بابڑہ قتل عام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بابڑہ قتل عام
د بابړې خونړۍ پېښه
بابڑہ گراؤنڈ is located in خیبر پختونخوا
بابڑہ گراؤنڈ
بابڑہ گراؤنڈ
بابڑہ گراؤنڈ (خیبر پختونخوا)
مقامبابڑہ گراؤنڈ، ہشتنگر علاقہ، ضلع چارسدہ، شمال مغربی سرحدی صوبہ (1901–1955) (موجودہ خیبر پختونخواپاکستان
متناسقات34°08′58″N 71°44′34″E / 34.1494°N 71.7428°E / 34.1494; 71.7428متناسقات: 34°08′58″N 71°44′34″E / 34.1494°N 71.7428°E / 34.1494; 71.7428
تاریخاگست 12، 1948؛ 71 سال قبل (1948-08-12)
نشانہپشتون خدائی خدمتگار تحریک کے غیر مسلح حمایتی
حملے کی قسمقتل عام، اندھا دھند گولہ باری، پانی میں ڈبونا
ہلاکتیںتقریباً 600
زخمی1000 سے زیادہ
مرتکبینعبد القیوم خان کشمیری، پولیس اور پاکستان کی پارلیمانی افواج

بابڑہ قتل عام (پشتو: د بابړې خونړۍ پېښه) کا سانحہ 12 اگست1948ء کو پشاور میں بابڑہ کے مقام پر رونما ہوا۔ اس واقعے کو پختونوں کا کربلا قرار دیا جاتا ہے۔ اس وقت کی مسلم لیگ کی مقامی قیادت نے مرکزی قیادت کو اندھیرے میں رکھا۔ بابڑہ کے اس سانحے میں 600 سے زائد شہید اور1000 سے زائد غیر مسلح خدائی خدمت گار زخمی ہوئے۔ خواتین نے قرآن پاک سروں پر رکھ کر فائرنگ رکوانے کی کوشش کی لیکن بابڑہ کے اس سانحے میں خواتین کی بھی بڑی تعداد شہید اور زخمی ہوئی[1]۔

حوالہ جات[ترمیم]