زوزانا چاپوتووا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
زوزانا چاپوتووا
(سلوواک میں: Zuzana Čaputová خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
تفصیل=

صدر سلوواکیہ
آغاز منصب
15 جون 2019 (2019-06-15)
وزیر اعظم پیٹر پیلیگرینی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png اندرے کسکا
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
پروگریسیو سلوواکیہ کی نائب صدر نشین
مدت منصب
15 مارچ 2018 – 19 مارچ 2019
Fleche-defaut-droite-gris-32.png منصب قائم وا
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 21 جون 1973 (46 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
براٹیسلاوا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Slovakia.svg سلوواکیہ
Flag of the Czech Republic.svg چیکوسلوواکیہ (–31 دسمبر 1992)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
جماعت پروگریسیو سلوواکیہ (2017–)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
اولاد 2
عملی زندگی
تعليم کومینیس یونیورسٹی
پیشہ مفسرِ قانون،  سیاست دان،  فعالیت پسند،  ماہر ماحولیات  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان سلوواک زبان،  روسی زبان،  انگریزی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
گولڈمین ماحولیاتی انعام (2016)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وصول کردہ اعزازات (P166) ویکی ڈیٹا پر
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ (سلوواک زبان اور مجارستانی زبان)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں باضابطہ ویب سائٹ (P856) ویکی ڈیٹا پر

زوزانا چاپوتووا (دوسرے ہجے زوزانا کپوٹووا) ایک لبرل قانون دان خاتون ہیں، جنہیں 2019ء کے انتخابات میں سلوواکیہ کی صدر منتخب کیا گیا۔ وہ سلوواکیہ کی پہلی خاتون صدر ہیں جبکہ وہ یورپی اتحاد کے اٹھائیس رکن ممالک میں اپنے ملک کی سربراہی کرنے والی آٹھویں خاتون رہنما ہوں گی۔[1]

سیاسی زندگی[ترمیم]

زوزانا کپوٹووا پیشے کے لحاظ سے ایک وکیل ہیں۔ انہوں نے دس سال قبل سیاسی جماعت ”پروگریسونے سلووینسکو“ (پروگریسیو سلوواکیہ) میں شمولیت اختیار کر کے سیاست میں قدم رکھا۔ سوزانہ چاپوتووا کو اپنے آزاد خیالات کی وجہ سے قدامت پسند حلقوں کی جانب سے تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑا۔ 2019ء کے انتخابات میں سلوواکیہ کی غیر پارلیمانی جماعت پروگرسیو پارٹی سے تعلق رکھنے والی زوزوانا نے حکمران جماعت کے حمایت یافتہ مروس سیف کووک کو شکست دی۔ خاتون صدر کو 58.3 فیصد ووٹ پڑے جب کہ ان کے مدمقابل مروس سیف کووک کو 41.7 فیصد ووٹ ملے۔[2] زوزانا یورپی اتحاد مخالف نظریات رکھتی ہیں جو تیزی سے سلوواکیہ میں مقبولیت حاصل کر رہا ہے۔ اُن کی کامیابی میں یورپی اتحاد مخالف نظریات کے علاوہ حکمران جماعت کی بدعنوانی کے خلاف عوام کا شدید غصہ بھی شامل ہے۔[3] انہوں نے انتخابات میں واضح برتری حاصل کرنے کے بعد عوام کا سلوواک، چیک، ہنگریائی (مجارستانی) اور ملک میں اقلیتی برادری روما کی زبان میں شکریہ ادا کیا۔ بعد ازاں سوزانہ چاپوتووا نے اس تقریر میں مزید کہا کہ وہ ”واضح طور پر یورپی اتحاد کے ساتھ مل کر کام کرنے کی خواہش رکھتی ہیں۔“[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "سوزانہ چاپوتووا سلوواکیہ کی پہلی خاتون صدر منتخب"۔ ڈوئچے ویلے۔
  2. "سلوواکیہ میں پہلی بارخاتون صدر منتخب"۔ جنگ۔
  3. "سلوواکیہ میں پہلی بار ایک خاتون صدر منتخب"۔ ایکسپریس۔