ہگز بوزون

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(ہگ بوسون سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search

بگز بوزون یا ہیگ بوسون، ذراتی طبیعیات میں ایک فوضی عددیہ عنصری ذرہ (scalar elementary particle) ہے۔ پہلے پہل اس کے وجود کی پیشنگوئی معیاری نمونہ کے نظریہ سے حاصل ہونے والے مشاہدات کی بنیاد پر کی گئی تھی۔ان کے وجود کے بارے میں سب سے پہلے پیشنگوئی ایک انگلستانی طبیعیات داں، پیٹر ہگ (Peter Higgs) نے 1964ء میں کی تھی اور اسی کے نام کی نسبت سے ان ذرات کو ہگ بوسون کہا جاتا ہے۔ سائنس دان پچھلی کئی دہائیوں سے ہگز بوزون کی تلاش میں تھے- کوانٹم فزکس کے اسٹینڈرڈ ماڈل میں یہ واحد ذرہ تھا جسے دریافت کرنا انتہائی مشکل ثابت ہوا- لیکن بالاخر اسے سنہ 2012 میں دریافت کر لیا گیا- اس کی دریافت پر پیٹر ہگز اور اسے دریافت کرنے والی ٹیم کو نوبل انعام سے نوازا گیا-

Standard Model کے مطابق بنیادی ذرات۔ صرف فوٹون اور گلواون غیر مادی (mass less) ذرات ہیں۔

ہگز میکینزم کی مدد سے ایٹمی ذرات کی کمیت (mass) کی وضاحت ممکن ہو جاتی ہے۔
ہگز بوزون انتہائی غیر مستحکم یعنی unstable ذرہ ہے اور پیدا ہونے کے فوراً بعد decay ہو جاتا ہے- اس کی ہاف لائف صرف ایک سو یوکٹوسیکنڈ ہے- ایک یوکٹوسیکنڈ اتنا کم وقفہ ہے کہ ایک سیکنڈ میں 1000000000000000000000000 یوکٹوسیکنڈ ہوتے ہیں (اس عدد میں 1 کے بعد چوبیس صفر ہیں)- گویا ہگز بوزون پیدا ہونے کے فوراً بعد ٹوٹ جاتا ہے- تاہم اب سرن کی ایٹلیس نامی تجربہ گاہ میں ہگز بوزون کے اس decay کا بھی مشاہدہ کر لیا گیا ہے اور اس کے ٹوٹنے سے پیدا ہونے والے باٹم قوارکس کے جوڑے (pair of bottom quarks) بھی پہچان لیے گئے ہیں- اس دریافت کو LHC میں کیے گئے تجربات میں سب سے مشکل تجربہ قرار دیا جا رہا ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]