فیلڈ مارشل مانک شاء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فیلڈ مارشل مانک شاء
Field marshal SHFJ Manekshaw.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 3 اپریل 1914[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
امرتسر[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 27 جون 2008 (94 سال)[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
ویلنگٹن، تامل ناڈو[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
وجۂ وفات نمونیہ[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وجۂ وفات (P509) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of India.svg بھارت[1][3]
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی ہندوستانی فوجی اکادمی[4]
کمانڈ اینڈ اسٹاف کالج[5]
رائل کالج آف ڈیفنس اسٹڈی[6]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ فوجی افسر[2][1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
عسکری خدمات
شاخ برطانوی ہندی فوج[7][8]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں عسکری شاخ (P241) ویکی ڈیٹا پر
لڑائیاں اور جنگیں پاک بھارت جنگ 1947[6]،  دوسری جنگ عظیم[9]،  پاک بھارت جنگ 1971ء[10]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں لڑائی (P607) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
Military cross BAR.svg ملٹری کراس[11]
IND Padma Bhushan BAR.png پدم بھوشن [11]
IND Padma Vibhushan BAR.png پدم وبھوشن [11]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وصول کردہ اعزازات (P166) ویکی ڈیٹا پر

بھارت کے سابق فوجی سربراہ۔ مانک شاء نے پاکستان کے ساتھ 1971ء کی جنگ میں بھارتی فوج کی قیادت کی تھی۔ جنہوں نے سنہ انیس سو اکہتر میں پاکستان کے خلاف بھارتی فوج کو کامیابی دلائی تھی اور مشرقی پاکستان کی جگہ بنگلہ دیش کا وجود ہوا تھا۔ بھارت نے اس کامیابی کے لیے انہیں فیلڈ مارشل کے خطاب سے نوازہ تھا۔ آزاد بھارت میں یہ خطاب صرف دو فوجیوں کو ملا ہے۔ مانیک شاء کا جنم انیس سو چودہ میں امرتسر میں ہوا تھا۔ انہوں نے تقریباً چالیس برس تک فوجی خدمات انجام دیں جس میں دوسری عالمی جنگ سمیت پانچ جنگیں شامل ہیں۔ انہیں لڑائی کے دوران میں ایک بار گولی بھی لگی تھی۔ ان کا خاندان پارسی تھا اور ان کے والد ایچ ایف شاء ایک ڈاکٹر تھے جو پنجاب میں جاکر بسے تھے۔ مانیک شاء نے ابتدائی تعلیم امرتسر کالج میں حاصل کی تھی اور بعد میں انہیں انگریزوں کے قائم کیے گئے دہرہ دون کے فوجی انسٹی ٹیوٹ میں تربیت کا موقع ملا تھا۔ 27 جون، 2008ء کو ان کا انتقال ہوا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 183–184 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229 نقص حوالہ: نادرست <ref> ٹیگ؛ نام "10e9d8b9d92f0ddd19413044b5e3905d4ca1ecb9" مختلف مواد کے ساتھ کئی بار استعمال ہوا ہے۔
  2. ^ ا ب پ ت The New York Times — اخذ شدہ بتاریخ: 8 اکتوبر 2017 — ناشر: The New York Times Company اور A.G. Sulzberger — شائع شدہ از: 30 جون 2008
  3. عنوان : Services Chiefs of India — صفحہ: 59 — شائع شدہ از: 2007 — ISBN 9788172111625
  4. مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 186 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229
  5. مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 191 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229
  6. ^ ا ب مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 193–197 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229
  7. مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 214–215 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229
  8. مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 188–189 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229
  9. مصنف: وجے کمار سنگھ — عنوان : Leadership in the Indian Army: Biographies of Twelve Soldiers — صفحہ: 190 — شائع شدہ از: 2005 — ISBN 9780761933229
  10. http://www.globalsecurity.org/military/world/war/indo-pak_1971.htm — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2017
  11. ^ ا ب پ عنوان : Services Chiefs of India — صفحہ: 61 — شائع شدہ از: 2007 — ISBN 9788172111625