الموضوعات الكبرى

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مکتبہ السلفیہ، مدینہ منورہ کا شائع کردہ الموضوعات الکبری کا نسخہ کا سرورق- مطبوعہ 1386ھ/ 1966ء

الموضوعات الکبریٰ امام ابو الفرج ابن جوزی کی تصنیف ہے جو موضوع اور من گھڑت احادیث کے تذکرے میں تحقیق اور تنقید پر لکھی گئی ہے۔

تفصیل[ترمیم]

یہ کتاب اُن موضوع اور من گھڑت احادیث پر مرتب کی گئی ہے جو بغیر کسی سند و اصل کے عوام میں رائج ہیں۔ کتاب میں مذکور موضوع اور من گھڑت ضعیف احادیث کی تعداد 1847 ہے۔ یہ کتاب 1995ء میں دارالکتب العلمیہ بیروت، لبنان سے 2 جلدوں میں، مکتبہ السلفیہ مدینہ منورہ سے 1996ء میں 3 جلدوں میں شائع ہوئی۔ 1994ء میں دارالکتب العلمیہ، بیروت، لبنان والے نسخہ میں مکرر احادیث کو حذف کیا گیا تو 1172 احادیث کا مکمل مجموعہ کتاب شائع کیا گیا تھا۔

تنقید[ترمیم]

امام نووی نے اِس کتاب میں بعض احادیث کی جرح و تعدیل پر تنقید کی ہے اور کہا ہے کہ امام ابن جوزی نے بعض احادیث موضوعہ کو مکمل تحقیق و سند پر نہیں اتارا اور بعض صحیح احادیث کو صرف راویوں کے ضعف کی بنا پر موضوع یا ضعیف قرار دے دیا ہے۔ امام جلال الدین سیوطی اِن احادیث میں بعض کو صحیح، حسن یا ضعیف بھی قرار دیتے ہیں۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. امام جلال الدین سیوطی: تدریب الراوی، جلد 1 صفحہ 471/472، مطبوعہ دار العاصمہ، الریاض، سعودی عرب۔