنٹ آف اسپیس کے ماتحت کر دیا۔[14][15] اسرو کے قیام کے بعد بھارت میں خلائی تحقیق کی راہیں کھل گئیں۔[16] اسرو کی دیکھ ریکھ ڈپارٹمنٹ آف اسپیس کرتی ہے جو براہ راست وزیر اعظم بھارت کو جوابدہ ہے۔[17] اسرو کا پہلا مصنوعی سیارچہ آریہ بھٹ (سیارہ) تھا جسے 1975ء میں سوویت اتحاد کے انٹر کوس موس نے لانچ کیا تھا۔[18] 1980ء میں روہینی (سیارہ) ایس ایل وی-3 کے ذیعے آربٹ پر اتارا جانے والا پہلا بھارت میں بنا ہوا پہلا راکٹ تھا۔ اس کے بعد اسرو نے دو دیگر راکٹ ڈولپ کیے: پولر سیٹٰلائٹ لانچ وہیکل (پی ایس ایل وی) اور جیو سیٹٰلائٹ لانچ وہیکل (جی ایس ایل وی)۔ ان راکٹوں نے متعدد مواصلاتی سیارچے اور زمینی تحقیقی سیارچہ لانچ کیے۔ [19][20]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "ISRO gets new identity"۔ Indian Space Research Organisation۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2018۔
  2. "A 'vibrant' new logo for ISRO"۔ 19 اگست 2002۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2018۔
  3. "Annual Report 2018–19" (پی‌ڈی‌ایف)۔ ISRO.gov.in۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جولائی 2019۔
  4. "Chairman ISRO, Secretary DOS"۔ Department of Space, حکومت ہند۔ اخذ شدہ بتاریخ جنوری 23, 2018۔
  5. https://www.indiabudget.gov.in/doc/eb/dg93.pdf
  6. "Vision and Mission Statements"۔ www.isro.gov.in۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 مارچ 2019۔
  7. Pushpa M. Bhargava؛ Chandana Chakrabarti۔ The Saga of Indian Science Since Independence: In a Nutshell۔ Universities Press۔ صفحات 39–۔ آئی ایس بی این 978-81-7371-435-1۔
  8. Marco Aliberti (17 جنوری 2018)۔ India in Space: Between Utility and Geopolitics۔ Springer۔ صفحات 12–۔ آئی ایس بی این 978-3-319-71652-7۔
  9. Roger D. Launius (23 اکتوبر 2018)۔ The Smithsonian History of Space Exploration: From the Ancient World to the Extraterrestrial Future۔ Smithsonian Institution۔ صفحات 196–۔ آئی ایس بی این 978-1-58834-637-7۔
  10. Nambi Narayanan؛ Arun Ram (10 اپریل 2018)۔ Ready To Fire: How India and I Survived the ISRO Spy Case۔ Bloomsbury Publishing۔ صفحات 59–۔ آئی ایس بی این 978-93-86826-27-5۔
  11. Brian Harvey؛ Henk H. F. Smid؛ Theo Pirard (30 جنوری 2011)۔ Emerging Space Powers: The New Space Programs of Asia, the Middle East and South-America۔ Springer Science & Business Media۔ صفحات 144–۔ آئی ایس بی این 978-1-4419-0874-2۔
  12. Usa International Business Publications (7 فروری 2007)۔ India Space Programs and Exploration Handbook۔ Int'l Business Publications۔ صفحات 133–۔ آئی ایس بی این 978-1-4330-2314-9۔
  13. https://www.isro.gov.in/about-isro/department-of-space-and-isro-hq
  14. "Overview"۔ From Fishing Hamlet To Red Planet۔ Harper Collins۔ صفحہ 13۔ آئی ایس بی این 978-9351776895۔ The three men responsible for launching our country's space programme were: Dr Homi Bhabha, the architect of India's nuclear project, Dr Vikram Sarabhai, now universally acknowledged as the father of the Indian space programme and Pandit Jawaharlal Nehru, the first Prime Minister of independent India. All three came from rich and cultured families; each of them was determined to do his bit for the newly emerging India.
  15. http://www.dae.nic.in/?q=node/394
  16. Eligar Sadeh (11 فروری 2013)۔ Space Strategy in the 21st Century: Theory and Policy۔ Routledge۔ صفحات 303–۔ آئی ایس بی این 978-1-136-22623-6۔
  17. https://www.isro.gov.in/about-isro
  18. "Aryabhata – ISRO"۔ www.isro.gov.in۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2018۔
  19. "GSLV-D5 – Indian cryogenic engine and stage" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Official ISRO website۔ Indian Space Research Organisation۔ مورخہ 2 ستمبر 2013 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2014۔
  20. "GSLV soars to space with Indian cryogenic engine"۔ Spaceflight Now۔ 5 جنوری 2014۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2014۔