اندو مٹھا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اندو مٹھا
اندو مٹھا
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1929 (عمر 91–92 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قومیت پاکستان
عملی زندگی
پیشہ بھرت ناٹیم کی ماہر
کارہائے نمایاں صدارتی پرائیڈ آف پرفارمنس آرٹس ایوارڈ 2020ء

اندو مٹھا (پیدائش: 1929ء) کلاسیکی رقص بھرت ناٹیم کی پاکستانی ماہر ہیں۔[1][2][3][4] پاکستان میں ان کے علاوہ دوسری ماہر شیما کرمانی ہیں۔وہ نیشنل کالج آف آرٹس کے راولپنڈی کیمپس میں فیکلٹی ممبر بھی ہیں۔[5][6][7][8][9]

ذاتی زندگی[ترمیم]

اندو مٹھا کی پیدائش بطوراندو چیترجی 1929ء میں ایک بنگالی عیسائی گھرانے میں ہوئی تھی۔ انہوں نے 1951ء میں دہلی یونیورسٹی سے ایم اے فلسفہ کی تعلیم حاصل کی۔ [10] ان کے والد، گنیش چندر چیترجی، فلسفے کے پروفیسر اور لاہور کے گورنمنٹ کالج کے صدر تھے، جہاں مٹھا کی پرورش ہوئی۔ان کی بڑی بہن اما آنند نے بالی ووڈ کے مشہور ہدایتکار چیتن آنند سے شادی کی۔ تقسیم ہند کے دوران، ان کا کنبہ لاہور سے دہلی چلا گیا۔ دہلی میں، انہوں نے وجے راگھاوا راؤ اور شریمتی للیتا سے بھرت ناٹیم سیکھا۔ مٹھا نے مشہور کوریوگرافر اور اداکارہ زہرہ سہگل سے جدید اظہار رقص سیکھا۔ آزادی کے بعد، مٹھا نے سنگیت بھارت اسکول اور پھر بعد میں ایس وی للیتا سے اپنی رقص کی تربیت جاری رکھی۔[11][12][13][14]

1951ء میں مٹھا نے اپنے گھر والوں کی خواہش کے خلاف بمبئی کے ایک میمن کیپٹن ابوبکر عثمان مٹھا سے شادی کی اور ان کے ساتھ پاکستان واپس چلی گئیں۔ ان کی بیٹی تحریمہ مٹھا امریکا میں ایک بھرت ناٹیم ڈانسر ہیں۔[15][16][17][18]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

اپنے شوہر کی ریٹائرمنٹ کے بعد کے سالوں میں، مٹھا نے لاہور میں ہی بھرت ناٹیم کی تعلیم دینا شروع کردی۔ ان کی پہلی پوزیشن لاہور گرائمر اسکول میں تھی، جہاں وہ مشہور رقص استاد بن گئیں۔ یہاں تک کہ ان کے طلبہ اور ان کی پہلی تدریسی سفر کے اختتام پر وہ بھر پور کارکردگی کا مظاہرہ کرنے میں کامیاب رہے۔ مٹھا کی ابتدائی پرفارمنس نجی آل ویمن پارٹیوں، فوجی افعال اور ریڈ کراس چیریٹی شوز یا آل پاکستان ویمن ایسوسی ایشن کے سامنے تھیں۔ [19]

مٹھا نے کلاسیکی رقص سکھانے کے لیے ایک اکیڈمی/اسکول "مضمونِ شوق" چلایا جہاں انھوں نے بہت سارے طالب علموں کو تعلیم دی جیسا کہ آمنہ مواز خان۔[20][21][22][23][24]

پاکستانی ثقافتی اصولوں کے مطابق ، مٹھا نے بھرت ناٹیم کے پڑھائے جانے کی کارکردگی اور انداز میں ردوبدل کیا ہے۔ انہوں نے اردو میں بھرت ناٹیم گانوں کی تالیف کی ہے۔ انھوں نے تامل، تیلگو یا سنسکرت کو سمجھنے کے فقدان کی وجہ سے، روایتی طور پر تینوں زبانوں میں بھرناٹیم کی تربیت دی ہے۔

ایوارڈ[ترمیم]

مٹھا نے اگست، 2020 میں صدارتی پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ (2020–2029) حاصل کیا۔[25][26][27]

  1. https://dunya.com.pk/index.php/special-feature/2013-03-18/2858
  2. https://www.nawaiwaqt.com.pk/11-Aug-2017/646644
  3. https://www.independenturdu.com/node/16446/%D9%81%D9%86/%E2%80%99%D8%B1%D9%82%D8%B5-%DA%A9%D9%88-%D8%B2%D9%86%D8%A7%D9%86%DB%81-%D9%BE%D9%86-%D8%B3%DB%92-%D9%85%D9%86%D8%B3%D9%88%D8%A8-%DA%A9%D8%B1%D9%86%D8%A7-%D8%B2%DB%8C%D8%A7%D8%AF%D8%AA%DB%8C-%DB%81%DB%92%E2%80%98
  4. https://www.bbc.com/urdu/entertainment-40758456
  5. "The Raqs Revival dance extravaganza". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 9 March 2014. 
  6. "From Bharatnatyam to Disco Deewane". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 9 March 2015. 
  7. Aslam، Feriyal Amal (2012). "Choreographing [in] Pakistan: Indu Mitha, Dancing Occluded histories in "The Land of the Pure"" (بزبان انگریزی). UCLA. 
  8. Subramanian، Nirupama (23 June 2009). "Bharatanatyam in the time of the Taliban". The Hindu. اخذ شدہ بتاریخ 06 جولا‎ئی 2020. 
  9. NCA’s ‘Spotlight’ to feature Indu Mitha The News, Pakistan - 3 April 2008
  10. "Indu Mitha's 90th birthday celebration was an evening of storytelling | Art & Culture | thenews.com.pk". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). 
  11. Mitha، Indu. "In Memory of my Guru, Zohra Ji- by Indu Mitha. - Tehreema Mitha Dance Company". Tehreema Mitha Dance Company (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 25 مارچ 2018. 
  12. Dance is thought and feeling, says Indu Mitha DAWN – 4 اپریل 2008
  13. "New generation lacks stamina for art: Indu Mitha". Zee News (بزبان انگریزی). 4 اپریل 2008. 
  14. "PechaKucha 20x20". www.pechakucha.com. 
  15. Faruqi، Asif Aqeel (2 اکتوبر 2016). "Caste away: The ongoing struggle of Punjabi Christians". Herald Magazine (بزبان انگریزی). 
  16. Struggling to dance آرکائیو شدہ 2009-05-09 بذریعہ وے بیک مشین Jang – جون 2008
  17. Reporter، The Newspaper's Staff (1 مارچ 2020). "Tribute to classical dancer Indu Mitha". DAWN.COM (بزبان انگریزی). 
  18. Bettmann، Rob. "Tehreema Mitha on "The Scent of My Earth"Bourgeon | Bourgeon". 
  19. Veteran dancer wins over Pakistan BBC News - 11 August 2009
  20. "Indu Mitha's students mesmerize audience". DAWN.COM (بزبان انگریزی). 26 June 2005. 
  21. Yasin، Aamir (12 January 2017). "LIVING COLOURS: 'Future of classical dance, music in Pakistan is very bright'". DAWN.COM (بزبان انگریزی). 
  22. "Mausikar arranges thrilling performance of dance and music". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). 
  23. "Indu Mitha mesmerizes audience at Lok Virsa". PAKISTAN PERSPECTIVES (بزبان انگریزی). 11 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 دسمبر 2020. 
  24. "Performing for a cause: Classical dances, music make for a charming evening". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 28 September 2013. 
  25. "DG PNCA Fouzia Saeed greets award recipients". The Nation (بزبان انگریزی). 18 August 2020. 
  26. Reporter، The Newspaper's Staff (15 August 2020). "Posthumous Nishan-i-Imtiaz for Sadequain, Ahmad Faraz". DAWN.COM (بزبان انگریزی). 
  27. "President confers civil awards to 184 Pakistanis, foreigners for excellence, services". The Nation (بزبان انگریزی). 14 August 2020.