بیروزگاری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
عالمی شرح بیروزگاری

بے روزگاری، بین الاقوامی تنظیم محن (انٹرنیشنل لیبر آرگنائیزیشن) کے مطابق، انسان کی اس حالت کو کہتے ہیں جب اسے روزگار میثر نہ ہو اور وہ گزشتہ چار ہفتوں کے اندر فعال طور پر کام تلاش کر چکا ہو۔[1] شرح بے روزگاری کی مدد سے بے روزگاری کی پیمائش لی جا سکتی ہے؛ یہ شرح، فیصدی پیمائش کو حالیہ افرادی قوت سے تقسیم کر کے حاصل ہوتا ہے۔

بے روزگاری کی وجوہات، نتائج اور حل کے بارے میں کافی بحث ہوتی رہتی ہے اور دیگر نظریات اختیار کیے جاتے رہے ہیں، جن میں کلاسیکی، نو کلاسیکی اور آسٹروی معاشیات جیسے معاشی نظامین کے استعمال سے مارکیٹ کے زریئے بے روزگاری کو حل کرنے کے لیے تجاوزا ہوتا ہے۔ [حوالہ درکار] یہ نظریات بیرونی مداخلت سے عائد کردہ یونینوں، کم ترین اجرت کے قوانین، ٹیکسوں اور دیگر قواعد و ضوابط کے خلاف ہیں کیونکہ انکا دعوی ہے کہ ان سب چیزوں سے لوگوں کو کام دلانے میں دشواری ہوتی ہے۔ دوسری طرف، کینزی معاشیات کہتی ہے کہ بے روزگاری ایک چکریی نوعیت رکھتی ہے جس کی ممکنہ مداخلت سے کساد بازاری یا معاشی بحران کی صورت میں بے روزگاری کم کی جا سکتی ہے۔ کینزی ماڈل سپلائ شاک کی اکثریت پر نظر رکھتا ہے جو چیزوں اور خدمات کی مجموعی مانگ اور روزگار کی ضرورت میں کمی لاتی ہے۔ یہ ماڈل ایسی حکومتی مداخلت کا مشورہ دیتی ہیں جو کارکنوں کی مانگ میں اضافہ کرے؛ ان مشوروں میں مالی محرک، روزگار کے مواقع اور توسیع پسندانہ مودرک پالیسیاں شامل ہو سکتی ہیں۔ مارکسیسی سرگرمیاں مالکان اور پرولیتاریہ کے تعلقات پر غور کرتی ہیں جہاں پرولیتاریہ پر روزگار اور اجرت کے مسائل کو لیکر مسلسل دباؤ ڈالا جاتا رہا ہے۔ اس جدوجہد سے پیدا ہونے والی بے روزگاری، اجرت بڑھانے کے اخراجات میں کمی کر کے نظام کو فائدہ دیتی ہے۔ مارکسیت پسندوں کے سامنے بے روزگاری کی وجہ سرمایہ دارانہ نظام ہے اور اس کا حل اس نظام کو ختم کر کے سوشلزم یا کمیونزم اپنانا ہے۔

ان تین جامع نظریات کے علاوہ، بے روزگاری کی چند ایسی اقسام ہیں جو اقتصادی نظام میں بے روزگاری کے اثرات کا نمونہ درست طور پر تشکیل دینے میں مدد دیتی ہیں۔ بے روزگاری کی بنیادی اقسام میں ساختیہ بیروزگاری ہے جس میں معیشت کے ساختیہ مسائل اور بازار محن کی اکشمتا پر غور کیا جاتا ہے، مثلا ضروری مہارت کے ساتھ مزدوروں کی فراہمی اور مطالبہ میں بیمیلی کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ ایسی ساختی دلائل ویگھٹنکاری ٹیکنالوجی اور عالمگیریت سے وابستہ بے روزگاری کی وجوہات اور مسائل کے حل پر زور دیتے ہیں۔ اس کے علاوہ، بے روزگاری کی ایک قسم گھرشنی بیروزگاری بھی ہے۔ یہ لوگوں کے رضاکارانہ اور تشخیصی کام کرنے کے فیصلے، تلاش روزگار کے لیے درکار وقت اور کوشش اور موجودہ شرح اجرت پر مرکوز ہے۔ گھرشنی بے روزگاری میں اندراجی رکاوٹوں اور شرح اجرت پر غور کر کے بے روزگاری کا حل ڈھونڈا جاتا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. بین الاقوامی تنظیم محن اقتصادی فعال آبادی، روزگار، بے روزگاری اور کم روزگار کے اعداد و شمار سے متعلق قرارداد، تیرہویں لیبر سانکھییکیودوں کی بین الاقوامی کانفرنس، صفحہ 4، اکتوبر 1982 (انگریزی)