ایف-16

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
ایف-16 فالکن
F-16-Fighting-Falcon.jpg
عمومی معلومات
قسم لڑاکا جہاز
بنانے والی کمپنی لاکہیڈ مارٹن
استعمال کرنے والے ممالک امریکہ، پاکستان، مصر، اسرائیل اور چند دیگر ممالک
حالت فضائیہ میں شامل
قیمت 18.8 ملین ڈالر

F-16 ہر قسم کے جنگی کام انجام دینے والا طیارہ ہے۔ اسے امریکہ کی ایک کمپنی جنرل ڈائینامکس نے بنایا ہے۔ یہ دوسرے طیاروں سے بہت ہلکا ہے اور مشن کو ان سے زیادہ بہتر طریقے سے انجام دے سکتا ہے۔ اس کی بہتر کار کردگی کی وجہ سے یہ 24 ممالک میں استعمال ہو رہا ہے۔ اسے 1976ء میں بنانا شروع کیا گیا اور اسکے بعد اس طرح کے 4426 طیارے بن چکے ہیں۔

ایف-16 کا خاکہ

اسکا سرکاری نام Fighting Falcon ہے۔ F-16 کو ہوائی لڑائی میں بہت اہمیت حاصل ہے۔

بناوٹ کی خصوصیات[ترمیم]

F-16 ایک پائلٹ کی گنجائش رکھنے والا طیارہ ہے۔ اس کے اسلحہ میں ایک عدد ایم-61 مشین گن ہے جو کہ اس کے بائیں پر میں نصب ہے۔ اسکے علاوہ یہ اے آئی ایم-9 سائیڈونڈر میزائل اور اے آئی ایم-120 ایمریم میزائل سے بھی لیس کیا جا سکتا ہے۔ اسکے علاوہ F-16 مختلف بم، راکٹ اور ہوا سے زمین پر مار کرنے والے میزائل بھی لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

F-16 میں پہلی بار Fly-By-Wire سسٹم اور مختلف اقسام کے بہت اعلی ریڈار بھی نصب ہیں۔

پائلٹ کی سہولیات[ترمیم]

اسکے پائلٹ کا کاکپٹ بہت اونچا ہوتا ہے۔ F-16 میں کنٹرول سٹک پائلٹ کے بائیں جانب ہوتی ہے۔ اسکے علاوہ پائلٹ کے سامنے ایک سکرین (HUD) لگی ہوتی ہے جو کہ طیارے کی رفتار، اونچائی، دشمن کے طیاروں سے دوری اور طیارہ کے اسلحے کی تعداد بتاتی ہے۔

جنگ میں شمولیت[ترمیم]

ان طیاروں کی بہترین صلاحیت کی وجہ سے انھیں کئی بار جنگ کے دوران استعمال بھی کیا گیا ہے۔ F-16 کو سب سے زیادہ مشرق وسطی میں استعمال کیا گیا ہے۔

  • 1981ء میں آٹھ اسرائیلی F-16 نے عراق کا ایک ایٹمی ریی ایکٹر اوسعراق کو تباہ کیا۔
  • پاک فضائیہ کے F-16 نے افغان جنگ کے دوران 10 افغانی اور کئی روسی جہاز گراۓ۔
  • بوسنیا کی جنگ میں بھی اقوام متحدہ کے F-16 نے 4 جہاز گراۓ۔
  • F-16 نے عراق کی جنگ میں کئی مشن انجام دیۓ اور دو F-16 نے بمباری کی جس کے نتیجے میں ال قاعدہ کے لیڈر ابو موسب ال زرقاوی بھی جاں بحق ہوا۔ عراق میں جنگ کے دوران ایک F-16 ایندھن کی کمی کی وجہ سے بھی گر کر تباہ ہو گیا۔

F-16 استعمال کرنے والے ممالک[ترمیم]

نیلے رنگوں والے ممالکے کے پاس ایف-16 زیادہ تعداد میں موجود ہے، ہلکے نیلے رنگوں والے ممالک کے پاس تھوڑی تعداد میں ایف-16 ہے۔
  • امریکی ہوائی فوج:2547
  • شاہی اردنی ہوائی فوج: 22
  • بیلجیئن ہوائی فوج: 79
  • چلیئن ہوائی فوج: 28
  • پاک فضائیہ: 34 (پاکستان نے 96 نئے ابھی خریدنے ہیں)
  • ڈینش ہوائی فوج: 78
  • مصری ہوائی فوج: 220
  • یونانی ہوائی فوج: 170
  • انڈونیشین ہوائی فوج: 10
  • اسرائیلی ہوائی فوج: 339
  • اطالوی ہوائی فوج: 34
  • شاہی نیدرلینڈز ہوائی فوج: 213
  • شاہی نورویجین ہوائی فوج: 72
  • شاہی اومانی ہوائی فوج: 12
  • پولش ہوائی فوج: 48 (36 نئے خریدے ہیں)
  • پرتگالی ہوائی فوج: 45
  • شاہی سنگاپوری ہوائی فوج: 62
  • تائیوانی ہوائی فوج: 150
  • کورین ہوائی فوج: 180
  • شاہی تھائیلینڈ ہوائی فوج: 61
  • ترکی ہوائی فوج: 280
  • متحدہ عرب عمارات ہوائی فوج: 80