آر کے لکشمن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آر کے لکشمن
Gurera's Tribute to Laxman.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 24 اکتوبر 1921 ( 1921 -10-24)
میسور  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 26 جنوری 2015 ( 2015 -10-26) (عمر  93 سال)
پونے  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
قومیت بھارتی
زوجہ  
بہن/بھائی
آر کے ناراین  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں بہن/بھائی (P3373) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ میسور  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ كارٹونكار، سکویڈ-پینٹر
اعزازات
پدم بھوشن، پدم وبھوشن، ریمن میگسیسے ایوارڈ
دستخط
آر کے لکشمن

راسیپورم كرشن سوامی لکشمن[1] (مختصراً آر کے لکشمن؛ 24 اکتوبر 1921ء26 جنوری 2015ء) بھارت کے معروف مزاحیہ نگار اور کارٹون آرٹسٹ تھے۔[2] آر کے لکشمن دی کامن مین  نامی اپنی تخلیق تخلیق اور دی ٹائمز آف انڈیا کے لیے روزانہ لکھی جانی والی کارٹون سیریز یو سیڈ اٹ کے لیے معروف تھے، یہ سلسلہ سنہ 1951ء میں شروع ہوا تھا۔[3] لکشمن نے مقامی اخبارات اور میگزین میں پارٹ ٹائم كارٹون نگار کے طور پر اپنے کیریئر کا آغاز کیا تھا۔ جبکہ کالج کے طالب علم کے طور پر انہوں نے اپنے بڑے بھائی آر کے نارائن کی کہانیوں کو دی ہندو میں شائع کیا۔ انہوں نے پہلا کل وقتی کام ممبئی میں دی فری پریس جرنل میں سیاسی كارٹون نگار کے طور پر شروع کیا تھا۔ اس کے بعد انہوں نے دی ٹائمز آف انڈیا میں کام کرنا شروع کر دیا اور کامن مین کے کردار نے انہیں شہرت دی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

آر کے لکشمن کی پیدائش میسور میں سن 1921ء میں ہوئی۔[4] ان کے والد پرنسپل تھے اور لکشمن ان کی چھ اولاد میں سب سے چھوٹے تھے۔[5][6] ان کے ایک بڑے بھائی آر نکین لکشمن ناول نگار کے طور پر مشہور ہوئے۔

آر کے لکشمن پاڈ پائپر ( Pied Piper ) آف دہلی کے نام سے مشہور ہوئے۔  [7]

آر کے لکشمن مشہور ہونے سے قبل بھی دی اسٹرینڈ، پنچ، بائی اسٹینڈر، وائڈ ورلڈ اور ٹٹ-بٹس جیسی رسالوں میں پینٹنگ کا کام کر چکے تھے۔[8] جلد ہی انہوں نے اپنے اوپر، پھولوں پر، آپ کے گھر کی دیواروں پر اور اسکول میں اپنے اساتذہ کے اسکیچ بنانا شروع کر دیے، ان کی پیپل کا پتہ پینٹ کرنے کی ایک ٹیوٹر نے تعریف کی اور انہیں ان میں ایک آرٹسٹ نظر آنے لگا۔  [9] اس کے علاوہ ان پر ایک ابتدائی اثرات عالمی مشہور برطانوی كارٹون نگار ڈیوڈ لو کا تھا۔[10]

کیرئیر[ترمیم]

آغاز میں[ترمیم]

آر کے لکشمن کا ابتدائی کام سوراجیہ اور بلٹز نامی رسالے سمیت اخبارات میں رہا۔ انہوں نے میسور مہاراجا کالج میں پڑھائی کے دوران میں اپنے بڑے بھائی آر نارائن کی کہانیاں دی ہندو میں شامل کرنا شروع کر دیں اور مقامی اور سوتنتر کے لیے سیاسی کارٹون لکھنا شروع کر دیا، لکشمن نے کنڑ مزاحیہ میگزین كورونجی میں بھی کارٹون لکھنے کا کام کیا۔ یہ میگزین 1942ء میں ڈاکٹر ایم شورم نے قائم کیا تھا، اس میگزین کے بانی ایلوپیتھك ڈاکٹر تھے اور بنگلور کے شاندار علاقے میں رہتے تھے۔ انہوں نے یہ ماہانہ میگزین مزاح، سکویڈ مضامین اور کارٹون کے لیے وقف کر رکھا تھا۔ شورم ایک نامور کنڑ مزاحیہ مصنف تھے۔ انہوں نے لکشمن کی بھی حوصلہ افزائی کی۔

آر کے  لکشمن نے مدراس کے جیمنی اسٹوڈیوز میں روزگار شروع کر دیا۔ ان کا پہلا کل وقتی کاروبار ممبئی کی دی فری پریس جرنل کے سیاسی كارٹون نگار کے طور پر تھا۔ اس میگزین میں بال ٹھاکرے ان کے ساتھی كاٹون نگار تھے۔ لکشمن دی ٹائمز آف انڈیا ممبئی سے جڑ گئے اور اس میں تقریباً پچاس سال تک کام کیا۔ ان کا "کامن مین" کا کردار جمہوریت کے گواہ کے طور پر پیش ہوا۔[11][12]

ذاتی زندگی[ترمیم]

كارٹون نگار شیکھر گریرا کی طرف سے آر لکشمن کو ایک خراج عقیدت

لكشمن کی پہلی شادی بھرت ناٹیئم رقاصہ اور فلم اداکارہ کماری کملا لکشمن کے ساتھ ہوئی، کماری کملا نے اپنا فلمی کیریئر چائلڈ آرٹسٹ کے طور پر شروع کیا تھا۔ ان کی طلاق کے وقت تک کوئی اولاد نہیں ہوئی اور لکشمن نے دوسری شادی کر لی۔ ان کی دوسری بیوی کا نام بھی "کملا لکشمن" ہی تھا۔ وہ ایک مصنفہ خصوصاً بچوں کے ادب کی مصنفہ تھیں۔ لکشمن نے "دی اسٹار آئی نیور میٹ" نامی کارٹون سیریز اور فلم میگزین فلم فیئر میں اپنی دوسری بیوی کملا لکشمن کا "دی اسٹار آئی آنلی میٹ" کے عنوان سے کارٹون شامل کیا۔ دوسری شادی سے ان کا ایک بیٹا بھی ہوا۔[13]

ستمبر 2003ء میں ان کے جسم کے بائیں حصہ پر لقوہ کا حملہ ہوا۔ انہوں نے جزوی طور پر اس کے اثرات سے نجات حاصل کرلی۔ 20 جون 2010ء کی شام کو لکشمن کو ممبئی کے بریچ کینڈی ہسپتال میں بھرتی کروایا گیا اور بعد میں پونہ منتقل کیا گیا۔[14]

اکتوبر 2012ء میں لکشمن نے پونے میں اپنی اکیانوی سالگرہ منائی۔ شیو سینا کے سربراہ بال ٹھاکرے، سائنس دان جینت وشنو نارلیكراور سمبیوس یونیورسٹی کے وائس چانسلر ایس بی مجومدار نے بھی اس میں حصہ لیا۔  [15]

اعزازات اور ایوارڈ[ترمیم]

"دی کامن مین" از آر ک لکشمن Symbiosis Institute, Pune میں
  • بی ڈی گوئنکا ایوارڈ - دی انڈین ایکسپریس کی طرف سے ۔
  • درگا رتن سورن پدک (طلائی تمغا)- ہندوستان ٹائمز کی طرف سے
  • پدم وبھوشنحکومت ہند
  • پدم بھوشن - حکومت ہند
  • رمن میگسیسے ایوارڈ (1984)

تخلیقات[ترمیم]

  • دی ایلوکوویینٹ برش
  • دا بیسٹ آف لکشمن سیریز
  • ہوٹل روییرا
  • دا میسینجر
  • سروینٹس آف انڈیا
  • دا ٹنل آف ٹائیم (خودنوشت)

ملٹی میڈیا[ترمیم]

  • انڈیا تھرو تھے آئیج آف آر۔ کے۔ لکشمن دین ٹو ناؤ (سی ڈی روم)
  • لکشمن ریکھاس ٹائمس آف انڈیا پرکاشن
  • آر۔ کے۔ لکشمن کی دنیا سب ٹی وی پر ایک شو

حوالہ جات[ترمیم]

  1. रंगा राव (१ जनवरी २००६)۔ R. K. Narayan (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ साहित्य अकादमी۔ صفحات ११۔ آئی ایس بی این 978-81-260-1971-7۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  2. वी॰के॰ रामचन्द्रन۔ "Laxman's-eye view"۔ १८–३१ जुलाई १९९८ (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ फ्रॉण्टलाइन मैगज़ीन۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  3. "Times of India cartoonist RK Laxman dies after illness" (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ बीबीसी۔ २६ जनवरी २०१५۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  4. अम्रुत ब्यतनल (२४ अक्टूबर २०११)۔ "The Common Man is still at work"۔ द हिन्दू (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  5. "RIP RK Laxman: Common Man just lost its first citizen"۔ रिडिफ डॉट कॉम (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ مورخہ 5 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  6. Laxman 1998، पृष्ठ 4
  7. "RK Laxman passes away"۔ द टाइम्स ऑफ़ इंडिया (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ २७ जनवरी २०१५۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  8. Laxman 1998، पृष्ठ 8
  9. Laxman 1998، पृष्ठ 11–15
  10. Laxman 1998، पृष्ठ 25
  11. ऋतु गौरोला खंडूरी، २०१४، Caricaturing Culture in India: Cartoons and History of the Modern World (अंग्रेज़ी में)، कैम्ब्रिज यूविवर्सिटी प्रेस
  12. Ritu Gairola Khanduri. 2012. "Picturing India: Nation, Development and the Common Man." Visual Anthropology 25(4): 303-323۔
  13. The uncommon man: R.K. Laxman (1921–2015)
  14. "R K Laxman hospitalized after 3 strokes, stable" (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ द टाइम्स ऑफ़ इंडिया۔ २१ जून २०१०۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)
  15. टाइम्स न्यूज़ नेटवर्क (२५ अक्टूबर २०१२)۔ "R K Laxman gets double treat on 91st birthday"۔ द टाइम्स ऑफ़ इंडिया (अंग्रेज़ी زبان میں)۔ पुणे: द टाइम्स ग्रूप۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ फ़रवरी २०१५۔ Unknown parameter |trans_title= ignored (معاونت); Check date values in: |accessdate=, |date= (معاونت)

بیرونی روبط[ترمیم]