سخالن جزیرہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
جزیرہ سخالن
 

مقام جزیرہ سخالن
متناسقات 50°30′N 143°00′E / 50.5°N 143°E / 50.5; 143  ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1] [2]
رقبہ (كم²)
حکومت
ملک روس اور جاپان (متنازع علاقہ)
کل آبادی
منطقہ وقت متناسق عالمی وقت+11:00  ویکی ڈیٹا پر (P421) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
باضابطہ ویب سائٹ جزیرہ سخالن
Map

سخالین ( روسی: Сахалин،IPA: [səxɐˈlʲin]آئی پی اے IPA: [səxɐˈlʲin]) ، شمال مشرقی ایشیا میں ایک لمبوترا جزیرہ ہے، جو روس کے علاقے خبارووسک کرائی کے جنوب مشرقی ساحل سے صرف ساڑھے چھ کلومیٹر (چار میل) اور جاپان کے جزیرے ہوکائیڈو سے 40 کلومیٹر (25 میل) شمال کی طرف واقع ہے۔

مغربی بحرالکاہل کا ایک سرحد پر واقع جزیرہ، سخالن بحیرہ اوخوتسک کو اپنے مشرق میں بحیرہ جاپان سے جنوب مغرب میں تقسیم کرتا ہے۔ یہ سخالین اوبلاست کے ایک حصے کے طور پر زیر انتظام ہے اور روس کا سب سے بڑا جزیرہ ہے، [3] جس کا رقبہ 72492 مربع کلومیٹر (27989 مربع میل) ہے۔ اس جزیرے کی آبادی تقریباً 500,000 ہے، جن میں سے اکثریت روسیوں کی ہے۔ جزیرے کے مقامی لوگ اینو ، اورکس اور نیوخس ہیں، جو اب بہت کم تعداد میں موجود ہیں۔ [4]

جزیرے کا نام مانچو لفظ سہالیان (ᠰᠠᡥᠠᠯᡳᠶᠠᠨ) سے ماخوذ ہے۔ سخالین کے اینو لوگ یوآن، منگ اور چنگ خاندانوں کو خراج دیتے تھے اور ان کی سرکاری تقرریوں کو قبول کرتے تھے۔ بعض اوقات تعلقات پر مجبور کیا جاتا تھا لیکن چین کے خاندانوں کا کنٹرول زیادہ تر حصہ کے لیے ڈھیلا تھا۔ [5] [6] بعد میں انیسویں اور بیسویں صدی کے دوران روس اور جاپان دونوں نے سخالین پر اپنی ملکیت کا دعویٰ کیا۔ ان تنازعات میں بعض اوقات ان دو طاقتوں کے درمیان فوجی تنازعات اور جزیرے کی تقسیم بھی شامل تھی۔ سنہ 1875ء میں، جاپان نے شمالی جزائر کریل کے بدلے سخالن پر اپنے دعوے سے دستبردار ہو گیا۔ سنہ 1905ء میں، روس-جاپانی جنگ کے بعد، جزیرے کو تقسیم کر دیا گیا، جس کے ساتھ جنوبی سخالین جاپان کے حصے میں چلا گیا۔ روس نے سنہ 1945ء میں دوسری جنگ عظیم کے آخری دنوں میں سخالن کے جاپانی حصے پر قبضہ کرنے کے ساتھ ساتھ تمام جزائر کرل پر بھی قبضہ کر لیا اور تاحال ان سب پر قابض ہے۔ جاپان اب سخالین پر کسی بھی قسم کا دعویٰ نہیں کرتا، مگر وہ اب بھی جنوبی جزائر کریل پر دعویٰ کرتا ہے۔ سنہ 1949ء میں، جب جاپانی شہری جزیرے سے بے گھر ہو گئے تو سخالن پر رہنے والے زیادہ تر اینو لوگ جنوب میں 43 کلومیٹر (27 میل) دور آبنائے لاپیروس کے پار ہوکائیڈو نقل مکانی کر گئے۔ [7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1.   ویکی ڈیٹا پر (P402) کی خاصیت میں تبدیلی کریں "صفحہ سخالن جزیرہ في خريطة الشارع المفتوحة"۔ OpenStreetMap۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 فروری 2024ء 
  2.   ویکی ڈیٹا پر (P402) کی خاصیت میں تبدیلی کریں "صفحہ سخالن جزیرہ في خريطة الشارع المفتوحة"۔ OpenStreetMap۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 فروری 2024ء 
  3. Miquel Ros (2019-01-02)۔ "Russia's Far East opens up to visitors"۔ CNN Travel (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 جنوری 2019 
  4. "The Sakhalin Regional Museum: The Indigenous Peoples"۔ Sakh.com۔ March 17, 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ June 16, 2010 
  5. Chunsong Gan (2019)۔ A Concise Reader of Chinese Culture۔ صفحہ: 24۔ ISBN 9789811388675 
  6. Odd Westad (2012)۔ Restless Empire: China and the World Since 1750۔ صفحہ: 11۔ ISBN 9780465029365 
  7. Anna Reid (2003)۔ The Shaman's Coat: A Native History of Siberia۔ New York: Walker & Company۔ صفحہ: 148–150۔ ISBN 0-8027-1399-8