ہکیجا تراجلک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ہکیجا تراجلک
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1936  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
چاپلینا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 8 جنوری 1993 (56–57 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
سرائیوو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Bosnia and Herzegovina.svg بوسنیا و ہرزیگووینا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان،  ماہر معاشیات  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

ہکیجا تراجلک (Hakija Turajlić) بوسنیا کا ایک سیاست دان، ماہر معاشیات اور تاجر تھا۔ اسے 1993 میں اس وقت قتل کیا گیا جب وہ ادارہ اقوام متحدہ کی حفاطت میں بکتربند گاڑی میں سفر کر رہا تھا۔ اپنے قتل کے وقت وہ بوسنیا کا نائب وزیر اعظم تھا۔ ہکیجا تراجلک اقوام متحدہ کی امن فوج کے تین فرانسیسی سپاہیوں کے ہمراہ سفر کر رہا تھا جب سرب افوج نے انہیں روکا۔ اگر فرانسیسی سپاہی بکتر بند گاڑی کا دروازہ اندر سے نہ کھولتے تو شائید یہ قتل ممکن نہ ہوتا۔ فرانسیسی جنرل Philippe Morillon جو اقوام متحدہ کی وہاں افواج کا سب سے بڑا کمانڈر تھا نے بیان دیا کہ ہم نے جوابی فائرنگ اس لیے نہیں کی کیونکہ ہماری جان کو خطرہ نہیں تھا۔[1]

جب یہ فرانسیسی سپاہی واپس وطن پہنچے تو انکا شاندار استقبال کیا گیا۔ قتل کرنے والے سرب کا نام Goran Vasić تھا جسے گرفتار کرنے کی کبھی کوئی کوشش نہیں کی گئی۔ سرب حکومت اور اقوام متحدہ نے اس قتل کی تفتیش میں بوسنیا کی حکومت سے کوئی تعاون نہیں کیا۔ قاتل کو 2002 میں الزام سے بری الزمّہ قرار دیا گیا۔

سرائیو کی علی پاشا مسجد میں ہکیجا تراجلک کی قبر پر ایک صحافی افسردہ بیٹھا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]