مندرجات کا رخ کریں

پاکستان خلائی و بالافضائی تحقیقی ماموریہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
خلائی و بالائے فضائی تحقیقاتی مأموریہ
سپارکو کا ہیڈ کوارٹر کراچی
مخففسپارکو
مالکحکومت پاکستان
قیام16 ستمبر 1961؛ 62 سال قبل (1961-09-16)
صدر دفاترسپارکو روڈ، کراچی، سندھ، پاکستان
Primary spaceportسونمیانی ٹرمینل لانچ
شعار"قومی سلامتی، معیشت اور معاشرے کے لیے خلائی ٹیکنالوجی اور ایپلی کیشنز میں خود انحصاری حاصل کرنے کی کوشش کریں۔"
منتظممیجر جنرل عامر ندیم ایچ آئی (ایم)، چیئرمین
میزانیہIncrease روپیہ 7.3951 ارب (US$69.22 ملین)
ویب سائٹwww.suparco.gov.pk
{{{seal_cap}}}

پاکستان خلائی و بالافضائی تحقیقی ماموریہ یا سپارکو (انگریزی: Pakistan Space & Upper Atmosphere Research Commission) خلائی تحقیق کا پاکستانی ادارہ ہے۔ یہ ادارہ پاکستان کی بالائی فضاء اور خلائی تحقیق کے سلسلہ میں کراچی میں ستمبر 1961ء کو قائم کیا گیا۔ اس ادارے نے اب تک خلائی موسمیاتی راکٹ چھوڑنے کے علاوہ 1991ء میں پاکستان کا پہلا مصنوعی سیارہ بھی چھوڑا۔ پہلا راکٹ رہبر اول 7 جون، 1962ء کو خلاء میں چھوڑا گیا تھا۔ 1988ء تک پاکستان کے اس مقتدر ادارے کے ذریعے 200 موسمیاتی سیارے خلاء میں چھوڑَ گئے۔ یہ سیارچے 20 سے 550 کلومیٹر تک چھوڑے گئے ہیں۔

1999ء اور 2002ء میں سپارکو کے سائنس دانوں نے شاہین میزائل کی تیاری کے سلسلے میں بھی مدد کی۔

پاکستان میں خلائی سائنس اور تحقیق کی ترقی میں معاونت کے لیے 1961 میں قائم کی گئی، ایجنسی نے 1964 میں ہی کام کرنا شروع کیا۔ اس نے 1960 کی دہائی کے اوائل میں ساؤنڈنگ راکٹ درآمد اور لانچ کرنا شروع کیے اور راکٹ انجنوں کو بنانے کی صلاحیت حاصل کی۔ تاہم، ایجنسی نے تحقیق کے میدان میں محدود پیش رفت کے ساتھ اپنے وجود کے ابتدائی 30-35 سالوں کے لیے کم پروفائل رکھا اور سیٹلائٹ ٹیکنالوجی میں اس کی پیشرفت بھی نسبتاً دیر سے شروع ہوئی۔

دیگر کامیابیاں

[ترمیم]

ملک کا پہلا سیٹلائٹ، بدر-I، سپارکو نے بنایا تھا اور اسے 16 جولائی 1990 کو چین کے زیچانگ سیٹلائٹ لانچ سینٹر سے لانچ کیا گیا تھا، جس نے پاکستانی سائنسدانوں کو ٹیلی میٹری اور دیگر سیٹلائٹ ٹیکنالوجیز میں قابل قدر تجربہ فراہم کیا تھا۔

سپارکو نے پاکستان کے میزائلوں کی تیاری میں اہم کردار ادا کیا۔ 80 کی دہائی کے اوائل میں سپارکو نے حتف I اور حتفII میزائل تیار کرنا شروع کر دیے۔ ایم 11 میزائل چین سے سیکورٹی ضروریات کے لیے منگوائے گئے اور چین کی مدد سے میزائل بنانے کی فیکٹری بھی بنائی گئی۔

اس دوران خلائی پروگرام کو بہت سے دھچکے، مشکلات اور مسائل کا سامنا کرنا پڑا جس کی وجہ سے اس کے خلائی پروگرام کی پیشرفت جزوی طور پر سست ہو گئی۔ سپارکو نے سائنسی تحقیق کے لیے راکٹ ایندھن کی تھوڑی مقدار درآمد کی اور اسے برقرار رکھا اور 1999 میں اعلان کیا کہ وہ تین سالوں میں اپنا سیٹلائٹ اور لانچ گاڑیاں متعارف کرائے گا۔ تاہم اس پروگرام کے بارے میں مزید تفصیلات کبھی سامنے نہیں آئیں۔ ایجنسی اب 2011 سے خلائی پروگرام 2040 پر عمل پیرا ہے جس کا واحد مقصد صرف دوسرے ممالک سے زیادہ سے زیادہ سیٹلائٹ لانچ کرنا ہے۔ سپارکو کو پاکستان کے اندر قابلیت کے لحاظ سے اپنے ہندوستانی اور چینی ہم منصبوں کے مقابلے میں کامیاب نہ ہونے کی وجہ سے خاصی تنقید کا سامنا ہے، یہ دونوں ممالک حالیہ دہائیوں میں بڑی خلائی طاقتوں کے طور پر ابھرے ہیں۔

اس دوران خلائی پروگرام کو بہت سے دھچکے، مشکلات اور مسائل کا سامنا کرنا پڑا جس کی وجہ سے اس کے خلائی پروگرام کی پیشرفت جزوی طور پر سست ہو گئی۔ سپارکو نے سائنسی تحقیق کے لیے راکٹ ایندھن کی تھوڑی مقدار درآمد کی اور اسے برقرار رکھا اور 1999 میں اعلان کیا کہ وہ تین سالوں میں اپنا سیٹلائٹ اور لانچ گاڑیاں متعارف کرائے گا۔ تاہم اس پروگرام کے بارے میں مزید تفصیلات کبھی سامنے نہیں آئیں۔ ایجنسی اب 2011 سے خلائی پروگرام 2040 پر عمل پیرا ہے جس کا واحد مقصد صرف دوسرے ممالک سے زیادہ سے زیادہ سیٹلائٹ لانچ کرنا ہے۔ سپارکو کو پاکستان کے اندر قابلیت کے لحاظ سے اپنے ہندوستانی اور چینی ہم منصبوں کے مقابلے میں کامیاب نہ ہونے کی وجہ سے خاصی تنقید کا سامنا ہے، یہ دونوں ممالک حالیہ دہائیوں میں بڑی خلائی طاقتوں کے طور پر ابھرے ہیں۔

تاریخ

[ترمیم]

تخلیق

[ترمیم]

1957 میں سوویت یونین کے پہلے مصنوعی سیارہ سپوتنک 1 کے کامیاب لانچنگ کے بعد، پنجاب یونیورسٹی کے شعبہ طبیعیات کے سینئر طبیعیات دانوں کی طرف سے خلائی سائنس اور ایروناٹیکل ڈیولپمنٹ میں آزادانہ تحقیق کا آغاز کیا گیا تھا، تاہم سیاسی عدم استحکام کی وجہ سے عدم استحکام، پروگرام کے قیام کے لیے حکومت پاکستان کی جانب سے سنجیدہ اقدامات نہیں کیے گئے۔ 1958 سے، نوبل انعام یافتہ عبد السلام نے پاکستان کی سائنس پالیسی کی ترقی میں اہم اور بااثر کردار ادا کیا۔ پروفیسر سلام صدر جان ایف کینیڈی کی دعوت پر امریکا کے سرکاری دورے پر صدر ایوب خان کے ساتھ تھے۔ اس کے بعد امریکا نے چاند پر سوویت یونین کو شکست دینے کے لیے اپنا اپالو پروگرام شروع کیا۔ ناسا نے اوپری ماحول کے ڈیٹا میں خلاء کے سوراخ کو محسوس کرتے ہوئے بحر ہند سے متصل ممالک کو راکٹ رینج قائم کرنے اور اس طرح کے ڈیٹا کو حاصل کرنے کے لیے راکٹ رینج قائم کرکے بالائی ماحول کی راکٹ سے پیدا ہونے والی تحقیقات میں ناسامیں شامل ہونے کی دعوت دی۔ پروفیسر سلام نے پی اے ای سی کے ایک سینئر انجینئر طارق مصطفی کو جو اس وقت اوکریج ٹینیسی میں یو ایس اے ای سی کی اٹامک انرجی لیبارٹریز میں تھے، کو واشنگٹن ڈی سی میں ناسا کے ہیڈ کوارٹر میں ہونے والی میٹنگوں میں ان کے ساتھ شامل ہونے کی دعوت دی۔ ناسا نے طارق کو پاکستان میں راکٹ رینج قائم کرنے کے لیے ایک پروگرام اور منصوبہ تیار کرنے کے لیے ورجینیا میں ان کے والپس آئی لینڈ راکٹ رینج کا دورہ کرنے کی دعوت دی۔ پروفیسر سلام نے طارق کی رپورٹ صدر ایوب خان کو منظوری کے لیے پیش کی۔

اس کے نتیجے میں پاکستان کے خلائی پروگرام کا قیام عمل میں آیا جو مسلم دنیا کے ساتھ ساتھ ترقی پزیر دنیا میں اپنی نوعیت کا پہلا پروگرام تھا۔ اس کے نتیجے میں 16 ستمبر 1961 کو اسپیس اینڈ اپر ایٹموسفیئر ریسرچ کمیشن (جسے سپارکو کہا جاتا ہے) کا قیام عمل میں آیا، عبد السلام اس کے پہلے ایڈمنسٹریٹر اور ڈائریکٹر تھے۔ پاکستان اٹامک انرجی کمیشن ( پی اے ای سی) میں اسپیس سائنسز ریسرچ ونگ کے نتیجے میں خلائی سائنس سے متعلق ایک کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ چند ہفتوں کے اندر، یہ کمیٹی صدر ایوب خان کے صدارتی ایگزیکٹو آرڈر (پی ای او) کے ذریعے قائم کی گئی جسے پی اے ای سی کے شریک چیئرمین عشرت عثمانی سے مخاطب کیا گیا۔ راکٹ ٹیسٹ فائرنگ کا پروگرام پی اے ای سی کے چیئرمین کو سونپا گیا۔

مزید دیکھیے

[ترمیم]