انیما چوہدری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انیما چوہدری
Anima Choudhury Early Career Days.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 28 فروری 1953 (68 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نلباری  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ گلو کارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان آسامی زبان  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

انیما چوہدری ہندوستان کی شمال مشرقی ریاست آسام کی معروف گلوکارہ ہیں۔ چار دہائیوں پر مشتمل ان کے موسیقی کیریئر میں فوک اور جدید آسامی گانوں پر توجہ دی گئی ہے۔[1] انھیں مقامی اور ریاستی سطح کی موسیقی اور ثقافتی شناخت اور عنوانات سے بھی نوازا گیا ہے۔ اپنے موسیقی کیریئر کی تکمیل کے ساتھ ساتھ انیما چودھری نے متوازی تعلیم بھی حاصل کی گوہٹی یونیورسٹی سے انھوں نے تاریخ میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

انیما چودھری 28 فروری 1953 کو نزبوری آسام کے ایک چھوٹے سے گاؤں میں پیدا ہوئیں۔ان کے والد ایک طویل مدت کے لیے ناگون میں تعینات سرکاری افسر تھے جہاں سات بہن بھائیوں کے خاندان میں ان کا نمبر پانچواں تھا۔ ان کی موسیقی کے اسباق ناگون سے شروع ہوئے۔ان کے والد ہندوستانی کلاسیکی موسیقی کے بہت زیادہ عقیدت مند تھے اور انہوں نے انہیں ہندوستانی کلاسیکی موسیقی میں پیشہ ورانہ تربیت حاصل کرنے کی ترغیب دی۔انہوں نے سُشیل بنرجی کے میوزک اسکول میں موسیقی کی ابتدائی تربیت حاصل کی۔ 1963 میں ، جب ان کے والد گوہاٹی منتقل ہوئے تو انہوں نے ہیرین سرما کے تحت کلاسیکی موسیقی کی تربیت حاصل کرنا شروع کی۔

تعلیمی کیریئر[ترمیم]

انیما چودھری نے کاٹن کالج ، گوہاٹی سے 1972 میں تاریخ میں آنرز کے ساتھ گریجویشن کیا۔ انھوں نے 1974 میں تاریخ کے مضمون میں گوہاٹی یونیورسٹی سے آرٹس کی ڈگری حاصل کی اور 1999 میں "مندروں اور مزارات میں کے مقالے کے لیے اس یونیورسٹی سے ڈاکٹریٹ (پی ایچ ڈی) کی ڈگری حاصل کی۔انہیں متعدد بین الاقوامی ، قومی اور ریاستی سطح کے سیمینار میں بھی مدعو کیا گیا جہاں انھوں نے ثقافت اور موسیقی سے متعلق متعدد موضوعات پر تحقیقی مقالے پیش کیے ۔[2] [3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Mirza، Abbas. ASSAM: The Natural and Cultural Paradise. Assam. 
  2. Choudhury، Anima (1998). "Saivism in Assam". Proceedings of North East India History Association. Assam. صفحہ 118. 
  3. Choudhury، Anima (2007). "Saktism". Journal of the Assam Research Society. Assam. صفحہ 89.