میسور

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
میسور
(کنڑا میں: ಮೈಸೂರು)
(انگریزی میں: Mysore)
(انگریزی میں: Mysuru ویکی ڈیٹا پر (P1448) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Mysore Palace, India (photo - Jim Ankan Deka).jpg
 

انتظامی تقسیم
ملک Flag of India.svg بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P17) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1]
دارالحکومت برائے
تقسیم اعلیٰ میسور ضلع  ویکی ڈیٹا پر (P131) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جغرافیائی خصوصیات
متناسقات 12°18′31″N 76°39′11″E / 12.308611111111°N 76.653055555556°E / 12.308611111111; 76.653055555556  ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رقبہ 132000000 مربع میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2046) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بلندی 763 میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2044) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آبادی
کل آبادی 920550 (2011)  ویکی ڈیٹا پر (P1082) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مزید معلومات
جڑواں شہر
سنسیناٹی
اوجسبورج (2019–)[2]
ناشوا، نیو ہیمپشائر (8 جولا‎ئی 2016–)[3][4]  ویکی ڈیٹا پر (P190) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رمزِ ڈاک
570001  ویکی ڈیٹا پر (P281) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فون کوڈ 821  ویکی ڈیٹا پر (P473) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قابل ذکر
جیو رمز 1262321  ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
  ویکی ڈیٹا پر (P935) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

میسور یا میسورو بھارت کی ریاست کرناٹک میں واقع مشہور شہر ہے ۔ یہ سلطنتِ خداداد سلطنتِ میسور کا حصّہ تھا ۔ یہ ایک سیاحتی مقام بھی ہے ۔ یہ ریاست کرناٹک کا دوسرا بڑا شہر ہے ۔ کرناٹک کا پُرانا نام میسور تھا ۔ میسور محل یہیں واقع ہے۔۔ میسور محلوں کے شہر سے بھی معروف ہے ۔ جنوبی ہند کے وسیع چڑیاگھر یہیں واقع ہے۔

ایک تحقیق کے مطابق میسور کا پرانانام مہیش کنورو ہے جو سنسکرت زبان سے لیا گیا ہے جس کا معنی مہیش کے بھینس اور کنورو کا مطلب شہر کے ہیں ، کیونکہ یہاں بہ کثرت بھنیسے پائے جاتے تھے اور بعضوں مورخوں نے یہی دلائل سے ثابت کیا ہے مگر یہ تحقیق ماننا بہت مشکل ہے لیکن یہ بات واضح ہے کہ میسور کا پرانانام مہیش کنورو ہی ہے۔[5]


میسور بنگلور کے جنوب مغرب کی سمت تقریباd 145 کلومیٹر (90 میل) چمنڈی پہاڑیوں کے دامن میں واقع ہے اور 152 کلومیٹر (59 مربع میل) کے رقبے میں پھیلا ہوا ہے۔ میسور سٹی کارپوریشن شہر کی شہری انتظامیہ کے لیے ذمہ دار ہے، جو میسور ضلع اور میسور ڈویژن کا صدر مقام بھی ہے۔

اس نے میسور کی بادشاہی کے دار الحکومت کے طور پر 1399 سے لے کر 1956 تک تقریبا چھ صدیوں تک خدمات انجام دیں۔ بادشاہی بادشاہ کی حکومت 1760 ء اور 70 کی دہائی میں ویدیار خاندان کی حکومت تھی جب ہیدر علی اور ٹیپو سلطان اقتدار میں تھے۔ واڈیار فن اور ثقافت کے سرپرست تھے۔ ٹیپو سلطان اور حیدر علی نے بھی اس علاقے میں ریشم کا تعارف کرانے اور انگریزوں کے خلاف 4 اینگلو میسور جنگیں لڑ کر شہتوت کے درخت لگا کر شہر اور ریاست کی ثقافتی اور معاشی نمو میں نمایاں کردار ادا کیا۔ میسور کے ثقافتی ماحول اور کارناموں نے اسے کرناٹک کا ثقافتی دار الحکومت مقام حاصل کیا۔

Open in Google Translate


سیاحتی مراکز[ترمیم]

  • میسور محل
  • میسور چڑیاگھر
  • آرٹ گیلری
  • للت محل
  • چامونڈی پہاڑ
  • کارنچی جھیل
  • برنداون باغ
  • ریل میوزیئم (عجائب گھر)


میسور محل
میسور محل
میسور محل
للت محل


برنداون باغ کی تصاویر[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1.   ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں"صفحہ میسور في GeoNames ID". GeoNames ID. اخذ شدہ بتاریخ 6 اگست 2020ء. 
  2. http://bangaloremirror.indiatimes.com/news/state/news/state/mysuru-and-augsburg-to-become-twin-cities/articleshow/61345585.cms
  3. http://nashuanh.gov/ArchiveCenter/ViewFile/Item/5224
  4. http://www.unionleader.com/Nashua-committee-supports-partnering-with-sister-city-in-India
  5. انسائیکلوپیڈیا اسلام جلد دوم