سفر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سفر کے لغوی معنی ہیں کھلنا،ظاہرہونا اسی لیے اجالےکو اسفار (جب خوب اُجالا ہو یعنی زمین روشن ہو جائے)کہتے ہیں اور کتابوں کے ڈھیرکو اسفار۔اس کا مقلوب فسْرہے،اس کے معنی بھی یہی ہیں،اس سےتفسیربنا،چونکہ سفر میں دوسرے مقامات کے حالات معلوم ہوتے ہیں اس لیے اسے سفر کہتے ہے۔

اصطلاح شریعت میں راستہ طے کرنے کی مخصوص صورت کا نام سفر ہے۔[1]

  1. مرأۃ المناجیح، حکیم الامت مفتی احمد یار خاں نعیمی اشرفی بدایونی جلد دوم صفحہ 563