مندرجات کا رخ کریں

کچے کے ڈاکو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

کچے کے ڈاکو سندھ اور پنجاب، پاکستان کے دریائی پٹی میں سرگرم ایک مجرم گروہ ہے۔ وہ اغوا، بھتہ خوری اور قتل سمیت اپنی پرتشدد سرگرمیوں کے لیے مشہور ہیں۔

مجرمانہ سرگرمیاں[ترمیم]

ڈاکو اپنے وحشیانہ ہتھکنڈوں کے لیے بدنام ہیں۔ وہ شہریوں اور سیکورٹی اہلکاروں کو اغوا کرتے ہیں، جسمانی تشدد کی ویڈیوز بناتے ہیں اور لاکھوں روپے تاوان کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ایسے معاملات میں جہاں تاوان ادا نہیں کیا جاتا ہے، یرغمالیوں کو بے دردی سے قتل کر دیا جاتا ہے۔ [1]ڈاکو اب صرف ڈاکوؤں میں ملوث نہیں ہیں بلکہ انھوں نے اپنی کارروائیوں کو مختلف غیر قانونی سرگرمیوں میں تبدیل کر دیا ہے۔ وہ محبت یا کاروبار میں ہونے کا بہانہ کرکے لوگوں کو دھوکا دینے کے لیے بھی جانے جاتے ہیں۔ [2] گھوٹکی ڈاکو فقیر ناصر شار باقاعدگی سے فیس بک پر پولیس کو دھمکانے اور اپنی شر برادری اور ڈاکوؤں کی حمایت کرنے کے لیے آتا ہے۔ شار کو ڈاکوؤں کا ترجمان سمجھا جاتا ہے۔ ان کے ساتھ، گینگسٹر نہ صرف اپنی سرگرمیوں کے لیے سوشل میڈیا کا استعمال کر رہے ہیں، بلکہ کچھ ویڈیوز میں وہ سندھی اور ساریکی گانوں کی ڈبنگ کے ساتھ ہتھیار بھی دکھاتے ہیں، جو سوشل میڈیا پر شیئر کیے جاتے ہیں۔ [3]

ڈاکوؤں نے بہت سے شہریوں کو نشانہ بنایا ہے۔ ان کے خلاف کئی بڑے پیمانے پر کارروائیوں کے باوجود، وہ جنوبی اضلاع میں کام جاری رکھے ہوئے ہیں۔ [2] ایچ آر سی پی کی فیکٹ فائنڈنگ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ڈاکوؤں کو سالانہ ایک ارب روپے تاوان ملتا ہے۔ 2022 ءکے دوران، ڈاکوؤں نے تاوان کے لیے 300 افراد کو اغوا کر لیا۔ [4]

ہتھیار[ترمیم]

ڈاکو مبینہ طور پر جدید ترین ہتھیاروں سے لیس ہیں جن میں مارٹر، راکٹ سے چلنے والے دستی بم (آر پی جی) اور طیارہ شکن بندوقیں شامل ہیں۔ ان کے ہتھیاروں کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ مقامی پولیس سے بہتر ہیں، جو قانون نافذ کرنے والے اداروں کے لیے ایک اہم چیلنج ہیں۔ [5] نومبر 2022ء میں ڈاکوؤں کے حملے میں ڈی ایس پی عبد الملک بھوٹو، ایس ایچ او عبد الملک کامانگر، ایس ایچ اے دین محمد لاگھری اور دو پولیس کانسٹیبل سمیت پانچ پولیس اہلکار شہید ہوئے۔ [6][7] مئی 2023ء میں، گھوٹکی میں ان ڈاکوؤں نے دو افراد کو اغوا کر لیا تھا۔ [8] مارچ 2024ء میں، ایک پرائمری ٹیچر، اللہ راکھیو نندوانی، جس نے صوبہ سندھ کے ضلع کشمور کنڈکوٹ میں کچے ڈاکوؤں کے خلاف آواز اٹھائی تھی، کو مبینہ طور پر کچے ڈاکوٹوں نے قتل کر دیا تھا۔ [9]

چیلنجز اور جوابی اقدامات[ترمیم]

ڈاکو مقامی حکام کے لیے ایک بڑا چیلنج بنے ہوئے ہیں، ان کے خلاف کئی کریک ڈاؤن کے باوجود۔ [10] ان کی سرگرمیوں نے مقامی آبادی میں خوف پیدا کیا ہے اور ان کا اثر و رسوخ بڑھتا نظر آتا ہے۔ خطرے سے مؤثر طریقے سے نمٹنے میں ناکامی پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ [11] حکومت سندھ ان ڈاکوؤں کی سرگرمیوں کو روکنے کے لیے فعال طور پر کام کر رہی ہے۔ تاہم اپریل 2024 ءمیں سندھ کے سابق وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ جب تک کچھ میں زمینداروں کے خلاف کارروائی نہیں کی جائے گی، ڈاکوؤں کا خاتمہ نہیں ہوگا۔ [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "کچے اور پکے کے ڈاکو" 
  2. ^ ا ب پ "کچے میں جب تک وڈیروں کیخلاف کارروائی نہیں ہوگی، ڈاکو ختم نہیں ہونگے: سابق وزیر داخلہ سندھ" [Until action is taken against Wadiras in Kacha, dacoits will not end: Former Home Minister Sindh]۔ urdu.geo.tv 
  3. "سندھ میں کچے کے ڈاکو کاروبار یا محبت کا جھانسہ دے کر کیسے لوگوں کو اغوا کرتے ہیں" [How do bandits in Sindh kidnap people on the pretense of business or love?]۔ 9 June 2023 
  4. "کچے کے ڈاکو سالانہ ایک ارب روپے تاوان وصول کرتے ہیں: ایچ آر سی پی رپورٹ"۔ Independent Urdu۔ September 8, 2023 
  5. "Bandits quipped with 'advanced weaponry'"۔ 2 June 2023 
  6. "DSP, two SHOs among five cops dead in robbers' attack in Ghotki"۔ 7 November 2022 
  7. "Five cops killed, two injured in attack on police camp in Ghotki"۔ 6 November 2022 
  8. "Robbers kidnap two in Ghotki"۔ May 2023 
  9. "کندھ کوٹ میں کچے کے ڈاکوؤں کے خلاف آواز بلند کرنے والا استاد قتل" [In Kandhkot, the teacher who raised his voice against the raw material robbers was killed]۔ 19 March 2024 
  10. "کچے کے ڈاکوؤں کے خلاف آپریشن اعلان کے بعد بھی شروع کیوں نہیں ہوسکا؟" [Why the operation against the dacoits of Kacha could not start even after the announcement?]۔ 20 September 2023 
  11. "کچے اور پکے کے ڈاکو" [Kachy aur Pakky Dako- Raw and cooked bandits]