ویراپن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فائل:Veerappan the poacher.jpg
پیدائش 18 جنوری 1952(1952-01-18)[1]
Gopinatham, Karnataka[2]
وفات 18 اکتوبر 2004(2004-10-18) (عمر  52 سال)[1]
Papparapatti, Tamil Nadu
وجۂ وفات Firearm
آخری آرام گاہ Moolakadu، Tamil Nadu.
قومیت Indian
وجۂ شہرت صندل کی چنگی چوری
مجرمانہ الزام قتل
اغوا
Poaching
چنگی چوری[1]
شریک حیات Muthulakshmi (m. 1990)[3]
بچے 3
انعامی رقم
50 ملین بھارتی روپیہ
گرفتاری کی صورتحال
مارا گیا
فرار 1986
دوبارہ گرفتار 2004
تبصرے 734 کروڑ بھارتی روپیہ برآمد ہوا
قتل
متاثرین 184 people (97 of them are police officials & forest officers),
900 elephants[4]
دورانیہ قتل
1962–2002
ملک ریاست
ویراپن

بھارت کے بدنام زمانہ ڈاکو ویراپن قتل کے 120 واقعات میں پولیس کو مطلوب تھے۔ لمبے چہرے اور گھنی مونچھوں والا یہ شخص سب سے ظالم اور خطرناک انسان تصور کیا جاتا رہا۔18 جنوری 1952ء کو گاؤں گوپی ناتم تامل ناڈو میں پیدا ہوئے۔ ویراپن نے ہاتھی دانت بیچنے کے کاروبار کے ساتھ جرائم کی دنیا میں قدم رکھا کہا جاتا ہے کہ ویراپن نے چودہ سال کی عمر میں پہلا ہاتھی مارا تھا۔ لوگوں کا خیال ہے کہ اس کے بعد سے انہوں نے تقریباً دو ہزار ہاتھی مارے ۔

علاقہ[ترمیم]

ہاتھی دانت سے ویراپن صندل کی لکڑی کی اسمگلنگ میں آئے اور اس کے بعد اس کے بعد قتل اور اغوا کا سلسلہ شروع ہوا۔ ویراپن پر کروڑوں روپئے کے ہاتھی دانت اور صندل کی لکڑی کی اسمگلنگ کا الزام تھا۔ ویراپن جنوبی کرناٹک اور تمل ناڈو(تا مل ناڈو) کے جنگلوں میں سرگرم تھے۔ لیکن کبھی کبھی وہ کیرالہ کے جنگلوں تک بھی پہنچ جاتے تھے۔ ویراپن کا گھر بار بھی انہیں گھنے جنگلوں میں تھا۔ ویر اپن کی حمایت کرنے والے ویراپن کا موازنہ رابن ہڈ سے کرتے۔

خوف[ترمیم]

ویراپن کو پکڑنے میں اس لیے بھی دشواری آتی تھی کیونکہ ان کے مخبروں کا جال بہت مضبوط تھا اور وہ ہر وقت حفاظتی دستوں سے ایک قدم آگے رہتے تھے۔ ویراپن کا علاقے میں اتنا خوف تھا کہ لوگ خوف سے زبان نہیں کھولتے تھے اور یہی حفاظتی دستوں کی سب سے بڑی پریشانی تھی۔ ویراپن کے گروہ کے لوگ معمولی سا شک ہونے پر کسی کو بھی قتل کر دیتے تھے۔

گرفتاری کی کوششیں[ترمیم]

1990 میں تین ریاستوں نے ملکر ویراپن کے خلاف ایک کارروائی شروع کی تھی جس میں 15000 سپاہیوں کو لگایا گیا تھا۔ تین ریاستوں کی اس مشترکہ کارروائی کے دباؤ میں آکر ویر اپن نے خود کو حکام کے حوالے کرنے کی پیشکش کی تھی جس کے عوض میں انہوں نے اپنے خلاف تمام کیس ختم کرنے کے ساتھ ایک بڑی رقم اور ہتھیار ساتھ رکھنے کا مطالبہ کیا تھا۔ ویراپن کے یہ مطالبات مسترد کر دئے گئے اور اس کے جواب میں انہوں نے محکمہء جنگلات کے نو لوگوں کو اغوا کر لیا تھا۔

ویراپن کوصرف ایک بار 1986میں گرفتار کیا جا سکا تھا۔ جس کے بعد ویراپن چار پولیس والوں کا قتل کر کے فرار ہو گئے تھے۔ دسمبر دو ہزار دو میں انہوں نے جنوبی ریاست کرناٹک کے وزیر ایچ ناگپا کو اغوا کرکے ہلاک کر دیا تھا۔ ویراپن نے جنوبی ہندوستان کے مشہور اداکار راجکمار کو اغوا کرکے سنسنی پھیلا دی تھی۔ لیکن تین مہینے بعد ان کو رہا کر دیا تھا۔ حکومت ویراپن کو پکڑنے میں اب تک گیارہ کروڑ روپئے خرچ کیے۔

ہلاکت[ترمیم]

18 اکتوبر 2004ء کو تامل ناڈو اور کرناٹک کی سرحد پر ویراپن اپنے تین ساتھیوں کے ساتھ ایک پولیس مقابلے میں مارے گئے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "Saravanan Jayabalan"۔ nndb.com۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  2. Mark Oliver۔ "Death of a 'demon'"۔ The Guardian۔
  3. M T Shiva Kumar۔ "Muthulakshmi to bring out book on 'police atrocities'"۔ The Hindu۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2013۔
  4. The Telegraph - Calcutta : Look