سچن تندولکر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سچن تندولکر
MP، BR، AC
Sachin at Castrol Golden Spanner Awards (crop).jpg
Tendulkar at an awards event in جنوری 2013
ذاتی معلومات
مکمل نام سچن رمیش تندولکر
پیدائش 24 اپریل 1973ء (عمر 46 سال)[1]
Bombay، Maharashtra، India
عرف Tendlya, God of Cricket,[2][3] Little Master,[1] Master Blaster[4][5]
قد 5 فٹ 5 انچ (165 سینٹی میٹر) [6]
بلے بازی Right-handed
گیند بازی Right-arm medium، leg break، off break
حیثیت بلے بازی
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 187) 15 نومبر 1989  بمقابلہ  Pakistan
آخری ٹیسٹ 14 نومبر 2013  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
پہلا ایک روزہ (کیپ 74) 18 دسمبر 1989  بمقابلہ  Pakistan
آخری ایک روزہ 18 مارچ 2012  بمقابلہ  Pakistan
ایک روزہ شرٹ نمبر. 10
واحد ٹی20(کیپ 11) 1 دسمبر 2006  بمقابلہ  جنوبی افریقہ
قومی کرکٹ
سالٹیم
1988 Cricket Club of India
1988–2013 Mumbai
1992 Yorkshire
2008–2013 Mumbai Indians
2014 میریلیبون کرکٹ کلب
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ Test ODI FC LA
میچ 200 463 310 551
رنز بنائے 15,921 18,426 25,396 21,999
بیٹنگ اوسط 53.79 44.83 57.92 45.54
100s/50s 51/68 49/96 81/116 60/114
ٹاپ اسکور 248* 200* 248* 200*
گیندیں کرائیں 4,240 8,054 7,563 10,230
وکٹ 46 154 71 201
بالنگ اوسط 54.17 44.48 62.18 42.17
اننگز میں 5 وکٹ 0 2 0 2
میچ میں 10 وکٹ 0 n/a 0 n/a
بہترین بولنگ 3/10 3/10 3/10 5/32
کیچ/سٹمپ 115/– 140/– 186/– 175/–
ماخذ: Cricinfo، 15 نومبر 2013

سچن رمیش تندولکر (انگریزی تلفظ: سنیےi/səˈɪn tɛnˈdlkər/، پیدائش: 24 اپریل 1973) کرکٹ کی تاریخ میں دنیا کے بہترین بلے بازوں میں شمار کیے جاتے ہیں۔ بھارت کے سب سے اعلیٰ شہری اعزاز بھارت رتن سے نوازا ہونے والے وہ سب سے پہلے کھلاڑی اور سب سے کم عمر کے شخص ہیں۔[7] راجیو گاندھی کھیل رتن ایوارڈ اور سنہ 2008 میں پدم وبھوشن سے سے بھی نوازے جا چکے ہیں۔

سن 1989 میں بین الاقوامی کرکٹ میں پدارپ کے بعد وہ بلے بازی میں کئی ریکارڈ قائم کیے ہیں۔ انہوں نے ٹیسٹ اور ایک روزہ کرکٹ، دونوں میں سب سے زیادہ سنچری کمائی ریٹویٹ ہیں۔ وہ ٹیسٹ کرکٹ میں سب سے زیادہ رن بنانے والے بلے باز ہیں۔ اس کے ساتھ ہی ٹیسٹ کرکٹ میں 14000 سے زیادہ رن بنانے والے وہ دنیا کے واحد کھلاڑی ہیں۔ ون ڈے میچوں میں بھی انہیں کل سب سے زے ادہ رن بنانے کا ریکارڈ حاصل ہے۔[حوالہ درکار] انہوں نے اپنا پہلا فرسٹ کلاس کرکٹ میچ ممبئی کے لیے 24 سال کی عمر میں کھیلا۔ ان بین الاقوامی کھیل کی زندگی کے آغاز 1989 میں پاکستان کے خلاف کراچی سے ہوئی۔

سچن کرکٹ کی دنیا کے سب سے زیادہ سپانسر کھلاڑی ہیں اور دنیا بھر میں ان کے متعدد پرستار ہیں۔ ان پرستار انہیں پیار سے مختلف ناموں سے پکارتے ہیں جن سب سے مقبول لٹل ماسٹر اور ماسٹر بلاسٹر ہے۔ کرکٹ کے علاوہ وہ اپنے ہی نام کے ایک کامیاب ریستوران کے مالک بھی ہیں۔

فوری طور پر وہ راجیہ سبھا کے رکن ہیں، سن 2012 میں انہیں راجیہ سبھا کے رکن کے طور پر نامزد کیا گیا تھا۔[8]

ذاتی زندگی[ترمیم]

اںجل و سچن ایک عوامی تقریب میں

راجاپر کے مراٹھی برہمن خاندان میں پیدا ہوئے سچن کا نام ان کے والد رمیش تندولکر نے اپنے چہیتے موسیقار سچن دیو برمن کے نام پر رکھا تھا۔ ان کے بڑے بھائی اجیت تندولکر نے انہیں کرکٹ کھیلنے کے لیے حوصلہ افزائی کی تھی۔ سچن کے ایک بھائی نتن تندولکر اور ایک بہن سوتاي تندولکر بھی ہیں۔ 1995 میں سچن تندولکر کی شادی اں جل تندولکر سے ہوا۔ سچن کے دو بچے ہیں - سارہ اور ارجن۔

سچن نے شارداشرم وديامندر میں اپنی تعلیم گرہن کی۔ وہیں پر انہوں نے انسٹرکٹر (کوچ) رماكانت اچرےكر کے سانندھي میں اپنے کرکٹ زندگی کا آغاز کیا۔ تے ز گے ند باز بننے کے لیے انہوں نے اے م0ار0ے پھ0 پیس پھاڈے شن کے پریکٹس کے پروگرام میں شرکت کی پر وہاں تیز گیند بازی کے کوچ ڈینس للی نے انہیں مکمل طور پر آپ کی بلے بازی پر توجہ مرکوز کرنے کو کہا۔

دیگر دلچسپ حقیقت[ترمیم]

  • نوجوانی میں سچن اپنے کوچ کے ساتھ مشق کرتے تھے۔ ان کوچ اسٹمپ پر ایک روپے کا سکے رکھ دیتے اور جو گے ندباز سچن کو آؤٹ کرتا، وہ سکے اسی کو ملتا تھا۔ اور اگر سچن بغیر آؤٹ ہوئے پورے وقت بلے بازی کرنے میں کامیاب ہو جاتے، تو یہ سکے ان کا ہو جاتا۔ سچن کے مطابق اس وقت ان کی طرف سے جیتے گئے وہ 13 سکے آج بھی انہیں سب سے زیادہ عزیز ہیں۔[حوالہ درکار]
  • 1988 میں اسکول کے ایک هرس شیلڈ میچ کے دوران میں ساتھی بلے باز ونود کامبلی کے ساتھ سچن نے تاریخی 664 رنز کی ناٹ آووٹ ساجھے داری کی۔ یہ دھماکا دار جوڑے کے منفرد کارکردگی کی وجہ ایک گے ندباز تو رونے ہی لگا اور مخالف فریق نے میچ آگے کھیلنے سے انکار کر دیا۔ سچن نے اس میچ میں 320 رن اور مقابلہ میں ہزار سے بھی زیادہ رن بنائے۔[حوالہ درکار]
  • سچن فی سال 200 بچوں کے پرورش کی ذمہ داری کے لیے اپنالي نام کا ایک غیر سرکاری تنظیم بھی چلاتے ہیں۔[حوالہ درکار]
  • بھارتی ٹیم کا ایک بین الاقوامی میچ آسٹریلیا کے خلاف اندؤر میں 31 مارچ 2001 کو کھیلا گیا تھا۔ تب اس چھوٹے قد کے کھلاڑی نے پہلی بار 10، 000 رنو کا اعدادوشمار پار کرکے اندؤر کے اسٹیڈیم میں ایک سنگ میل گاڑ دیا تھا۔[حوالہ درکار]

Sachin Tendulkar Autograph.jpg

کھیل کا طریقہ[ترمیم]

سچن تندولکر کرکٹ میں بلے بازی دائیں ہاتھ سے کرتے ہیں لیکن لکھتے بايے ہاتھ سے ہیں۔ وہ باقاعدہ طور پر بائیں ہاتھ سے گیند پھینکنے کا عمل کرتے ہیں۔ ان کی بلے بازی ان بہترین سنتلن اور قابو کی بنیاد پر۔ وہ بھارت کی سست پچوں کی بجائے ویسٹ انڈیز اور آسٹریلیا کی سخت و تیز پچ پر کھیلنا زیادہ پسند کرتے ہیں [1]۔ وہ اپنی بلے بازی کی منفرد کارٹون سٹائل کے لیے بھی جانے جاتے ہیں۔

آسٹریلیا کے سابق ٹرینر جان بيوكے نن کا کہنا ہے کہ تندولکر اپنی اننگز کے آغاز میں شارٹ گیند کو مزید پسند کرتے ہیں۔ ان کا خیال یہ بھی ہے کہ بائیں ہاتھ کی تیز گیند تندولکر کی کمزوری ہے۔[9] اپنے کیریئر کے آغاز میں سچن کے بیٹنگ کے سٹائل جارحانہ ہوا کرتی تھی۔ سن 2004 سے وہ کئی بار چوٹگرست بھی ہوئے۔ اس کی وجہ سے ان کی بلے بازی کی جارحیت میں تھوڑی کمی آئی۔ سابق آسٹریلوی کھلاڑی يين چیپل کے مطابق تندولکر اب پہلے جیسے کھلاڑی نہیں رہے۔ لیکن 2008 میں بھارت کے آسٹریلیا کے دورے پر تندولکر نے کئی بار اپنی جارحانہ بلے بازی کا ثبوت دیا۔

تندولکر باقاعدہ بولر نہیں ہیں، لیکن وہ درمیانے تیز، لےگ اسپن و آف اسپن گیند بازی میں پركھر ہیں۔ وہ کئی بار لمبی اور دیر سے ٹکی ہوئی بلے بازوں کی جوڑی کو توڑنے کے لیے گیند باز کے طور پر لائے جاتے ہیں۔ بھارت کی جیت پکی کرانے میں کئی بار ان کی گیند بازی کا اہم تعاون رہا ہے۔[10]

کرکٹ کے ریکارڈ[ترمیم]

سچن کا ایک پرستار
  • میر پور میں بنگلہ دیش کے خلاف 100 واں سنچری۔
  • ون ڈے بین الاقوامی کرکٹ کی تاریخ میں ڈبل سنچری جڑنے والے پہلے کھلاڑی۔
  • ون ڈے بین الاقوامی مقابلے میں سب سے زیادہ (18000 سے زیادہ) رنز۔
  • ون ڈے بین الاقوامی مقابلے میں سب سے زیادہ 49 سنچری۔
  • ون ڈے بین الاقوامی ورلڈ کپ مقابلوں میں سب سے زیادہ رن۔
  • ٹیسٹ کرکٹ میں سب سے زیادہ (51) سنچری [11]
  • آسٹریلیا کے خلاف 5 نومبر 2009 کو 175 رن کی اننگ کے ساتھ ایک روزہ بین الاقوامی کرکٹ میں 17 ہزار رن پورے کرنے والے پہلے بلے باز بنے۔
  • ٹیسٹ کرکٹ میں سب سے زیادہ رنز کا ریکارڈ۔[12]
  • ٹیسٹ کرکٹ 13000 رنز بننے والے دنیا کے پہلے بلے باز۔
  • ون ڈے بین الاقوامی مقابلے میں سب سے زیادہ مین آف دی سے رے ز۔
  • ون ڈے بین الاقوامی مقابلے میں سب سے زیادہ مین آف دی میچ۔
  • بین الاقوامی مقابلو میں سب سے زیادہ 30000 رنز بنانے کا ریکارڈ۔

کچھ دوسرے قابل ذکر واقعات[ترمیم]

  • 5 نومبر 2009: اپنا 435 واں میچ کھیل رہے تندولکر نے اس وقت تک 434 اننگز میں 44۔21 کی اوسط سے 17000 رن بنائے تھے جس میں 45 سنچری اور 91 نصف سنچری شامل ہے۔ تندولکر کے بعد ایک روزہ کرکٹ میں سب سے زیادہ رنز سری لنکا کے سنت جے سورے ہ نے بنائے ہیں۔ ان کے نام پر اس میچ سے پہلے تک 12207 رنز درج تھے۔ جے سورے ہ 441 میچ کھیل چکے ہیں۔ اب تک 400 سے زیادہ ون ڈے میچ صرف انہی دو کھلاڑیوں نے کھیلے ہیں۔
  • تندولکر نے اپنے ایک روزہ کیریئر میں سب سے زیادہ رنز آسٹریلیا کے خلاف بنائے۔ انہوں نے عالمی چمپئن کے خلاف 60 میچ میں 3000 سے زیادہ رن بنائے جس میں 9 سنچری اور 15 نصف سنچری شامل ہے۔ سری لنکا کے خلاف بھی انہوں نے سات سنچری اور 14 نصف سنچری کی مدد سے 2471 رن بنائے لیکن اس کے لیے انہوں نے 66 میچ کھیلے۔
  • اس سٹار بلے باز نے پاکستان کے خلاف 66 میچ میں 2381 رنز بنائے۔ اس کے علاوہ انہوں نے جنوبی افریقہ کے خلاف 1655، ویسٹ انڈیز کے خلاف 1571، نیوزی لینڈ کے خلاف 1460، زمبابوے کے خلاف 1377 اور انگلینڈ کے خلاف بھی ایک ہزار سے زیادہ رنز (1274) رن بنائے ہیں۔
  • تندولکر نے گھریلو سر زمین پر 142 میچ میں 46۔12 کے اوسط سے 5766 اور ملکی سرزمین پر 127 میچ میں 35۔48 کی اوسط سے 4187 رن بنائے۔ لیکن وہ سب سے زیادہ کامیاب غیر جانبدار جگہوں پر ہیں جہاں انہوں نے 140مے چ میں 6054 رن بنائے جن میں ان کا اوسط 50۔87 ہے۔ وہ بھارت کے علاوہ انگلینڈ (1051)، جنوبی افریقہ (1414)، سری لنکا (1302) اور متحدہ عرب امارات (1778) کی سرزمین پر بھی ایک روزہ میچوں میں ایک ہزار رنز بنا چکے ہیں۔
  • سابق کپتان محمد اظہر الدین نے تندولکر کو سلامی بلے باز کے طور پر بھیجنے کی شروعات کی تھی جس میں ممبئی کا یہ بلے باز خاصا کامیاب رہا۔ اوپنر کے طور پر انہوں نے 12891 رن بنائے ہیں۔ جہاں تک کپتانوں کا سوال ہے تو تندولکر سب سے زیادہ کامیاب اظہر کی کپتانی میں ہی رہے۔ انہوں نے اظہر کے کپتان رہتے ہوئے 160 میچ میں 6270 رنز بنائے جبکہ سورو گنگولی کی کپتانی میں 101 میچ میں 4490 رنز بنائے۔ اگرچہ خود کی کپتانی میں وہ زیادہ کامیاب نہیں رہے اور 73 میچ میں 37۔75 کے اوسط سے صرف 2454 رنز ہی بنا پائے۔
  • 24 فروری 2010: سچن تندولکر نے اپنے ون ڈے کرکٹ کے 442 ویں میچ میں 200 رن بنا کر تاریخی اننگز کھیلی۔ ون ڈے کرکٹ کی تاریخ میں ڈبل سنچری جڑنے والے پہلے کھلاڑی بنے۔
  • تندولکر 160 ٹیسٹ میچوں میں بھی اب تک 15000 رنز بنا چکے ہیں۔ اور اس طرح ان کے نام پر بین الاقوامی کرکٹ میں 30000 سے زیادہ رنز اور 100 سنچری درج ہیں۔ تندولکر نے اپنے ایک روزہ کیریئر میں سب سے زیادہ رنز آسٹریلیا کے خلاف بنائے۔ انہوں نے عالمی چیمپئن ٹیم کے خلاف 60 میچ میں 3000 سے زیادہ رن بنائے جس میں 9 سنچری اور 15 نصف سنچری شامل ہے۔
  • سچن نے 2003 کے ورلڈ کپ میں ریکارڈ 673 رن بنائے تھے۔ تندولکر کے 2003 ورلڈ کپ میں کارکردگی کے بارے میں بھارتی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان راہل دراوڑ نے كهاك پورے ٹورنامنٹ کے دوران میں سچن نے نیٹ میں ایک بھی گیند نہیں کھیلی تھی۔ وقت کے حساب سے اپنی تیاریوں میں تبدیلی کرتے رہتے ہیں۔[13]

تندولکر کرکٹ کے میدان میں[ترمیم]

سچن تندولکر

سچن تندولکر نے کرکٹ کبھی اپنے لیے نہیں کھیلا۔ وہ همے شا ہی اپنی ٹیم کے لیے یا اس سے بھی زیادہ اپنے ملک کے لیے کھیلے۔ ان کے ذہن میں کرکٹ کے تئیں انتہائی احترام کا جذبہ رہا۔ انہوں نے اوے ش میں آکر کبھی کوئی تبصرہ نہیں کیا۔ کسی کھلاڑی نے اگر ان کے خلاف کبھی کوئی تبصرہ کی بھی تو انہوں نے اس تبصرہ کا جواب زبان سے دینے کے وجاي اپنے بلے سے ہی دیا۔

سچن جب بھی بلے بازی کے لیے اترے، انہوں نے میدان پر قدم رکھنے سے پہلے سورج دیوتا کو نمن کیا۔ کرکٹ کے تئیں ان کے لگاؤ ​​کا انداز اسی واقعہ سے لگایا جا سکتا ہے کہ ورلڈ کپ کے دوران میں جب ان والد صاحب کا انتقال ہوا اس کی اطلاع ملتے ہی وہ گھر آئے، والد کی انتيے شٹ میں شامل ہوئے اور واپس لوٹ گئے۔ اس کے بعد سچن اگلے میچ میں کھیلنے اترے اور سنچری ٹھوككر اپنے آنجہانی والد کو خراج تحسین دی۔

اچھا کرکٹ کھیلنے کے لیے اونچی قد کو ترجیح دی جاتی ہے لیکن چھوٹے قد کے باوجود لمبے لمبے چھکے مارنا اور بال کو صحیح سمت میں بھیجنے کا فن کی وجہ ناظرین نے انہیں لٹل ماسٹر کا خطاب دیا جو بعد میں سچن کے نام کا ہی مترادف بن گیا۔

ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ[ترمیم]

23 دسمبر 2012 کو سچن نے ون ڈے کرکٹ سے ریٹائرمنٹ لینے کا اعلان کر دیا۔[14] لیکن اس سے بھی بڑا دن تب آیا جب انہوں نے ٹیسٹ کرکٹ سے بھی ریٹائرمنٹ لینے کا اعلان کیا۔ اس موقع پر انہوں نے کہا - "ملک کی نمائندگی کرنا اور پوری دنیا میں کھیلنا میرے لیے ایک بڑا اعزاز تھا۔ مجھے گھریلو زمین پر 200 واں ٹیسٹ کھیلنے کا انتظار ہے۔ جس کے بعد میں نے ریٹائرمنٹ لے لوں گا۔ " [15] ان کی چاہت کے مطابق ان کا آخری بار ٹیسٹ میچ وے سٹڈيذ کے خلاف ممبئی کے وانكھے ڑے اسٹیڈیم میں ہی کھیلا گیا۔[16]

اور جیسا انہوں نے کہا تھا ویسا ہی کیا بھی۔ 16 نومبر 2013 کو ممبئی کے اپنے آخری بار ٹیسٹ میچ میں انہوں نے 74 رنز کی اننگز کھیلی۔ میچ کا نتیجہ بھارت کے حق میں آتے ہی انہوں نے ٹرسٹ کرکٹ کو الوداع! کہہ دیا۔[17]

احترام[ترمیم]

  • بھارت رتن: 16 نومبر 2013 کو ممبئی میں سچن کے کرکٹ سے سنیاس لینے کے عزم کے بعد ہی حکومت ہند نے بھی انہیں ملک کے سب سے بڑے شہری اعزاز بھارت رتن دینے کا اعلان کر دیا۔[18] 4 فروری 2014 کو صدر پرنب مکھرجی نے صدارتی محل میں منعقد تقریب میں ان کو بھارت رتن سے سممنت کیا گیا۔[19] 40 سال کی عمر میں شامل یہ اعزاز حاصل کرنے والے وہ سب سے کم عمر کے فرد اور سب سے پہلے کھلاڑی ہیں۔[7] غور طلب ہے کہ اس سے پہلے یہ اعزاز کھیل کے میدان میں نہیں دیا جاتا تھا۔ سچن کو یہ اعزاز دینے کے لیے پہلے قوانین میں تبدیلی کی گئی تھی۔
  • راجیو گاندھی کھیل رتن ایوارڈ واحد کرکٹ کھلاڑی ہیں۔
  • سن 2008 میں وہ پدم وبھوشن سے بھی صلہ ریٹویٹ جا چکے ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

  • سچن تندولکر کے بین الاقوامی کرکٹ سنچرے وں کی فہرست

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Sambit Bal۔ "Sachin Tendulkar – Cricinfo Profile" Check |url= value (معاونت)۔ ای ایس پی این کرک انفو۔ اخذ شدہ بتاریخ 2007-12-14۔
  2. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ GodofCricket نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  3. "Sachin Tendulkar: Worshipped by Hindus as a living god"۔ BBC۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 نومبر 2013۔
  4. "Sachin Tendulkar: How the Boy Wonder became Master Blaster"۔ NDTV۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 نومبر 2013۔
  5. Gaura Gupta۔ "Top guns salute Master Blaster Sachin Tendulkar"۔ دی ٹائمز آف انڈیا۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 نومبر 2013۔[مردہ ربط]
  6. "Sachin Tendulkar: Bio, Facts"۔ Celebrity Bio, Facts۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-05-30۔
  7. ^ ا ب "सचिन तेंडुलकर، सीएनआर राव भारत रत्न से सम्मानित" Check |url= value (معاونت)۔ नवभारत टाईम्स۔ اخذ شدہ بتاریخ 5 फ़रवरी 2014۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  8. "Rajya Sabha stint" Check |url= value (معاونت)۔ Hindustan Times۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 जून 2012۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  9. "Buchanan spots Sachin's weakness!" Check |url= value (معاونت)۔ Deccan Herald۔ اخذ شدہ بتاریخ 2007-12-14۔
  10. 1st ODI: India v Pakistan at Kochi، 2 Apr 2005
  11. بی بی سی ہندی-اسپورٹ سٹوری
  12. انڈیا کرکٹ انپھو ڈاٹ کام-سٹوری
  13. "द्रविड़ का खुलासा، सचिन ने विश्व कप में बिना नेट प्रेक्टिस बनाए थे 673 रन" Check |url= value (معاونت)۔ पत्रिका समाचार समूह۔ اخذ شدہ بتاریخ ५ अगस्त २०१४۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  14. "सचिन तेंदुलकर ने लिया वनडे क्रिकेट से संन्यास" Check |url= value (معاونت)۔ बीबीसी हिन्दी۔
  15. "बड़ी खबर: सचिन तेंदुलकर ने किया टेस्ट से संन्यास का ऐलान" Check |url= value (معاونت)۔ दैनिक जागरण۔
  16. "सचिन की चाहत हुई पूरी، मुंबई के वानखेड़े स्‍टेडियम में ही खेलेंगे अंतिम टेस्‍ट" Check |url= value (معاونت)۔ जी न्यूज़۔
  17. "विदाई के दिन सचिन तेंदुलकर को भारत रत्न" Check |url= value (معاونت)۔ बीबीसी हिन्दी۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 नवम्बर 2013۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  18. "सचिन तेंदुलकर को 'भारत रत्न' देने का ऐलान" Check |url= value (معاونت)۔ नवभारत टाइम्स۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 नवम्बर 2013۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)
  19. "सचिन और सीएनआर राव को मिला 'भारत रत्न'" Check |url= value (معاونت)۔ बीबीसी हिन्दी۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 फ़रवरी 2014۔ Check date values in: |accessdate= (معاونت)

بیرونی روابط[ترمیم]