وجے ہزارے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وجے ہزارے
ذاتی معلومات
مکمل ناموجے سیموئل ہزارے
پیدائش11 مارچ 1915(1915-03-11)
سانگلی, بمبئی پریذیڈنسی, برطانوی راج
وفات18 دسمبر 2004(2004-12-18) (عمر  89 سال)
بڑودہ، گجرات، انڈیا
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں بازو کی درمیانی رفتار
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ22 جون 1946  بمقابلہ  انگلینڈ
آخری ٹیسٹ28 مارچ 1953  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
قومی کرکٹ
سالٹیم
1934–1942مہاراشٹر
1935–1939 سنٹرل انڈیا
1941–1961بڑودہ کرکٹ ٹیم
1957–1958 ہولکر
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ فرسٹ کلاس
میچ 30 238
رنز بنائے 2,192 18,740
بیٹنگ اوسط 47.65 58.38
100s/50s 7/9 60/73
ٹاپ اسکور 164* 316*
گیندیں کرائیں 2,840 38,447
وکٹ 20 595
بولنگ اوسط 61.00 24.61
اننگز میں 5 وکٹ 0 27
میچ میں 10 وکٹ 0 3
بہترین بولنگ 4/29 8/90
کیچ/سٹمپ 11/– 166/–
ماخذ: Cricket Archive، 22 October 2010

وجے سیموئل ہزارے (پیدائش:11 مارچ 1915ء سانگلی،مہاراشٹر)| وفات: 18 دسمبر 2004ء بروڈہ، گجرات) ایک ہندوستانی کرکٹر تھا۔ انہوں نے 1951ء اور 1953ء کے درمیان 14 میچوں میں بھارت کی کپتانی کرتے ہوئے 25 ویں ٹیسٹ میچ میں، بھارت کو ٹیسٹ اسٹیٹس حاصل کرنے کے تقریباً 20 سال بعد، 1951-52ء میں پہلی مرتبہ ٹیسٹ کرکٹ میں جیت (اور کپتانی میں واحد فتح) دلائی۔ مدراس میں انگلینڈ کے خلاف ایک میچ ایک اننگز اور آٹھ رنز سے جیت لیا جس دن کنگ جارج ششم کی وفات ہوئی تھی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ہزارے سانگلی میں، مراٹھی عیسائی خاندان میں، 1916ء میں اس وقت کے برطانوی ہندوستان کے بمبئی پریذیڈنسی میں پیدا ہوئے، ایک اسکول ٹیچر کے 8 بچوں میں سے ایک تھے۔ وہ ایک "شرمیلا،" آدمی تھا (1952 میں وزڈن کے مطابق)، یہ بڑے پیمانے پر سوچا جاتا تھا کہ وہ فطری کپتان نہیں تھا اور اس کے نتیجے میں اس کی بیٹنگ کو نقصان پہنچا۔ ان کے حریف وجے مرچنٹ نے کہا کہ کپتانی نے ہزارے کو ہندوستان کا بہترین بلے باز بننے سے روکا: "یہ کرکٹ کے المیوں میں سے ایک تھا۔" اس کے باوجود وجے ہزارے کا ٹیسٹ ریکارڈ بہت قابل احترام ہے: انہوں نے 30 ٹیسٹ میچوں میں 47.65 کی بیٹنگ اوسط کے ساتھ 2,192 رنز بنائے۔ ان کا فرسٹ کلاس ریکارڈ اور بھی زیادہ متاثر کن ہے، جس میں انہوں نے 18,740 رنز کے لیے 58.38 کی بیٹنگ اوسط حاصل کی یاد رہے کہ (سنیل گواسکر، سچن ٹنڈولکر اور راہول ڈریوڈ کے بعد کسی بھارتی کھلاڑی کے لیے سب سے زیادہ فرسٹ کلاس اوسط تھی۔ اس نے 60 فرسٹ کلاس سنچریاں (بشمول 7 ٹیسٹ میں) بنائیں، جو کسی بھارتی کھلاڑی کے لیے چوتھی سب سے زیادہ اور 10 فرسٹ کلاس ڈبل سنچریاں (بشمول دوسری جنگ عظیم کے دوران 6 سمیت، جب ہندوستان ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے والا واحد ملک تھا جس نے اپنی کارکردگی کو جاری رکھا۔ان کی گیند بازی کا ریکارڈ زیادہ متاثر کن تھا، اور اس نے 24.61 کی باؤلنگ اوسط سے 595 فرسٹ کلاس وکٹیں حاصل کیں (جن میں ٹیسٹ میں 19، اور ڈونلڈ بریڈمین کی تین بار وکٹیں شامل ہیں وہ ہندوستانی ڈومیسٹک سرکٹ پر، مہاراشٹر، وسطی ہندوستان اور بڑودہ ٹیموں کے لیے کھیلے۔

وجے ہزارے کے کیریئر کی کارکردگی کا گراف.

ان کی نمایاں کامیابیاں[ترمیم]

  • فرسٹ کلاس کرکٹ میں ٹرپل سنچری بنانے والا پہلا ہندوستانی بلے باز دو ٹرپل سنچریاں بنانے والے پہلے ہندوستانی:
  • ان کا سب سے بڑا سکور، 1939-40ء میں پونا کے خلاف مہاراشٹر کے لیے 316 ناٹ آؤٹ تھا۔
  • 1943-44ء میں بمبئی میں ہندوؤں کے خلاف دی ریسٹ کے لیے 387 میں سے 309 رنز ان کی دوسری بڑی اننگز تھی۔ اس کی اننگز کے باوجود، دی ریسٹ میچ ایک اننگز سے ہار گیا۔ اس میں ان کی اپنے بھائی وویک ہزارے کے ساتھ 300 کی شراکت شامل تھی۔ وجے نے 300 رنز میں سے 266 (شراکت کا 88.6٪) بنائے جبکہ وویک نے 21 رنز بنائے۔ ہزارے نے اپنی ٹیم کے اسکور کا 79.84 فیصد اسکور کیا، جو کہ ایک عالمی ریکارڈ ہے، اور یہ ہارنے کی وجہ سے دوسرا سب سے بڑا انفرادی سکور ہے۔
  • ٹیسٹ میچ کی ہر اننگز میں سنچری بنانے والے پہلے ہندوستانی جنہوں نے 1947-48ء میں ایڈیلیڈ میں آسٹریلیا کے خلاف لگاتار 116 اور 145 بنائے
  • 1951-52 میں کانپور ٹیسٹ میں انگلینڈ کے خلاف، ہزارے پہلے ہندوستانی بلے باز بھی بن گئے جس نے دونوں اننگز میں صفر پر مشتمل پئیر بنایا۔
  • وہ لگاتار تین ٹیسٹ میچوں میں سنچری بنانے والے پہلے ہندوستانی کھلاڑی بھی کہلائے۔
  • اپنے فرسٹ کلاس کیریئر میں پچاس سنچریاں بنانے والے پہلے ہندوستانی کھلاڑی
  • فرسٹ کلاس کرکٹ میں کسی بھی وکٹ کے لیے سب سے زیادہ شراکت جب انہوں نے 1947ء میں بڑودہ میں رنجی ٹرافی کے فائنل میں ہولکر کے خلاف گل محمد کے ساتھ بڑودا کے لیے 577 رنز کا ریکارڈ بنایا جو کئی سالوں تک قائم رہا، اور اسے صرف 2006ی میں کمار سنگاکارا اور مہیلا جے وردھنے نے توڑا۔ جب اس جوڑی نے جنوبی افریقہ کے خلاف سری لنکا کی جانب سے 624 رنز بنائے۔
  • 1000 ٹیسٹ رنز مکمل کرنے والے پہلے بھارتی کھلاڑی

ریٹائرمنٹ کے بعد[ترمیم]

ریٹائرمنٹ میں، وہ تھوڑی دیر کے لیے ہندوستانی ٹیسٹ کرکٹ سلیکٹر بنے۔ ان کی خدمات پر ان کے نام پر ایک ٹرافی سے نوازا گیا ہے، وجے ہزارے ٹرافی، بھارت کا ایک زونل کرکٹ ٹورنامنٹ ہے۔

انتقال[ترمیم]

آنتوں کے کینسر کی وجہ سے طویل علالت کے بعد وہ 18 دسمبر 2004ء میں 89/سال اور 282 دن کی عمر انتقال کر گئے۔

اعزاز[ترمیم]

وہ اور جسو بھائی پٹیل پہلے کرکٹر تھے جنہیں پدم شری سے نوازا گیا۔