زائد نشست گیری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
زائد نشست گیری کے خلاف مہم میں تیار کی گئی ایک تصویر

زائد نشست گیری (انگریزی: Manspreading) عام طور سے آدمیوں کی اس عادت کو کہا جاتا ہے جس کے تحت وہ لوگ عوامی حمل و نقل میں پاؤ اس طرح پھیلا کر بیٹھتے ہیں کہ اس سے ایک سے زیادہ نشست پر ان کا قبضہ ہو جاتا ہے۔[1][2] اس طرح سے بیٹھنا اور اس کے لیے انگریزی کا وضعی لفظ مین اسپریڈنگ انٹرنیٹ پر تنقید اور بحث کا موضوع بنا ہے۔ بلحاظ ملک، اس پر ریاستہائے متحدہ امریکا، مملکت متحدہ، ترکی اور کینیڈا میں کافی بحثیں ہوئی ہیں۔ عوامی مباحث کا آغاز اس وقت شروع ہوا جب مخالف زائد نشست گیری سماجی ذرائع ابلاغ ویب سائٹ ٹمبلر پر 2013ء میں شروع ہوئی۔[3][4] [5] اس کے ایک سال سال کے بعد انگریزی لفظ مین اسپریڈنگ آکسفورڈ ڈکشنریز ڈاٹ کام ویب سائٹ پر شامل کیا گیا۔[6][7] اس اصطلاح کا استعمال "نسوانیت کی کارٹون نگاری" کے طور پر تنقید کا نشانہ بنا ہے۔ اس مذموم رواج کے لیے ایسی مثالیں بھی پیش کی گئی ہیں کہ خواتین عوامی جگہوں پر زائد جگہ اپنے پرس / بیگ وغیرہ کی وجہ سے گھیرتی ہیں۔ [2] [8]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Emma G. Fitzsimmons (20 دسمبر 2014)۔ "A Scourge Is Spreading. M.T.A.'s Cure? Dude, Close Your Legs."۔ The New York Times۔
  2. ^ ا ب Cathy Young, "'Manspreading'? But women hog subway space, too", Newsday, 5 جنوری 2015.
  3. Radhika Sanghani, "'Ban manspreading': Londoners want men to sit with their legs together on the Tube", The Telegraph, 23 December 2014.
  4. Eric M. Johnson (16 جنوری 2015)۔ "One body, one seat: Seattle's campaign against the 'manspreading' scourge"۔ Reuters۔
  5. Katherine Connor Martin۔ "Manspreading: how New York City's MTA popularized a word without actually saying it"۔ Oxford Dictionaries۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-07-12۔
  6. "Manspreading, hangry, Grexit join Oxford online dictionary"۔ Reuters۔ 27 اگست 2015۔
  7. "New words in oxforddictionaries"۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2015۔
  8. Emily Crane (3 جون 2015)۔ "Are you a man-spreader or a she-bagger? As the U.S. makes selfish behaviour on public transport a criminal offence – Australian commuters think it might be time to follow suit"۔ Australia: Daily Mail۔ اخذ شدہ بتاریخ 5 دسمبر 2015۔