ٹریور ہونز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ٹریور ہونز
Trevor Hohns.jpg
ذاتی معلومات
پیدائش23 جنوری 1954ء (عمر 68 سال)
ننداہ, کوئنزلینڈ, آسٹریلیا
بلے بازیبائیں ہاتھ کے بلے باز
گیند بازیلیگ بریک گوگلی گیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ26 جنوری 1989  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
آخری ٹیسٹ24 اگست 1989  بمقابلہ  انگلینڈ
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ فرسٹ کلاس کرکٹ
میچ 7 152
رنز بنائے 136 5,210
بیٹنگ اوسط 22.66 27.13
100s/50s 0/0 2/30
ٹاپ اسکور 40 103
گیندیں کرائیں 1,528 24,172
وکٹ 17 288
بولنگ اوسط 34.11 37.15
اننگز میں 5 وکٹ 0 11
میچ میں 10 وکٹ 0 1
بہترین بولنگ 3/59 6/56
کیچ/سٹمپ 3/– 86/–
ماخذ: CricInfo، 19 August 2020

ٹریور وکٹر ہونز (پیدائش:23 جنوری 1954ءنندہ، برسبین، کوئینز لینڈ) کوئنز لینڈ اور آسٹریلیا کے سابق کرکٹر ہیں جنہوں نے سات ٹیسٹ میچوں میں بطور سپن بولر کھیلا، اور بعد میں آسٹریلیا کے سلیکٹرز کے چیئرمین رہے۔ اپنے کیریئر کے شروع میں جب ہونز کوئنز لینڈ کرکٹ کے کنارے پر ایک نسبتاً غیر واضح کھلاڑی تھا، اس نے 1985-86ء اور 1986-87ء میں نسل پرستانہ دور حکومت کے دوران جنوبی افریقہ کی متنازعہ سیریز کے دوران باغی آسٹریلیائیوں کے لیے کھیلنے کے لیے سائن اپ کیا۔ ہونز ٹورنگ پارٹی میں سابق آسٹریلوی ٹیسٹ لیفٹ آرم اسپنر ٹام ہوگن کے ساتھ صرف دو اسپن باؤلرز میں سے ایک تھے۔ ہونز ان باغی آسٹریلین میں سے ایک تھے جن پر دو سالوں کے لیے ریاستی اور ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے پر پابندی عائد کی گئی تھی۔ ہونز نے 1989ء میں اپنے تمام 7 ٹیسٹ کھیلے،

دیر سے ڈیبیو[ترمیم]

اس نے 35 سال کی عمر میں اپنا بین الاقوامی ڈیبیو کیا۔ اور ویسٹ انڈیز کے خلاف 1988-89ء کی سیریز کے آخری دو ٹیسٹ اور انگلینڈ میں 1989ء کی ایشز سیریز کے پانچ ٹیسٹ کھیلے۔ اگرچہ اس سیریز میں باؤلنگ کی زیادہ تر کامیابی ٹیری ایلڈرمین جیف لاسن اور مرو ہیوز کی تیز گیند بازی کی وجہ سے تھی، ہونز نے 11 وکٹیں حاصل کیں، اور بلے سے اس کی اوسط 31.75 تھی[1] ہونز بھی ایک آسان لیٹ آرڈر بلے باز تھا، جو اکثر شیفیلڈ شیلڈ کرکٹ میں کوئنز لینڈ کے لیے چھٹے نمبر پر بلے بازی کرتا تھا۔ انہوں نے 152 میچوں میں دو سنچریوں اور 30 ​​نصف سنچریوں کے ساتھ اپنے فرسٹ کلاس کیریئر کا اختتام کیا، حالانکہ ان کی سات اننگز میں 40 ان کا بہترین ٹیسٹ سکور تھا۔

بطور سلیکٹر[ترمیم]

ہونز نے بطور سلیکٹر آسٹریلوی کرکٹ پر بھی اثر ڈالا ہے۔ وہ 1994ء سے 2006ء تک اور 2014ء سے 2021ء تک سلیکٹر رہے ہیں۔ اور 1996ء سے 2006[2] اور 2016ء سے 2021ء تک سلیکٹرز کے چیئرمین رہے[3] بطور چیئرمین اپنی پہلی مدت میں انہوں نے کئی سخت فیصلے کیے، جن میں آئن ہیلی اور مارک واہ کے کیریئر کو ختم کرنا اور اسٹیو واہ کو ون ڈے کی کپتانی سے ہٹانا بھی شامل تھا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]