دی فری پریس جرنل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دی فری پریس جرنل
The Free Press Journal logo.jpg
The Free Press Journal Cover 06-01-2012.jpg
فری پریس جرنل کے ممبئی ایڈیشن کا صفحہ اول (1 جون 2012)
قسمروزنامہ اخبار
ہیئتبروڈ شیٹ
ناشرانڈین نیشنل پریس
ایڈیٹر ان چیفجی، ایل، لکھوٹیا
شریک ایڈیٹرایس، ایس دھون
آغاز1928 [1]
زبانانگریزی
صدر دفترفری پریس ہاوس، فری پریس جرنل مارگ، 215 ، ناریمان پوائنٹ ، ممبئی 400021
ساتھی اخباراتنو شکتی
ویب سائٹwww.freepressjournal.in

دی فری پریس جرنل؛ انگریزی زبان کا ایک روزانہ اخبار ہے، جو 1928ء میں سوامی ناتھن سدانند (جنھوں نے اس کے پہلے ایڈیٹر کی حیثیت سے بھی کام کیا) کے ذریعہ؛ سب سے پہلے ایک نیوز ایجنسی فری پریس آف انڈیا کی تکمیل کے لیے تیار کیا گیا ، جو آزادیِ بھارت تحریک کا حامی تھا۔ یہ ممبئی ، بھارت میں شائع ہوتا ہے۔

تاریخ[ترمیم]

بانی ایڈیٹر سوامی ناتھن سدانند تھے۔[2] اس کی بنیاد 1928ء میں دی فری پریس آف انڈیا کی حمایت کے لیے کی گئی تھی ، جو ایک نیوز ایجنسی ہے جس نے اپنے صارفین کو "قوم پرست" خبر بھیج دی۔[3] نوآبادیاتی تناظر میں کولاکو اسے "قوم پرست اسباب کی حمایت کرنے والا ایک آزاد اخبار" کے طور پر بیان کرتا ہے۔ انھوں نے لکشمی [کون؟] کے حوالے سے کہا ہے کہ "قوم پرست پریس نے مجاہدینِ آزادی کے ساتھ مل کر مارچ کیا"۔[4] اس نے تحریک آزادی کے دوران ہمدرد رائے عامہ کو متحرک کرنے میں نمایاں کردار ادا کیا۔[5]

قابل ذکر سابق ملازمین[ترمیم]

اس کے بانیوں میں ایک اسٹیلن سرینواسن تھے، جنھوں نے 1932ء میں "مانیکوندی" کی بنیاد رکھی۔ بال ٹھاکرے نے نوکری سے ہٹائے جانے تک اخبار میں کارٹونسٹ کے طور پر کام کیا۔ اس کے بعد ٹھاکرے نے مارمک کی بنیاد رکھی۔[6] اٹکنز کے مطابق انھیں "بھارتی امیگریشن بمبئی میں ٹھاکرے کے حملوں پر سیاسی تنازع کے بعد ہٹا دیا گیا"[7] مشہور کارٹون آرٹسٹ آر کے لکشمن بیس سال کی عمر میں دی فری پریس جرنل میں شامل ہوئے۔ وہ ٹھاکرے کے ساتھی تھے۔ ملازمت میں تین سال گزرنے کے بعد؛ ان سے اپنے مالک نے کہا تھا کہ وہ کمیونسٹوں کا مذاق نہ کریں ، لکشمن وہاں سے چلے گئے اور دی ٹائمز آف انڈیا میں شامل ہو گئے۔[8]

یہودی مہاجر میڈیکل ڈاکٹروں کی حمایت[ترمیم]

اس نے 1930ء کی دہائی میں جرمنی میں ظلم و ستم سے بھاگتے ہوئے ممبئی میں پناہ لینے والے یہودی ڈاکٹروں کے پریکٹس حقوق کی حمایت کی۔ بھارتی ڈاکٹروں نے اس دعوے پر عمل کرنے کے اپنے حق کی مخالفت کی کہ جرمنی میں بھارتی ڈاکٹروں کے لیے باہمی انتظامات نہیں ہیں۔ دی فری پریس جرنل نے استدلال کیا کہ یہ "ظلم و ستم سے پناہ کی قدیم بھارتی روایات" کے خلاف ہے۔[9]

کالم نگار[ترمیم]

  • سیما مصطفی: سیما مصطفی؛ سنڈے گارڈین کی موجودہ ایڈیٹر ہیں۔ وہ ایک کالم لکھتی ہیں "فرینکلی اسپیکنگ سیما مصطفی" (سیما مصطفی کھل کر بول رہی ہیں)۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Website showing 1928 written beneath "The Free Press Journal"". Free Press Journal. Free Press Journal. اخذ شدہ بتاریخ 12 فروری 2020. 
  2. Arnold P. Kaminsky؛ Roger D. Long (2011). India Today: An Encyclopedia of Life in the Republic. ABC-CLIO. صفحہ 340. ISBN 978-0-313-37462-3. 
  3. Asha Kasbekar (2006). Pop culture India!: media, arts, and lifestyle. ABC-CLIO. صفحہ 111. ISBN 978-1-85109-636-7. 
  4. Bridgette Phoenicia Colaco؛ Southern Illinois University at Carbondale. Mass Communication and Media Arts (2006). What is the news o Narada? Newspeople in a new India. صفحہ 46. ISBN 978-0-549-22400-6. 
  5. Centre for Studies in Civilizations (Delhi, India) (2010). Social sciences: communication, anthropology and sociology. Longman. صفحہ 218. ISBN 978-81-317-1883-4. 
  6. Ravinder Kaur (2005). Religion, violence, and political mobilisation in South Asia. SAGE. صفحہ 88. ISBN 978-0-7619-3431-8. 
  7. Stephen E. Atkins (2004). Encyclopedia of modern worldwide extremists and extremist groups. Greenwood Publishing Group. صفحات 317–. ISBN 978-0-313-32485-7. 
  8. Rukun Advani (1997). Civil lines: new writing from India. Orient Blackswan. صفحہ 110. ISBN 978-81-7530-013-2. 
  9. Joan G. Roland (1998). The Jewish communities of India: identity in a colonial era. Transaction Publishers. صفحہ 179. ISBN 978-0-7658-0439-6.