جرمن اتحاد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انتون وون ورنر کی جرمن سلطنت کے نفاذ (18 جنوری 1871)، میں بسمارک-میوزیم Friedrichsruh
Political map of central Europe showing the 26 areas that became part of the united German Empire in 1891. Germany based in the northeast, dominates in size, occupying about 40% of the new empire.
، جرمن سلطنت 1871-1918۔ چونکہ کثیر القومی آسٹریا کی سلطنت کا جرمن بولنے والا حصہ خارج کردیا گیا تھا ، لہذا یہ جغرافیائی نمائندگی لیزر جرمنی (کلینڈسٹ) حل کی نمائندگی کرتی ہے۔

جرمنی کا ریاستہائے متحدہ میں سیاسی اور انتظامی اتحاد 18 جنوری 1871 کو فرانس کے محل آف ورسائیل کے ہال آف آئینہ میں ہوا۔ سن 1871 میں وسطی یورپ کی آزاد ریاستیں (پرشیا ، باویریا ، سیکسونی ، وغیرہ) مل کر ایک قومی ریاست اور جرمن سلطنت تشکیل دی گئیں۔ اس تاریخی عمل کو جرمنی کا اتحاد کہا جاتا ہے۔ اس سے قبل یہ علاقہ (جرمنی) 39 ریاستوں میں منقسم تھا۔ ان میں سے ، آسٹریا کی سلطنت اور پروسی بادشاہت اپنی معاشی اور سیاسی اہمیت کے سبب مشہور تھے۔ فرانسیسی انقلاب کے تخلیق کردہ نئے خیالات سے بھی جرمنی متاثر ہوا۔ اپنی فتوحات کے ساتھ ، نیپولین نے رائن یونین کے تحت مختلف جرمن ریاستوں کو متحد کردیا ، جس نے جرمن ریاستوں کو ایک ساتھ کیا۔ اس سے جرمنی میں اتحاد کے جذبے پھیل گئے۔ یہی وجہ ہے کہ جرمن ریاستوں نے ویانا کانگریس کے سامنے انہیں متحد کرنے کی پیش کش کی ، لیکن اسے نظرانداز کردیا گیا۔

پس منظر[ترمیم]

نیا انتظام[ترمیم]

ویانا کانگریس کے ذریعہ جرمن ریاستوں کے نئے انتظامات کے تحت ، وہ ایک فیڈریشن کی حیثیت سے منظم ہوئے اور آسٹریا کو اس کا سربراہ بنایا گیا۔ علیحدہ جرمن ریاستوں کو اس خاندان کے مفادات میں تنظیم نو کی گئی۔ ان ریاستوں کے لئے ایک گروپ اسمبلی تشکیل دی گئی ، جس کا اجلاس فرینکفرٹ میں ہوا ۔ اس کے ممبران لوگوں نے منتخب نہیں کیے تھے بلکہ انہیں مختلف ریاستوں کے بادشاہوں نے نامزد کیا تھا۔ یہ بادشاہ نئے نظریات کے مخالف تھے اور قومی اتحاد کے خیال کو ناپسند کرتے تھے ، لیکن جرمن ریاستوں کے عوام میں قوم پرستی اور آزادی کا احساس تھا۔ نیا نظام ایسا تھا کہ آسٹریا کی خودمختاری موجود تھی۔ جرمنی کے علاقے میں قریب 39 ریاستیں تھیں جنہوں نے فیڈریشن تشکیل دی۔

مختلف جرمن ریاستوں میں ایکسائز ٹیکس کے الگ الگ قواعد تھے ، جو تجارتی ترقی کی راہ میں ایک بڑی رکاوٹ تھے۔ ان رکاوٹوں کو دور کرنے کے لئے ، جرمن ریاستوں نے مشترکہ طور پر ایکسائز یونین تشکیل دی۔ یہ ایک طرح کی ٹریڈ یونین تھی ، جو ہر سال ملتی تھی۔ اس یونین کے فیصلے اتفاق رائے سے کیے گئے۔ تمام جرمن ریاستوں میں اب اسی کسٹم ڈیوٹی کا اطلاق ہوتا ہے۔ اس انتظام کی وجہ سے جرمنی کی تجارت میں ترقی ہوئی اور ساتھ ہی وہاں اتحاد کا بھی احساس ہوا۔ اس طرح اس معاشی اتحاد نے سیاسی اتحاد کی روح کو تقویت بخشی۔ در حقیقت ، یہ جرمن ریاستوں کے اتحاد کی طرف پہلا اہم قدم تھا۔

حوالہ جات[ترمیم]