مندرجات کا رخ کریں

لمبائی کا سکڑاؤ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
وہ پہیے جو روشنی کی رفتار سے 90 فیصد پر سفر کرتے ہیں۔ ایک پہیے کے اوپر کی رفتار 0.994 c ہے جبکہ نیچے کی رفتار ہمیشہ صفر ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ سب سے اوپر والا نیچے والے کے مقابلے میں سکڑتا ہے۔ یہ اینیمیشن اس مفروضے کے ساتھ بنائی گئی ہے کہ پہیے کے اسپوکس اس کے فریم سے کہیں زیادہ لچکدار ہوتے ہیں۔ بصورت دیگر سپوکس یا فریم کا محیط پھٹ سکتا ہے۔ ایک پہیے کے بیچ کے باقی فریم میں، پہیے گول ہوتے ہیں اور ان کے سپوکس سیدھے اور مساوی ہوتے ہیں، لیکن ان کے فریم کا محیط سکڑ جاتا ہے اور سپوکس پر دباؤ ڈالتا ہے۔

لمبائی کا سکڑاؤ وہ رجحان ہے جس میں کسی حرکت پزیر شے کی لمبائی کی کمی کو اس کی مخصوص لمبائی، جو لمبائی ہے جبکہ کہ مفعول (پہیا) اپنے سکونی فریم میں ہوتا ہے، کے مقابلے میں ناپا جاتا ہے۔ [1] اسے لورینز سکڑاؤ یا لورینز۔ فزجیرالڈ سکڑاؤ (ہینڈرک لورینٹز اور جارج فرانسس فزجیرالڈ کے نام پر) کے نام سے بھی جانا جاتا ہے اور یہ عام طور پر روشنی کی رفتار کی معقول کسر پر ہی نمایاں ہوتا ہے۔ لمبائی کا سکڑاؤ صرف اس سمت میں ہوتا ہے جس سمت میں جسم سفر کر رہا ہوتا ہے۔ معیاری اشیاء کے لیے، یہ اثر روزمرہ کی رفتار پر نہ ہونے کے برابر ہے اور اسے تمام باقاعدہ مقاصد کے لیے نظر انداز کیا جا سکتا ہے۔ یہ صرف اسی وقت اہم ہوتا ہے جب مفعول دیکھنے والے کی نسبت روشنی کی رفتار کے قریب پہنچ جاتا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Mirjana Dalarsson، Nils Dalarsson (2015)۔ Tensors, Relativity, and Cosmology (2nd ایڈیشن)۔ Academic Press۔ صفحہ: 106–108۔ ISBN 978-0-12-803401-9  Extract of page 106