سمانتھا سمتھ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سمانتھا سمتھ
(انگریزی میں: Samantha Smith ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
U.S. girl Samantha Smith in Artek cropped.jpg
Smith visiting the Artek pioneer camp in جولائی 1983

معلومات شخصیت
پیدائشی نام (انگریزی میں: Samantha Reed Smith ویکی ڈیٹا پر (P1477) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیدائش 29 جون 1972(1972-06-29)
ہؤلٹن، میئن، ریاستہائے متحدہ امریکا
وفات اگست 25، 1985(1985-80-25) (عمر  13 سال)
آبرن، مینے، U.S.
وجہ وفات ہوائی حادثہ  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات حادثہ  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the United States (1795-1818).svg ریاستہائے متحدہ امریکا  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر نام ریاستہائے متحدہ امریکا کم عمر ترینسفیر (سفارتی عہدہ); America's Littlest Diplomat; America's Sweetheart[1] (U.S.); The Goodwill Ambassador (USSR)
عملی زندگی
پیشہ Peace activist، child actress
پیشہ ورانہ زبان انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دور فعالیت 1982–1985
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سمانتھا ریڈ سمتھ (انگریزی: Samantha Reed Smith) کا تعلق امریکا سے تھا۔ نومبر 1982 میں انہوں نے روسی صدر کو خط لکھا، جس کےجواب میں روسی صدر نے انہیں روس کے دورے کی دعوت دی۔ سرد جنگ کے عروج میں اس دورے نے دونوں ملکوں کے تعلقات کو بہتر بنانے میں مدد دی۔

خط اور جواب[ترمیم]

’’ میں ایک 10 سالہ لڑکی ہوں اوریہ سوال پوچھنا چاہتی ہوں کہ کیا آپ امریکا پر ایٹمی ہتھیاروں سے حملہ کرنے والے ہیں؟ اگر نہیں تو اس کو روکنے کے لیے کیا کررہے ہیں؟ میں جانتی ہوں کہ آپ اس سوال کا جواب دینے کے پابند نہیں ہیں تاہم یہ جاننا چاہتی ہوں کہ آپ کا ملک امریکا پر قبضہ کیوں کرنا چاہتا ہے جبکہ خدا نے اس دنیا کو امن سے رہنے کے لیے بنایا ہے‘‘ اس کے جواب میں روسی صدر نے لکھا ’’سوویت عوام امن سے جینے کے خواہشمند ہیں۔ ہاں! سمانتھا، میں، میری حکومت اور سوویت یونین کا ہر شہری امن چاہتا ہے۔ ہم ایٹمی ہتھیاروں کا کبھی استعمال نہیں کرنا چاہتے۔ ہم دنیا بھر کے دیگر سمیت عظیم ریاست ہائے متحدہ امریکا کے ساتھ پُرامن تجارتی تعلقات کے خواہشمند ہیں۔ میں یہ چاہتا ہوں کہ اگر تمہارے والدین تمہیں اجازت دیں تو تم سوویت یونین کا دورہ کرو اور خود اپنی آنکھوں سے دیکھو کہ سوویت یونین کے شہری کس قدر امن پسند ہیں ‘‘

روس کا سفر[ترمیم]

سمانتھا اسمتھہ نے ،جس کی پیدائش 1972ء میں ہوئی تھی، یہ دعوت قبول کی اور اپنے والدین کے ہمراہ سوویت یونین کا سفر کیا۔ اس دورے کو دنیا بھر خاص توجہ حاصل ہوئی۔ سمانتھا کو باالعموم پوری دنیا اور باالخصوص سوویت یونین اور امریکا میں امن کے سفیر کے نام سے یاد کیا جانے لگا۔

کتاب اور ٹی وی سیریل[ترمیم]

سمانتھا نے اپنے اس دورے کا احوال ایک کتاب کی صورت میں لکھا جس کا عنوان ’Journey to the Soviet Union‘ تھا۔ پھر اس نے ایک امریکی ٹی وی سیریل میں بھی کام کیا۔

وفات[ترمیم]

25 اگست 1985ء کو سمانتھا اسمتھہ اپنے والد کے ہمراہ ایک چھوٹے طیارے میں سفر کررہی تھیں کہ لینڈنگ کے وقت وہ طیارہ حادثے کا شکار ہوگیا اور اس میں موجود تمام مسافر ہلاک ہوگئے۔

سمانتھا اسمتھہ کی آخری رسومات کے دوران میں امریکا میں موجود سوویت سفیر نے صدر گوربا چوف کا پیغام پڑھ کر سنایا جس میں گورباچوف نے لکھا تھا کہ ’’’سوویت یونین کا ہر وہ شہری جو سمانتھا اسمتھہ کو جانتا تھا وہ اس امریکی لڑکی کو ساری زندگی یاد رکھے گا جس نے امریکا اور سوویت یونین دونوں ممالک کے عوام کے درمیان میں دوستی اور امن کا خواب دیکھا تھا۔‘‘ اس موقع پر امریکی صدر رونالڈ ریگن نے بھی پیغام بھیجا جس میں انہوں نے لکھا ’’سمانتھا ! شاید تمہیں یہ جان کر خوشی ہو کہ ناصرف امریکی بلکہ دنیا بھر کے لاکھوں لوگ تمہارے لیے غمزدہ ہیں۔ وہ تمہیں، تمہاری مسکراہٹ، تمہارے تصورات اور تمہاری پُرامن روح کو ہمیشہ یاد رکھیں گے۔‘‘ سمانتھا کی وفات پر سوویت حکومت نے ایک یادگاری ٹکٹ بھی جاری کیا اور یالٹا کے سمندر میں ایک کشتی کو سمانتھا اسمتھہ کے نام سے تعمیر کیا گیا[2]۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Evening Magazine; WBZ-TV، Boston, 1985
  2. شوذب عسکری: ڈان