فریب ِحس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
فریب حس کی ایک مثال؛ تصویر میں درحقیقت کوئی بھی گول دائرہ سرمئی یا سیاہ رنگت کا موجود نہیں ہے مگر اسکے باوجود سیاہ گول دائرے تیزی سے آتے جاتے نظر آتے ہیں۔

فریب ِحس (Illusion) ایک ایسی کیفیت کو کہا جاتا ہے کہ جس میں انسان کی کوئی ایک یا زائد حسیں (sensations) اپنا فعل درست ادا نہ کرپائیں اور کسی ایک احساس کا دوسرے احساس سے دھوکہ یا فریب کھا جائیں۔ اہم بات یہ ہے کہ فریب حس کی کیفیت میں کوئی بیرونی محرک (stimulus) ضرور موجود ہوتا ہے اور وہ حس اس کو غلط طور پر محسوس کرتی ہے یا یوں کہ لیں کہ فریب یا دھوکہ کھا جاتی ہے۔ اسکی ایک مثال صحرا میں سراب کو دیکھنا ہے جس میں ایک بیرونی محرک یعنی روشنی کی موجیں موجود تو ہوتی ہیں لیکن نظر کی حس ان سے دھوکہ کھا کر ریت کو پانی کے طور پر پیش کرتی ہے۔ عام طور پر اس کیفیت میں سب سے زیادہ ملوث ہونے والی حس بصارت (vision) کی ہوا کرتی ہے اور اس قسم کے فریب حس کو اردو میں فریب نظر بھی کہا جاتا ہے۔

فریب حس کی کیفیت، خطاۓ حس (Hallucination) سے بالکل الگ چیز ہے ، خطاۓ حس میں بھی حسیں درست افعال ادا نہیں کر پاتیں مگر اس کیفیت میں حس کی تحریک کیلیۓ کوئی بیرونی محرک (stimulus) موجود نہیں ہوتا ہے اور بلا کسی بیرونی محرک کے ہی دماغ میں اس محرک (مثلا آواز یا بو وغیرہ) کا احساس اجاگر ہوجاتا ہے، خطاۓ حس کو عموماً نفسیات میں ایک شدید ذھانی (psychotic) کیفیت یا مرض کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے۔

مزید دیکھیۓ[ترمیم]