آسک امام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
آسک امام
Askimam (website) logo.jpg
آسک امام لوگو، 16 جولائی2021
Askimam website (screenshot) 16 July 2021.jpg
16 جولائی 2021 کو آسک امام کے اعتمادیہ زمرے کا اسکرین شاٹ
سائٹ کی قسم
اسلامی، حنفی، قانونی/مذہبی
اصل ملکجنوبی افریقہ
بانیابراہیم ڈیسائی
ویب سائٹaskimam.org
تجارتینہیں
اندراجمطلوبہ
آغاز2000؛ 23 برس قبل (2000)
  • ask-imam.com in 2000
  • askimam.org in 2004
موجودہ حیثیتفعال

آسک امام ایک ویب سائٹ ہے، جو اسلام کے بارے میں معلومات فراہم کرتی ہے۔ اس کی بنیاد جنوبی افریقہ کے عالم دین اور مفتی ابراہیم ڈیسائی نے 2000ء میں رکھی تھی۔ اس ویب سائٹ پر جوابات حنفی دیوبندی مکتب فکر کے فقہی نظریات کی عکاس ہیں۔

تاریخی پس منظر[ترمیم]

ویب سائٹ ابراہیم ڈیسائی نے شروع کی تھی ، جو پہلے مدرسہ انعامیہ کے دار الافتا کے سربراہ تھے۔[1] ویٹ سیسلر تجویز کرتے ہیں کہ "askimam.org (آسک امام.آرگ) سائٹ askimam.com (آسک امام.کام) کا تکنیکی طور پر اپ ڈیٹ شدہ آئینہ دکھائی دیتا ہے" ، مؤخر الذکر 2000ء سے کام کر رہا ہے ، تاہم سابقہ ​​ء2004 میں لانچ کیا گیا تھا۔[2] اس پورٹل کا مقصد "عام اسلامی سوالات اور ورلڈ وائڈ ویب کا استعمال کرنے والے ہر شخص کے جوابات تک آسان رسائی" فراہم کرنا ہے۔[2] جی آر بنٹ کے مطابق "آسک امام اقلیت کے تناظر میں ایک مسلم ادارے / فرد کی نمائندگی کرتا ہے ، جس نے اپنی رائے کے لیے ایک وسیع عالمی سامعین کو حاصل کیا ہے، جو متعدد مذہبی نقطہ نظر سے تلاش کیا جاتا ہے۔ سائٹ پر ہر روز کئی نئے فتوے سامنے آتے ہیں، جس سے اس سائٹ کو دلچسپی رکھنے والے سرفرز کی طرف سے کافی واپسی کے دورے ملتے ہیں۔ یہ سوالات آج مسلمانوں کو درپیش کچھ چیلنجوں کی نشاندہی کرتے ہیں، حالاں کہ اس معلومات یا افراد یا برادریوں پر اس اثر یا اثر کی مقدار کا تعین ممکن نہیں ہے۔"[3] اگست 2002ء میں ویب سائٹ میں تقریباً 4686 فتاوٰی موجود تھے۔[4] بنٹ کا کہنا ہے کہ یہ "انگریزی زبان کا فتویٰ ویب سائٹ الازہر اور اس کے ہمدردوں کے مشترکہ ویب وسائل سے زیادہ وسیع، وسیع پیمانہ پر اور ممکنہ طور پر بااثر ہے۔"[5]

فرحانہ نے اس سائٹ پر گفتگو کرتے ہوئے اس بات کا تذکرہ کیا ہے کہ "2011ء میں Askimam.org پر فتووں کی ساخت کے ایک سروے میں انکشاف ہوا ہے کہ ڈیسائی کے طلبہ مختلف جغرافیائی مقامات سے تعلق رکھتے ہیں تو وہ فتوے لکھتے ہیں اور ڈیسائی ماسٹر استاذ کی حیثیت س آخری اختیار تھے، جیسا کہ فتاوٰی کے اختتامی سطور میں واضح ہے۔ ہر فتویٰ کا اختتام: "مفتی ابراہیم ڈیسائی کا معائنہ کردہ و نظر فرمودہ"۔ "[6] سائٹ کے بانی 15 جولائی 2021ء کو ڈربن میں انتقال کر گئے۔[7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Mohiuddin، Afshan؛ Suleman، Mehrunisha؛ Rasheed، Shoaib؛ Padela، Aasim I. (2020). "When can Muslims withdraw or withhold life support? A narrative review of Islamic juridical rulings". Global Bioethics. 31 (1): 29–46. PMC 7144300Freely accessible تأكد من صحة قيمة |pmc= (معاونت). PMID 32284707 تأكد من صحة قيمة |pmid= (معاونت). doi:10.1080/11287462.2020.1736243. 
  2. ^ ا ب VÍT ŠISLER. "EUROPEAN COURTS ́ AUTHORITY CONTESTED? THE CASE OF MARRIAGE AND DIVORCE FATWAS ON-LINE". Masaryk University Journal of Law and Technology: 65. 
  3. Farhana 2015, p. 51.
  4. Bunt 2003, p. 168.
  5. Bunt 2003, p. 173.
  6. Farhana 2015, p. 19.
  7. "Famous Fatwah Portal Ask Imam's Mufti Ebrahim Desai passes away". The Chenab Times. 16 July 2021. اخذ شدہ بتاریخ 16 جولا‎ئی 2021.