اوینجرز : اینڈگیم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اوینجرز: اینڈگیم
Avengers Endgame poster.jpg
فلم کا پوسٹر
ہدایت کار
  • انتھونی روسو
  • جو روسو
پروڈیوسر کیون فائگی
منظر نویس
  • کرسٹوفر مارکس
  • اسٹیفن میکفیلی
ماخوذ از دی اوینجرز 
از اسٹین لی
ستارے
موسیقی ایلن سلویسٹری
سنیماگرافی ٹرینٹ اوپلوچ
ایڈیٹر
پروڈکشن
کمپنی
تقسیم کار والٹ ڈزنی اسٹوڈیوز
موشن پکچرز
تاریخ اشاعت
  • 22 اپریل 2019ء (2019ء-04-22) (لاس اینجلس کنوینشن سینٹر)
  • 26 اپریل 2019ء (2019ء-04-26) (امریکا)
دورانیہ
181 منٹ[1]
ملک ریاستہائے متحدہ امریکا[2]
زبان انگریزی
بجٹ $356 ملین[3]
باکس آفس $2.791 بلین[3]

اوینجرز: اینڈگیم مارول کامکس کی فکشن سپر ہیرو ٹیم اوینجرز پر مبنی انگریزی زبان میں ہالی وڈ کی ایک امریکی سپر ہیرو فلم ہے، جسے مارول اسٹوڈیوز نے تخلیق کیا اور والٹ ڈزنی اسٹوڈیو موشن پکچرز نے تقسیم کیا۔ یہ 2012ء کی فلم دی اوینجرز اور 2015ء کی اوینجرز : ایج آف الٹران کے ساتھ ساتھ 2018ء کی فلم اوینجرز: انفنیٹی وار کے سلسلہ کی اگلی کڑی ہے اور مارول سینماٹک یونیورس (ایم سی یو) سپر ہیرو فرنچائز کی 22ویں پیش کش ہے۔ فلم کے ہدایتکار اینتھونی اور جو روسو ہیں اور اس فلم کے مصنفین کرسٹوفر مارکس اور اسٹیفن میکفیلی ہیں۔ اور پچھلی ایم سی یو فلموں سے رابرٹ ڈاؤنی جونیئر(آئرن مین)، کرس ہیمس ورتھ (تھور)، جیئرمی رینر (ہاک آئی)، مارک روفالو(ہلک)، کرس ایونز (کیپٹن امریکا) اور اسکارلیٹ جوہانسن (بلیک وڈو) سمیت کئی اداکاروں نے اس فلم میں مرکزی کردار نبھائے ہیں۔

فلم کا اعلان اکتوبر 2014ء کو اوینجرز: انفنیٹی وار - پارٹ 2 کے نام سے کیا گیا تھا۔ روسو برادرز اپریل 2015ء میں بطور ہدایت کار شامل ہوئے اور مئی تک مارکس اور  میکفلی کو فلم کی کہانی لکھنے کے لیے چن لیا گیا تھا۔ جولائی 2016ء میں مارول نے فلم کے نام کو ہٹا دیا، جس کے بعد اسے محض بلا عنوان ایوینجرز فلم کے روپ میں لکھا جانے لگا۔ فلم کی شوٹنگ اگست 2017ء میں فییٹ کاؤنٹی، جارجیا کے پائن وڈ اٹلانٹا سٹوڈیو میں شروع ہوئی اور جنوری 2018ء میں مکمل ہو گئی۔ اس کے بعد ڈاؤن ٹاؤن اور میٹرو  اٹلانٹا نیویارک اور اسکاٹ لینڈ میں بھی فلم کے کچھ حصے شوٹ کیے گئے۔ دسمبر 2018ء میں فلم کا عنوان، اوینجرز: اینڈگیم کے طور پر ظاہر کیا گیا۔

یہ فلم 26اپریل 2019ء کو امریکہ میں آئی میکس اور تھری ڈی پر ریلیز ہوئی۔

ایوینجر سیریز کی چوتھی اور آخری فلم اپریل کے آخر میں دنیا بھر میں ریلیز ہوئی اور صرف دو ہفتوں میں اس فلم نے ماضی کے تمام ریکاڑ توڑ دیے۔ اس فلم نے ایک ارب کا ہدف عبور کرنے میں صرف پانچ دن لیے اور یوں وہ پہلی فلم بن گئی جس نے ریلیز کے ابتدائی پانچ دنوں میں ہی ایک ارب امریکی ڈالر کمائی کی حد پار کی ہے۔ اوینجرز اینڈ گیم اب تک دنیا بھر کے باکس آفس پر 2.790 بلین ڈالرز سے زیادہ رقم کماکر دنیا کی سب سے زیادہ کمائی والی فلم بن گئی ہے۔ سب سے زیادہ کمائی کرنے والی فلموں میں 'اوینجرز اینڈ گیم' پہلے ’اواتار‘ دوسرے جبکہ 'ٹائی ٹینک' تیسرے نمبر پر آگئی۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ہالی ووڈ کی سب سے زیادہ کمائی کرنے والی 10 فلموں میں ’اوینجرز‘ سیریز کی 4 فلمیں شامل ہیں۔[4]

کہانی[ترمیم]

تھیناس سے جنگ ہارنے کے تیئیس دن بعد جب تھیناس کے انفینٹی آہنی دستانے کے استعمال سے کائنات میں آدھی زندگی ختم ہوچکی ہے۔ کیرل ڈینورس(کیپٹن مارول) خلا میں پھنسے ٹونی اسٹارک(آئرن مین) اور نیبلا کو بچاکر انہیں زمین پر واپس لے آتی ہے۔ یہاں انکی ملاقات ایک بار پھر باقی بچے اوینجر زبروس بینر (ہلک)، اسٹیو راجرس(کیپٹن امریکہ)، راکیٹ، تھور، نتاشا رومانوف (بلیک وڈو) اور جیمز روڈس (وار مشین) سے ہوتی ہے، اور وہ سب مل کر ایک بے جان سیارے پر تھیناس کو ڈھونڈ نکالتے ہیں۔ ان کی منصوبہ بندی یہ تھی کہ انفینٹی اسٹونز کا پھر سے استعمال کرکے تھیناس کے کیے گئے عمل کو دوبارہ پلٹ دیا جائے، لیکن تھیناس انہیں بتاتا ہے کہ اس نے یہ سوچ کر کہ ان اسٹونز کا دوبارہ استعمال نہ ہو انہیں ختم کردیا تھا۔ اس بات سے مشتعل ہوکر تھور تھیناس کا سر دھڑ سے الگ کر دیتا ہے۔

پانچ سال بعد، اسکاٹ لینگ (آنٹ مین ) کوانٹم چکر سے باہر نکل آتا ہے۔ وہ فوراً اوینجرز کمپاؤنڈ پہنچتا ہے، جہاں وہ رومانوف (بلیک وڈو)اور راجرس (کیپٹن امریکہ)کو سمجھاتا ہے کہ کوانٹم چکر میں پھنسے ہونے کے دوران میں اسے یہ پانچ سال محض پانچ گھنٹے ہی محسوس ہوئے تھے۔ یہ جان کر، کہ کوانٹم چکر کی مدد سے وقت میں سفر کیا جاسکتا ہے، وہ تینوں ماضی میں جاکر ان اسٹونز کو حال میں لانے، اور تھیناس کے عمل کو الٹنے کے لئے اسٹارک (آئرن مین) سے مدد مانگتے ہیں، لیکن وہ ان کی مدد کرنے سے انکار کر دیتا ہے، اور پھر وہ آخر میں مدد کے لئے بینر (ہلک )کے پاس پہنچتے ہیں، جس نے اب ہلک کی طاقت اور جسم کے ساتھ اپنی عقل کو جوڑ لیا ہے۔ حالانکہ، بعد میں اپنی بیوی ، پیپر پاٹس کے ساتھ بات کرنے کے بعد، اسٹارک (آئرن مین )بھی ان کی مدد کرنے کے لئے راضی ہو جاتا ہے، اور وہ بینر کے ساتھ مل کر اس تجربے پر کام کرنے لگتا ہے- دونوں کامیابی کے ساتھ ایک ٹائم مشین ایجاد کرلیتے ہیں۔

ٹائم مشین کی تکمیل ہونے پر، بینر (ہلک ) انہیں آگاہ کرتا ہے کہ ماضی میں کسی طرح کی تبدیلی سے حال پر کوئی اثر نہیں پڑتا ہے، بلکہ اس سے ایک متبادل وقت تخلیق ہو سکتا ہے؛ اور پھر وہ راکیٹ کے ساتھ تھور کو لانے کے لئے ناروے میں ایسگارڈین پناہ گزینوں کے نئے ٹھکانے پر جاتا ہے، جہاں تھیناس کو روکنے میں ناکامی سے ناامید تھور اب ایک موٹے شرابی شخص کی ہیت میں تبدیل ہو گیا ہے۔ دوسری طرف، رومانوف بھی کلنٹ بارٹن (ہاک آئی)کو لانے ٹوکیو جاتی ہے، جو اب اپنے خاندان کے خاتمے کے بعد ایک خونخوار بن چکا ہے۔

بینر، لینگ، راجرس، اور سٹارک ٹائم مشین کے ذریعے 2012 ء میں نیویارک شہر کا سفر کرتے ہیں۔ بینر سینکٹم سنکٹورم جاتا ہے اور اینشئینٹ ون کو اسے ٹائم اسٹون دینے کے لئے منا لیتا ہے۔ راجرس بھی مائنڈ اسٹون کو حاصل کرنے میں کامیاب رہتا ہے، لیکن سٹارک اور لینگ ایسا نہیں کر پاتے، اور 2012 کا لو کی اسپیس اسٹون لے کر فرار ہو جاتا ہے۔ اسکے بعد راجرس اور سٹارک 1970ء میں شیلڈ کے ہیڈکوارٹر کا سفر کرتے ہیں، جہاں سٹارک ماضی کے اسپیس اسٹون کو حاصل کرلیتا ہے اور اس دوران میں وہ نوجوان ہاورڈ سٹارک (یعنی اپنے والد)سے بھی ملاقات کرتا ہے، جبکہ راجرس ہینک پئم سے حال میں واپس جانے کے لئے پئم پارٹکل چرا لیتا ہے۔ راکیٹ اور تھور 2013ء میں ایسگارڈ کا سفر کرتے ہیں، جین فاسٹر سے رییلٹی سٹون حاصل کرلیتے ہیں اور تھور اپنی ماں، فریگگا سے ملاقات کر واپس آتے وقت اپنا ہتھوڑااور میولنر کو بھی ساتھ لے آتا ہے۔ نیبلا اور روڈس 2014ء میں موریگ کا سفر کرتے ہیں، اور پیٹر کوئل کے آنے سے پہلے پاور اسٹون چوری کر لیتے ہیں۔ روڈس پاور اسٹون کے ساتھ حال میں لوٹ جاتا ہے، لیکن نیبلا ایسا نہیں کر پاتی، کیونکہ اس کا سائبرنیٹک لنک اسکے پچھلے روپ یعنی ماضی کی نیبلا کے ساتھ جڑجاتا ہے۔ اس ملاپ سے 2014ء کے تھیناس کو اپنی مستقبل کی کامیابی، اور اوینجرز کے ذریعے اسے ختم کیے جانے کے عمل کے بارے میں پتہ چل جاتا ہے۔ تھیناس نیبلا کو پکڑ لیتا ہے، اور اس کے بدلے 2014کی نیبلا کو اس کی جگہ حال میں بھیج دیتا ہے۔ بارٹن (ہاک آئی)اور رومانوف (بلیک وڈو) وورمر کا سفر کرتے ہیں، جہاں سول اسٹون کا نگراں، ریڈ اسکل، انہیں بتاتا ہے کہ اسٹون کو صرف کسی ایسے شخص کی قربانی کرنے ہی حاصل کیا جا سکتا ہے، جسے وہ پیار کرتا ہے۔ رومانوف خود کو قربان کردیتی ہے، جس سے بارٹن سول اسٹون لیکر واپس آ جاتا ہے۔

حال میں دوبارہ اکھٹے ہونے کے بعد، اوینجرز نے اسٹونز کو اسٹارک کے تیار کردہ آہنی دستانے میں لگاتے ہیں، چونکہ ان اسٹونز میں گاما ریز کی تابکاری ہوتی ہے اس لیے بنر (ہلک) تھیناس کے عمل کو الٹنے اور غائب ہوئی زندگیوں کو دوبارہ بحال کرنے کے لئے آہنی دستانہ استعمال کرتا ہے۔ اس وقت 2014ء کی نیبلا ٹائم مشین کے ذریعے 2014 سے تھیناس اور اس کے جنگی جہاز کو حال میں لے آتی ہے۔ جہاں وہ ایونجر کے کمپاؤنڈ پر حملہ کرتا ہے، وہ ان اسٹونز کے ساتھ کائنات کو تباہ کرکے اور تعمیر کرنے کی منصوبہ بندی کرتاہے۔ نبولا 2014ء کی گمورا کو تھیناس کے خلاف جنگ پر آمادہ کرلیتی ہے، لیکن وہ 2014ء کی نبیلا کو قائل کرنے میں ناکام رہتی ہے اور اسے مارنے پر مجبور ہوجاتی ہے۔ سٹارک، راجرز، اور تھور تھیناس سے لڑتے ہیں لیکن اس پر قابو نہیں کرپاتے۔ تھیناس زمین کو تباہ کرنے کے لئے اپنی فوج اکھٹا کرتا ہے، لیکن دوبارہ زندہ ہونے والے اسٹیفن اسٹرینج دوسرے جادوگروں کے ساتھ دیگر ایونجزز اور گارجین آف گلیکسی، وکانڈا اور اسگارڈ کی فوجیں، اور ریواگر تھیناس اور اس کی فوج سے لڑنے کے لئے پہنچ جاتے ہیں، اکیلی ڈینورس (کیپٹن مارول) تھیناس کے جنگی جہاز کو تباہ کردیتی ہیں۔ جیسے ہی سپر ہیرو جنگ پر قابو پانے لگتے ہیں اس دوران میں تھیناس آہنی دستانے پر قبضہ کر لیتا ہے، لیکن اس سے پہلے ہی اسٹارک (آئرن مین) ان اسٹونز کو نکال کر اپنے آہنی دستانوں میں لگا دیتا ہے اور تھیناس اور اس کی فوج تباہ کرنے کے لئے ان کا استعمال کرتا ہے۔ لیکن گاما ریز کی تابکاری سے خود قربان ہوجاتا ہے۔

اسٹارک کے جنازہ کے بعد، تھور والکیری کو نئے اسگارڈ کا نیا حکمران مقرر کرتا ہے اور خود گارجین آف گلیکسی کے ساتھ شامل ہوجاتا ہے۔ راجرز انفینٹی اسٹونز اور میولنر کو اپنے اصل وقت میں واپس رکھ آتا ہے اور اپنے ماضی میں جاکر پیگی کارٹر کے ساتھ زندگی گزارنے لگتا ہے۔ حال آنے تک بوڑھا راجرز اپنی شیلڈ کو سیم ولسن کے حوالے کر کے اسے بطور نیا کیپٹن امریکہ منتخب کرتا ہے۔

کردار[ترمیم]

کردار :- اداکار (ہندی ڈبنگ آرٹسٹ)

  • ٹونی سٹارک/آئرن مین :- رابرٹ ڈاؤنی جونیئر (ہندی ڈبنگ: راجیش کھٹر)
  • تھور :- کرس ہیمس ورتھ (ہندی ڈبنگ: گورو چوپڑا)
  • بروس بینر/ہلک :- مارک روفالو (ہندی ڈبنگ: سمیہ راج ٹھکر)
  • اسٹیو روجرس/کیپٹن امریکہ :- کرس ایونز (ہندی ڈبنگ: جوئے سین گپتا)
  • نتاشا رومانوف/بلیک وڈو :- اسکارلیٹ جوہانسن (ہندی ڈبنگ: نیشما چیمبرکر)
  • کلنٹ بارٹن / ہاک آئی :- جیرمی رینر -(ہندی ڈبنگ: دیپک سنہا)
  • جیمس روڈس/وار مشین :- ڈان چیڈل (ہندی ڈبنگ: راجیش جالی)
  • اسکاٹ لینگ / اینٹ مین :- پال رڈ (ہندی ڈبنگ: ساحل وید)
  • کیرل ڈینورس / کیپٹن مارول :- بری لارسن (ہندی ڈبنگ: پوجا کنوال)
  • نیبیولا :- کیرین گلان (ہندی ڈبنگ: ٹینا پاریکھ)
  • اولوئی :- ڈینائی گوریرا
  • وانگ :- بینی ڈکٹ وانگ (ہندی ڈبنگ: راجا سیوا)
  • ہیرولڈ "ہیپی" ہوگن :- جان فیوروؤ
  • راکیٹ ریکن :- بریڈلی کوپر(آواز) (ہندی ڈبنگ: نیناد کامت)
  • ورجینیا پیپر پاٹس :- گونتھ پالٹرو (ہندی بنگ: اروندر کور)
  • گمورا :- زوئی سلڈانا (ہندی ڈبنگ: مونا گھوش شیٹی)
  • تھیناس :- جوش برولن (ہندی ڈبنگ: نیناد کامت)
  • پیٹر پارکر/ اسپائڈر مین :- ٹام ہالینڈ (ہندی ڈبنگ: ویبھو ٹھاکر)
  • ٹی'چالا/بلیک پینتھر :- چیڈوک بوسمین (ہندی ڈبنگ: وراج ادھو)
  • وژن :- پال بیٹنی (ہندی ڈبنگ: اتل کپور)
  • وانڈا میکسیماف/اسکارلیٹ وچ :- ایلزبیتھ آلسن (ہندی ڈبنگ: پوجا پنجابی)
  • سیم ولسن/پھالکن :- اینتھنی میکی (ہندی ڈبنگ: انوج گردوارہ)
  • بکی بارنس :- سیبیسٹین سٹین (ہندی ڈبنگ: منیش وادھوا)
  • لو کی :- ٹام ہڈلسٹن (ہندی ڈبنگ: سپت رشی گھوش)
  • ہیمڈال :- اڈرس ایلبا (ہندی ڈبنگ: پرمندر گھمّان)
  • مینٹس :- پام کلیمینٹپھ (ہندی ڈبنگ: مسکان جعفری)
  • ڈریکس دا ڈسٹرایر :- ڈیو بٹسٹا (ہندی ڈبنگ: پون کالرا)
  • گروٹ :- ون ڈیزل (ہندی ڈبنگ: سوین)
  • ٹینلیر ٹوان/د کلیکٹر :- بینسیؤ دیل تو رو (ہندی ڈبنگ: سلیل آچاریہ)
  • پیٹر کول/سٹار لارڈ :- کرس پریٹ (ہندی بنگ: روہت رائے)
  • ہوپ وین ڈائن / واسپئگینلین :- اوینجلین للی (ہندی ڈبنگ: ملائکہ شوپوری)
  • ڈاکٹر اسٹرینج :- بینی ڈکٹ کمبربیچ (ہندی ڈبنگ: موہن کپور)

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Avengers: Endgame"۔ British Board of Film Classification۔ مورخہ اپریل 12, 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 مئی، 2019۔ Check date values in: |access-date= (معاونت)
  2. Kim Newman۔ "Avengers: Endgame review: the finale these heroes deserve"۔ برٹش فلم انسٹی ٹیوٹ۔ مورخہ اپریل 28, 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ اپریل 28, 2019۔
  3. ^ ا ب "Avengers: Endgame (2019)"۔ باکس آفس موجو۔ انٹرنیٹ مووی ڈیٹابیس۔ مورخہ جولائی 21, 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ جولائی 21, 2019۔
  4. "'اوینجرزاینڈ گیم ' دنیا کی کامیاب ترین فلم بن گئی"۔ روزنامہ جنگ ڈاٹ کام۔

بیرونی روابط[ترمیم]