ضرب المثل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

کوئی فقرہ، جملہ، شعر یا مصرع جو زندگی کے بارے میں کسی خاص اصول، حقیقت یا رویے کو جامع اور بلیغ طور پر بیان کرے اور عوام و خواص اسے ترجمانی کے لیے استعمال کرنے لگیں، کہاوت کہلاتا ہے۔ اسی کو عربی میں ضرب المثل کہا جاتا ہے۔[1]

مثالیں:

  • ناچ نہ جانے آنگن ٹیڑھا (اپنی نااہلی کو دوسروں پر ڈالنا)۔
  • گربہ کشتن، روز اول باید (کسی فرد کو ابتدا ہی میں قابوکیا جا سکتا ہے)۔

عام ضرب الامثال[ترمیم]

  • وہ آستین کا سانپ نکلا (وہ دھوکے باز نکلا)۔
  • بھینس کے آگے بین بجانا (بات کا اثر نہ ہونا)۔
  • سانپ بھی مرجائے لاٹھی بھی نہ ٹوٹے (یعنی مقصد بھی پورا ہوجائے اور نقصان بھی نہ ہو)۔
  • اقرار جرم اصلاح جرم۔
  • ڈوبتے کو تنکے کا سہارا۔
  • خوشامد بری بلا ہے۔
  • چور کی داڑھی میں تنکا(قصوروار ہمیشہ خوف زدہ رہتا ہے)۔
  • بھوکے کو مٹھی بھر چاول بھی کافی ہے (ضرورت مند کے لیے تھوڑی سی چیز بھی کافی ہے)۔
  • جھوٹ کے پاؤں نہیں ہوتے۔
  • چھوٹی ندی آسانی سے پار ہوتی ہے (چھوٹی مشکل جلد ٹل جاتی ہے)۔
  • لاتوں کے بھوت باتوں سے نہیں مانتے۔
  • جیسا کروگے ویسا بھروگے۔
  • اینٹ کا جواب پتھر۔
  • جہاں پھول ہوں وہاں کانٹے ضرور ہوتے ہیں ۔
  • چراغ تلے اندھیرا۔
  • جس کا کام اسی کو ساجھے۔
  • باتوں میں ماہر، کام میں کاہل۔
  • خوبصورت پنجرے سے پرندے کا پیٹ نہیں بھرتا۔
  • ہاتھوں سے لگائی گرہیں دانتوں سے کھولنا پڑتی ہیں۔
  • زیادہ فکر سے کام بگڑ جاتا ہے.
  • سیر کو سوا سیر (ایک سے بڑھ ایک ہونا)۔

اشعار میں ضرب الامثال[ترمیم]

آباد مر کے کوچۂ جاناں میں رہ گیا
دی تھی دعا کسی نے کہ جنت میں گھر ملے
آباد لکھنوی

پے ہے عیب جوُ ترے، حاتم تو غم نہ کر
دشمن ہے عیب جوُ ، تو خدا عیب پوش ہے
شاہ حاتم

فکر معاش، عشق بتاں، یاد رفتگاں
اس زندگی میں اب کوئی کیا کیا کرے
سودا

ﺟﻮ کہ ﻇﺎﻟﻢ ﮨﻮ ﻭﮦ ﮨﺮﮔﺰ ﭘﮭﻮﻟﺘﺎ ﭘﮭﻠﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ
ﺳﺒﺰ ﮨﻮﺗﮯ ﮐﮭﯿﺖ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﺒﮭﻮ ﺷﻤﺸﯿﺮ ﮐﺎ
سودا

ﺩﻥ ﮐﭩﺎ، ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﺎ ﻟﯿﮑﻦ
ﺭﺍﺕ ﮐﭩﺘﯽ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ
سید محمد اثر

ﺗﺪﺑﯿﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﻋﺸﻖ ﮐﯽ ﮐﯿﺎ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻃﺒﯿﺐ
ﺍﺏ ﺟﺎﻥ ﮨﯽ ﮐﮯ ساتھ یہ ﺁﺯﺍﺭ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ
میر تقی میر

ﺍﺏ ﺗﻮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﺖ ﮐﺪﮮ ﺳﮯ ﻣﯿﺮ
ﭘﮭﺮ ﻣﻠﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﮔﺮ ﺧﺪﺍ ﻻﯾﺎ[2]
میر تقی میر

ﻣﯿﺮﮮ ﺳﻨﮓ ﻣﺰﺍﺭ ﭘﺮ ﻓﺮﮨﺎﺩ
رکھ ﮐﮯ ﺗﯿﺸﮧ ﮐﮩﮯ ﮨﮯ، ﯾﺎ ﺍﺳﺘﺎﺩ
میر تقی میر

ﺷﺮﻁ سلیقہ ﮨﮯ ﮨﺮ ﺍﮎ ﺍﻣﺮ ﻣﯿﮟ
ﻋﯿﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﮨﻨﺮ ﭼﺎﮨﺌﯿﮯ
میر تقی میر

ﺑﮩﺖ کچھ ﮨﮯ ﮐﺮﻭ ﻣﯿﺮ ﺑﺲ
کہ ﺍللہ ﺑﺲ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﻮﺱ
میر تقی میر

ﻣﺮ ﮔﯿﺎ ﮐﻮﮦ ﮐﻦ ﺍﺳﯽ ﻏﻢ ﻣﯿﮟ
آنکھ ﺍﻭﺟﮭﻞ، ﭘﮩﺎﮌ ﺍﻭﺟﮭﻞ ﮨﮯ
میر تقی میر

ﯾﺎ ﺗﻨﮓ نہ ﮐﺮ ﻧﺎﺻﺢ ﻧﺎﺩﺍﮞ، ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺗﻨﺎ
ﯾﺎ ﭼﻞ ﮐﮯ ﺩﮐﮭﺎ ﺩﮮ، ﺩﮨﻦ ﺍﯾﺴﺎ، ﮐﻤﺮ ﺍﯾﺴﯽ
مہتاب رائے تاباں

ﭨﻮﭨﺎ کوکعبہ ﮐﻮﻥ ﺳﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﻏﻢ ﮨﮯ ﺷﯿﺦ
ﮐﭽﮫ ﻗﺼﺮ ﺩﻝ ﻧﮩﯿﮟ کہ ﺑﻨﺎﯾﺎ نہ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ
قائم چاند پوری

ﮐﯽ ﻓﺮﺷﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﺍﺑﺮ ﻧﮯ ﺑﻨﺪ
ﺟﻮ گنہ ﮐﯿﺠﺌﯿﮯ ﺛﻮﺍﺏ ﮨﮯ ﺁﺝ
میر سوز

ﮨﺸﯿﺎﺭ ﯾﺎﺭ ﺟﺎﻧﯽ، یہ ﺩﺷﺖ ﮨﮯ ﭨﮭﮕﻮﮞ ﮐﺎ
ﯾﮩﺎﮞ ﭨﮏ ﻧﮕﺎﮦ ﭼﻮﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻝ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﮐﺎ
نظیر اکبر آبادی

ﭘﮍﮮ ﺑﮭﻨﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﺩﺍﻧﺎ، ﮐﺮﻭﮌﻭﮞ ﭘﻨﮉﺕ، ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﺳﯿﺎﻧﮯ
ﺟﻮ ﺧﻮﺏ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﯾﺎﺭ ﺁﺧﺮ، ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺧﺪﺍ ﮨﯽ ﺟﺎنے
نظیر اکبر آبادی

ﭨﮏ ساتھ ﮨﻮ ﺣﺴﺮﺕ ﺩﻝ ﻣﺮﺣﻮﻡ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﮯ
ﻋﺎﺷﻖ ﮐﺎ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﮨﮯ ﺫﺭﺍ ﺩﮬﻮﻡ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﮯ
فدوی عظیم آبادی

رکھ نہ ﺁﻧﺴﻮ ﺳﮯ ﻭﺻﻞ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ
ﮐﮭﺎﺭﯼ ﭘﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﺩﺍﻝ ﮔﻠﺘﯽ ﻧﮩﯿﮟ
قدرت اللہ قدرت

ﺑﻠﺒﻞ ﻧﮯ ﺁﺷﯿﺎنہ ﭼﻤﻦ ﺳﮯ ﺍﭨﮭﺎﻟﯿﺎ
ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﭼﻤﻦ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻡ ﺑﺴﮯ ﯾﺎ ﮨﻤﺎ ﺭﮨﮯ
مصحفی

ﮨﺰﺍﺭ ﺷﯿﺦ ﻧﮯ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﺑﮍﮬﺎئی ﺳﻦ ﮐﯽ ﺳﯽ
ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺑﺎﺕ ﮐﮩﺎﮞ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻣﺪﻥ ﮐﯽ ﺳﯽ
انشا اللہ خاں انشا

ﺍﮮ ﺧﺎﻝ ﺭﺥ ﯾﺎﺭ ﺗﺠﮭﮯ ﭨﮭﯿﮏ ﺑﻨﺎﺗﺎ
ﺟﺎ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ ﺣﺎﻓﻆ ﻗﺮﺁﻥ سمجھ ﮐﺮ
شاہ نصیر

ﺁﺋﮯ ﺑﮭﯽ ﻟﻮﮒ، ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺑﮭﯽ، اٹھ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ
ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﮨﯽ ﮈﮬﻮﻧﮉﮬﺘﺎ ﺗﯿﺮﯼ ﻣﺤﻔﻞ ﻣﯿﮟ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ
آتش

ﻟﮕﮯ منہ ﺑﮭﯽ ﭼﮍﺍﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﺻﺎﺣﺐ
ﺯﺑﺎﮞ ﺑﮕﮍﯼ ﺗﻮ ﺑﮕﮍﯼ ﺗﮭﯽ، ﺧﺒﺮ ﻟﯿﺠﺌﯿﮯ ﺩﮨﻦ ﺑﮕﮍﺍ
آتش

ﻣﺸﺎﻕ ﺩﺭﺩ ﻋﺸﻖ ﺟﮕﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ، ﺩﻝ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ
ﮐﮭﺎؤں ﮐﺪﮬﺮ ﮐﯽ ﭼﻮﭦ، ﺑﭽﺎؤں کدھر کی چوٹ
آتش

ﻓﺼﻞ ﺑﮩﺎﺭ ﺁئی ﭘﯿﻮ ﺻﻮﻓﯿﻮ ﺷﺮﺍﺏ
ﺑﺲ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﻧﻤﺎﺯ مصلٰی ﺍﭨﮭﺎﺋﯿﮯ
آتش

ﺯﺍﮨﺪ ﺷﺮﺍﺏ ﭘﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﺎﻓﺮ ﮨﻮﺍ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ
ﮐﯿﺎ ﮈﯾﮍﮪ ﭼﻠﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﻤﺎﻥ بہہ ﮔﯿﺎ
ذوق

ﺍﻥ ﺩﻧﻮﮞ ﮔﺮچہ ﺩﮐﻦ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﮍﯼ ﻗﺪﺭ ﺳﺨﻦ
ﮐﻮﻥ ﺟﺎﺋﮯ ﺫﻭﻕ ﭘﺮ ﺩﻟﯽ ﮐﯽ ﮔﻠﯿﺎﮞ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ
ذوق

ﺍﺳﯽ ﻟﺌﮯ ﺗﻮ ﻗﺘﻞ ﻋﺎﺷﻘﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﮐﯿﻠﮯ ﭘﮭﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ ﯾﻮﺳﻒ ﺑﮯ ﮐﺎﺭﺭﻭﺍﮞ ﮨﻮ ﮐﺮ
خواجہ وزیر

ﺑﻠﺒﻞ ﮐﮯ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ پہ ﮨﯿﮟ ﺧﻨﺪﮦ ﮨﺎﺋﮯ ﮔﻞ
ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﻮ ﻋﺸﻖ ﺧﻠﻞ ﮨﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﮐﺎ
غالب

ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﺧﻠﻖ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺗﺎ ﺍﺳﮯ ﻧﻈﺮ نہ ﻟﮕﮯ
ﺑﻨﺎ ﮨﮯ ﻋﯿﺶ ﺗﺠﻤﻞ ﺣﺴﯿﻦ ﺧﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ
غالب

ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺛﻮﺍﺏ ﻃﺎﻋﺖ ﻭ ﺯﮨﺪ
ﭘﺮ ﻃﺒﯿﻌﺖ ﺍﺩﮬﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ
غالب

ﮔﻮ ﻭﺍﮞ ﻧﮩﯿﮟ، پہ ﻭﺍﮞ ﮐﮯ ﻧﮑﺎﻟﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﮨﯿﮟ
ﮐﻌﺒﮯ ﺳﮯ ﺍﻥ ﺑﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﺴﺒﺖ ﮨﮯ ﺩﻭﺭ ﮐﯽ
غالب

ﺩﺍﻡ ﻭ ﺩﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﮩﺎﮞ
ﭼﯿﻞ ﮐﮯ ﮔﮭﻮﻧﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﺱ ﮐﮩﺎﮞ
غالب

ﮐﻮچۂ ﻋﺸﻖ ﮐﯽ ﺭﺍﮨﯿﮟ ﮐﻮئی ﮨﻢ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﮯ
ﺧﻀﺮ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﯿﮟ ﻏﺮﯾﺐ، ﺍﮔﻠﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ
وزیر علی صبا

ﺍﺫﺍﮞ ﺩﯼ ﮐﻌﺒﮯ ﻣﯿﮟ، ﻧﺎﻗﻮﺱ ﺩﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﻮﻧﮑﺎ
ﮐﮩﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﺮﺍ ﻋﺎﺷﻖ ﺗﺠﮭﮯ ﭘﮑﺎﺭ ﺁﯾﺎ
محمد رضا برق

ﻟﮕﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﻀﺎﻣﯿﻦ ﻧﻮ ﮐﮯ ﺍﻧﺒﺎﺭ
ﺧﺒﺮ ﮐﺮﻭ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﺮﻣﻦ ﮐﮯ ﺧﻮشہ ﭼﯿﻨﻮﮞ ﮐﻮ
میر انیس

ﻭﮦ شیفتہ کہ ﺩﮬﻮﻡ ﮨﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﮐﮯ ﺯﮨﺪ ﮐﯽ
ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﻮﮞ کہ ﺭﺍﺕ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﺲ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﻠﮯ
شیفتہ

ﮨﺮ ﭼﻨﺪ ﺳﯿﺮ ﮐﯽ ﮨﮯ ﺑﮩﺖ ﺗﻢ ﻧﮯ شیفتہ
ﭘﺮ ﻣﮯ ﮐﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺋﯿﮯ
شیفتہ

ﻓﺴﺎﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﺳﭻ ﮨﯿﮟ، ﭘﺮ کچھ کچھ
ﺑﮍﮬﺎ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮨﻢ ﺯﯾﺐ ﺩﺍﺳﺘﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ
شیفتہ

ﮐﯿﺎ ﻟﻄﻒ، ﺟﻮ ﻏﯿﺮ ﭘﺮﺩﮦ ﮐﮭﻮﻟﮯ
ﺟﺎﺩﻭ ﻭﮦ ﺟﻮ ﺳﺮ چڑھ ﮐﮯ ﺑﻮﻟﮯ
دیا شنکر نسیم

ﺩﯾﻨﺎ ﻭﮦ اس کا ﺳﺎﻏﺮ ﻣﮯ ﯾﺎﺩ ﮨﮯﻧﻈﺎﻡ
منہ ﭘﮭﯿﺮ ﮐﺮ ﺍُﺩﮬﺮ ﮐﻮ، ﺍﺩﮬﺮ ﮐﻮ ﺑﮍﮬﺎ ﮐﮯ ﮨﺎتھ
نظام رام پوری

ﮔﺮﮦ ﺳﮯ کچھ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺗﺎ، ﭘﯽ ﺑﮭﯽ ﻟﮯ ﺯﺍﮨﺪ
ﻣﻠﮯ ﺟﻮ ﻣﻔﺖ ﺗﻮ ﻗﺎﺿﯽ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺣﺮﺍﻡ ﻧﮩﯿﮟ
امیر مینائی

ﻭﮦ ﺟﺐ ﭼﻠﮯ ﺗﻮ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﺑﭙﺎ ﺗﮭﯽ ﭼﺎﺭ ﻃﺮﻑ
ﭨﮩﺮ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺍﻧﻘﻼﺏ نہ ﺗﮭﺎ
داغ

ﭘﺎﻥ ﺑﻦ ﺑﻦ ﮐﮯ ﻣﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
یہ ﻣﺮﮮ ﻗﺘﻞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ظہیر الدین ظہیر

ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﺌﮯ ﻭﮦ ﻣﺴﺖ ﻧﮕﺎﮨﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ
ﺟﺐ ﺗﮏ ﺷﺮﺍﺏ ﺁﺋﮯ کئی ﺩﻭﺭ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ
شاد عظیم آبادی

ﺧﻼﻑ ﺷﺮﻉ ﮐﺒﮭﯽ ﺷﯿﺦ ﺗﮭﻮﮐﺘﺎ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ
ﻣﮕﺮ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﮮ ﺍﺟﺎﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﻮﮐﺘﺎ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ
اکبر الہ آبادی

دیکھ آؤ ﻣﺮﯾﺾ ﻓﺮﻗﺖ ﮐﻮ
ﺭﺳﻢ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ، ﺛﻮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ
حسن بریلوی

ﺗﻤﮩﯿﮟ ﭼﺎﮨﻮﮞ، ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﭼﺎﮨﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭼﺎﮨﻮﮞ
ﻣﺮﺍ ﺩﻝ ﭘﮭﯿﺮ ﺩﻭ، مجھ ﺳﮯ یہ ﺟﮭﮕﮍﺍ ﮨﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﺎ
مضطر خیر آبادی

ﺍﻓﺴﻮﺱ، ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺳﺨﻦ ﮨﺎﺋﮯ ﮔﻔﺘﻨﯽ
ﺧﻮﻑ ﻓﺴﺎﺩ ﺧﻠﻖ ﺳﮯ ﻧﺎ گفتہ ﺭﮦ ﮔﺌﮯ
آزاد انصاری

ﺗﻮﮌ ﮐﺮ ﻋﮩﺪ ﮐﺮﻡ ﻧﺎ ﺁﺷﻨﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮯ
ﺑﻨﺪﮦ ﭘﺮﻭﺭ ﺟﺎﺋﯿﮯ، ﺍﭼﮭﺎ، ﺧﻔﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮯ
حسرت موہانی

یہ ﺩﺳﺘﻮﺭ ﺯﺑﺎﮞ ﺑﻨﺪﯼ ﮨﮯ ﮐﯿﺴﺎ ﺗﯿﺮﯼ ﻣﺤﻔﻞ ﻣﯿﮟ
ﯾﮩﺎﮞ ﺗﻮ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﺗﺮﺳﺘﯽ ﮨﮯ ﺯﺑﺎﮞ ﻣﯿﺮﯼ
اقبال

ﺍﻗﺒﺎﻝ ﺑﮍﺍ ﺍﭘﺪﯾﺸﮏ ﮨﮯ، ﻣﻦ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﮦ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ
ﮔﻔﺘﺎﺭ ﮐﺎ یہ ﻏﺎﺯﯼ ﺗﻮ ﺑﻨﺎ، ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﺎ ﻏﺎﺯﯼ ﺑﻦ نہ ﺳﮑﺎ
اقبال

کچھ سمجھ ﮐﺮ ﮨﯽ ﮨﻮﺍ ﮨﻮﮞ ﻣﻮﺝ ﺩﺭﯾﺎ ﮐﺎ ﺣﺮﯾﻒ
ﻭﺭنہ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ کہ ﻋﺎﻓﯿﺖ ﺳﺎﺣﻞ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ
وحشت کلکتوی

دیکھ ﮐﺮ ﮨﺮ ﺩﺭ ﻭ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﻮ ﺣﯿﺮﺍﮞ ﮨﻮﻧﺎ
ﻭﮦ ﻣﯿﺮﺍ ﭘﮩﻠﮯ ﭘﮩﻞ ﺩﺍﺧﻞ ﺯﻧﺪﺍﮞ ﮨﻮﻧﺎ
عزیز لکھنوی

ﭼﺘﻮﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﭽﮫ ﺳﺮﺍﻍ ﺑﺎﻃﻦ ﮐﺎ
ﭼﺎﻝ ﺳﮯ ﺗﻮ ﮐﺎﻓﺮ پر ﺳﺎﺩﮔﯽ ﺑﺮﺳﺘﯽ ﮨﮯ
یگانہ چنگیزی

ﻭﮦ ﺁﺋﮯ ﺑﺰﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﺎ ﺗﻮ ﺑﺮﻕ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﭘﮭﺮ ﺍﺳﮑﮯ ﺑﻌﺪ ﭼﺮﺍﻏﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺷﻨﯽ نہ ﺭﮨﯽ
مہا راج بہادر برق

ﮨﺮ ﺗﻤﻨﺎ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺭﺧﺼﺖ ﮨﻮ گئی
ﺍﺏ ﺗﻮ ﺁﺟﺎ ﺍﺏ ﺗﻮ ﺧﻠﻮﺕ ﮨﻮ گئی
عزیز الحسن مجذوب

ﺍﺏ ﯾﺎﺩ ﺭﻓﺘﮕﺎﮞ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﯽ
ﯾﺎﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﺩﻭﺭ ﺑﺴﺎئی ﮨﯿﮟ ﺑﺴﺘﯿﺎﮞ
فراق گورکھپوری

ﺩﺍﻭﺭ ﺣﺸﺮ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﺎمۂ ﺍﻋﻤﺎﻝ نہ دیکھ
ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﭘﺮﺩﮦ ﻧﺸﯿﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﺎﻡ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ
محمد دین تاثیر

ﺍﻣﯿﺪ ﻭﺻﻞ ﻧﮯ ﺩﮬﻮﮐﮯ ﺩﺋﯿﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺣﺴﺮﺕ
ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎﻓﺮ ﮐﯽ ' ﮨﺎﮞ' ﺑﮭﯽ ﺍﺏ 'ﻧﮩﯿﮟ' ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ
چراغ حسن حسرت

ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻄﺎؤں ﮐﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﯽ ﭼﻠﻮﮞ
ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺲ ﮐﺲ ﮐﻮ ﻣﻠﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﺰﺍ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﻌﺪ
کرار نوری

ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻦ ﺳﮯ ﺗﺮﯼ ﺑﺰﻡ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﮨﻨﮕﺎﻣﮯ
ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺗﺮﯼ ﺑﺰﻡ ﺧﯿﺎﻝ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮔﺌﮯ
عزیز حامد مدنی

ﺍﯾﮏ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ
ﺑﺎﻗﯽ ﻋﻤﺮ ﺍﺿﺎﻓﯽ ﮨﮯ
محبوب خزاں

ﻣﺮﯼ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﭘﮍﮬﯽ ﮨﮯ ﻏﯿﺮﻭﮞ ﻧﮯ
ﻣﺮﮮ ﺗﮭﮯﺟﻦ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ، ﻭﮦ ﺭﮨﮯ ﻭﺿﻮ ﮐﺮﺗﮯ
آتش

ﺍﯾﺴﯽ ﺿﺪ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﭨﮭﮑﺎﻧﺎ، ﺍﭘﻨﺎ ﻣﺬﮨﺐ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ
ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺎﻓﺮ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮐﺎﻓﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﮞ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ
نامعلوم[3]

ﻣﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﻟﭩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺩﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻤﺎﮞ
ﺑﮍﺍ ﺗﯿﺮ ﻣﺎﺭﺍ ﺟﻮﺍﻧﯽ ﻟﭩﺎ ﺩﯼ
نامعلوم[4]


حوالہ جات[ترمیم]

  1. "اردو کہاوتیں اور ضرب الامثال". اردو گاہ. 
  2. "اردو کے ضرب المثل اشعار". 
  3. حوالہ درکار ہے۔
  4. حوالہ درکار ہے۔