مندرجات کا رخ کریں

ضلع گونڈہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(گونڈہ ضلع سے رجوع مکرر)
اترپردیش کا ضلع
اترپردیش میں محل وقوع
اترپردیش میں محل وقوع
ملکبھارت
ریاستاترپردیش
انتظامی تقسیمڈویژن
صدر دفترگونڈہ، اترپردیش
تحصیلیں4
حکومت
 • لوک سبھا حلقےگونڈہ، قیصر گنج (جزوی)
رقبہ
 • کل4,448 کلومیٹر2 (1,717 میل مربع)
آبادی (2011)
 • کل3,431,386
 • کثافت770/کلومیٹر2 (2,000/میل مربع)
آبادیات
 • خواندگی60.0 فیصد
ویب سائٹسرکاری ویب سائٹ

گونڈہ ضلع (انگریزی: Gonda district) بھارت کا ایک ضلع جو اتر پردیش میں واقع ہے۔

صنعتیں

[ترمیم]

یہاں کئی شوگر ملیں، چاول کی ملیں اور بہت سی دیگر چھوٹی صنعتیں اور دستکاری کی صنعتیں ہیں۔ بھارت کی چھ انڈین ٹیلیفون انڈسٹریز میں سے ایک منکاپور میں واقع ہے، اور بھارت کی سب سے بڑی شوگر مل کندرکھی میں واقع ہے۔[7]

2006 میں وزارت پنچایتی راج نے گونڈہ کو ملک کے 250 پسماندہ ترین اضلاع میں شامل کیا (کل 640 میں سے)۔ یہ اتر پردیش کے 34 اضلاع میں سے ایک ہے جو اس وقت پسماندہ علاقہ جات گرانٹ فنڈ پروگرام (BRGF) سے فنڈز حاصل کر رہا ہے۔

تاریخ

[ترمیم]

گونڈہ اصل میں نظامت گورکھپور کا حصہ تھا، لیکن جب 1801 میں گورکھپور کو برطانوی حکومت کے حوالے کیا گیا، تو گونڈا کو بہرائچ ضلع کے ساتھ ملایا گیا۔[2] 1856 میں جب برطانویوں نے اودھ کو الحاق کیا تو انہوں نے اسے ایک الگ ضلع بنایا۔[2] 1875 میں، برطانوی حکومت نے گونڈا ضلع کے کچھ حصے جو بگہورہ تال اور آراہ ندی کے درمیان تھے، نیپال کو دے دیے۔[2]حالیہ طور پر، اس علاقے میں بدھ مت کے ابتدائی دنوں کے قدیم آثار ملے ہیں، جن میں شراوستی بھی شامل ہے۔[3] گونڈا نے بھارتی جدوجہد آزادی میں اہم کردار ادا کیا، اس علاقے کے بہت سے لوگ فعال طور پر شامل رہے: جن میں راجہ دیوی بکش سنگھ، جو نیپال بھاگ گئے،[4] چاندرا شیکھر آزاد جیسے آزادی کے جنگجو جنہوں نے ضلع میں پناہ لی، اور راجندر لہری جنہیں گوندہ جیل میں قید کیا گیا اور پھانسی دی گئی۔[citation needed]حالیہ دنوں میں، ضلع نے بھارت بھر میں میڈیا کی توجہ حاصل کی جب 1982 کے گونڈہ انکاؤنٹر کے نام سے جانے جانے والے 13 لوگوں کے قتل کے طویل مقدمے نے طول پکڑا۔[5][6]

آبادی

[ترمیم]

گونڈہ ضلع کی مجموعی آبادی 3,431,386 افراد پر مشتمل ہے۔2011 کی مردم شماری کے مطابق، ضلع گونڈہ کی آبادی 3,433,919 ہے، جو کہ پاناما ملک یا امریکی ریاست کنیکٹیکٹ کے برابر ہے۔ اس کا بھارت میں (کل 640 میں سے) 95واں رینک ہے۔ ضلع میں کل 1,679,99 خواندہ افراد ہیں جو کل آبادی کا 48.9% بنتے ہیں۔ 0 سے 6 سال کی عمر کے بچوں کی تعداد 572,386 ہے۔ مؤثر خواندگی کی شرح (7 سال اور اس سے زیادہ عمر کی آبادی) 58.7% ہے۔ ضلع کی آبادی کی گنجانی 857 باشندے فی مربع کلومیٹر (2,220/مربع میل) ہے۔ 2001 سے 2011 کے درمیان آبادی کی شرح میں اضافہ 24.17% ہے، جو کہ اتر پردیش کے اوسط (20.09%) سے زیادہ ہے۔ گونڈہ میں ہر 1000 مردوں کے مقابلے میں 921 خواتین کی جنسی تناسب ہے، اور 0-6 سال کی عمر کے بچوں میں جنسی تناسب 926 ہے، جو کہ ریاستی اوسط (908 اور 899) سے زیادہ ہے۔ 6.55% آبادی شہری علاقوں میں رہتی ہے۔ شیڈولڈ کاسٹس کی آبادی میں 15.49% حصہ ہے۔ ضلع گونڈہ کا انسانی ترقی انڈیکس بہت کم ہے۔

مذہب

[ترمیم]

گوندہ ضلع میں مذاہب (2011)

مذہب فیصد

ہندو مت 79.77%

اسلام 19.76%

دیگر یا غیر مذکور 0.47%

زبانیں

[ترمیم]

ضلع کی سرکاری زبان ہندی ہے اور اضافی سرکاری زبان اردو ہے۔ 2011 کی مردم شماری کے وقت، ضلع کی 51.03% آبادی نے اپنی پہلی زبان کے طور پر ہندی بولی، 16.04% نے اودھی اور 32.68% نے اردو بولی۔

ضلع میں بولی جانے والی زبانوں میں اودھی شامل ہے، جو ہندی تسلسل کی ایک زبان ہے جسے بنیادی طور پر اودھ کے علاقے میں 38 ملین سے زائد افراد بولتےاور ہندی ہیں۔۔

تحصیلیں

[ترمیم]

گوندہ ضلع میں چار تحصیلیں ہیں۔ 1)کرنل گنج

2)گوندہ

3)منکاپور

4)تراب گنج

بلاک

[ترمیم]

گوندہ ضلع 16 بلاکوں پر مشتمل ہے: 1)ببھن جوٹ

2)بیلسر

3)چھاپیہ

4)کرنل گنج

5)ہلدھرماو

6)اتیاٹھوک

7)جھنجھری

8)کٹرا بازار

9)منکاپور

10)مجہنا

11)نواب گنج

12)پندری کرپال

13)پارس پور

14)رپئ ڈ یھ

15)تراب گنج

16)وزیر گنج

تعلیم

[ترمیم]

موثر شرح خواندگی (7+) 58.71% ہے، جبکہ ریاستی اوسط 69.72% ہے۔ حکومت ہند نے پسماندہ اضلاع کے لیے "بیک ورڈ ریجن گرانٹ فنڈ" کے تحت ایک خصوصی اسکیم بنائی ہے۔ گوندہ اس فنڈ کے وصول کنندگان میں سے ایک ہے۔

ادارے اور اسکول

[ترمیم]

ایل بی ایس ڈگری کالج مینا شاہ انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی اینڈ مینجمنٹ (ایم ایس آئی ٹی ایم) ڈگری کالج سروستی دیوی ناری گیانستھالی پی۔جی۔ کالج سینٹ زاویئرز سینیئر سیکنڈری اسکول (بدترین نجی اسکول)

طبّی سہولیات و صحت

[ترمیم]

گوندہ میں 15 ہسپتال، 27 آیورویدک ہسپتال، 11 ہومیوپیتھک ہسپتال اور 2 یونانی ہسپتال ہیں، اس کے علاوہ 66 سرکاری پرائمری ہیلتھ سینٹرز ہیں۔ گوندہ ان 100 اضلاع کی فہرست میں شامل ہے جو 2011 کی مردم شماری کے مطابق شیر خوار بچوں کی اموات کی شرح کے لحاظ سے سرفہرست ہیں۔ یہ ان 57 اضلاع میں بھی شامل ہے جہاں زچگی کے دوران اموات کی شرح سب سے زیادہ ہے۔

گوندہ کو صفائی کے سرویکشن 2022 کے مطابق پورے اتر پردیش میں سب سے صاف نگر پالیکا قرار دیا گیا ہے، جبکہ 2017 کے سروے کے مطابق یہ ملک میں آخری پوزیشن پر تھا۔

پکوان

[ترمیم]

یہاں کے خاص پکوانوں میں اوددھ کے نواب کے پکوان شامل ہیں۔یہاں شادیوں کے موقع پر مہمانوں کی ضیافت کے لیے پکوان تیار کیے جاتے ہیں۔جن میں گوشت کا سالن،نان بائی روٹی، كباب ،چکن چلّی ،باسمتی چاول ،اردکی دال وغیرہ شامل ہیں۔عید کے موقع پر گھروں میں شیر خرمہ،قوامی سویاں،پلاؤ بریانی وغیرہ پکوان بنائے جاتے ہیں۔

حوالہ جات

[ترمیم]